بے قراری سی بے قراری ہے

Verses

بے قراری سی بے قراری ہے
وصل ہے اور فراق طاری ہے

جو گزاری نہ جا سکی ہم سے
ہم نے وہ زندگی گزاری ہے

بن تمہارے کبھی نہیں آئی
کیا مری نیند بھی تمھاری ہے

اس سے کہیو کہ دل کی گلیوں میں
رات دن تیری انتطاری ہے

ایک مہک سمت دل سے آئی تھی
میں یہ سمجھا تری سواری ہے

خوش رہے تو کہ زندگی اپنی
عمر بھر کی امید واری ہے

Pahala Pahala Pyaar Na Bhuule

(pahala pahala pyaar na bhuule
bhuule chaahe saari kudaayi) -2
mujhe mila pyaar jo tera
mainne saari duniya bhulaayi
pahala pahala pyaar na bhuule
bhuule chaahe saari kudaayi

meri nazar se teri nazar tak
dekhuun jidhar bas pyaar hi dekhuun
tujhako naina dekh thake na
chaahe tujhe sau baar bhi dekhuun
utani hi aur badhi hai
jitani ye pyaas bujhaayi

pahala pahala pyaar na bhuule
bhuule chaahe saari kudaayi

دریچے میں چراغ انجمن روشن ہوا اس کا

Verses

دریچے میں چراغ انجمن روشن ہوا اس کا
دلوں میں جل اٹھیں شمعیں ، سخن روشن ہوا اس کا

دہک اٹھا تہِ پوشاک اس کے جسم کا سورج
ہر اک بخیے میں تارِ پیرہن روشن ہوا اس کا

اسے خوشبو کی صورت اپنے سینے میں بسا لائے
گھر آکے بند کیں آنکھیں ، بدن روشن ہوا اس کا

کھل اٹھیں کونپلیں اس کی ، شگوفے لہلہا اٹھے
پڑی جب دھوپ کمرے میں چمن روشن ہوا اس کا

نومبر کی مہکتی سرمئی شب کے دھند لکے میں
ہوا کی دستکوں سے نیلا پن روشن ہوا اس کا

جب اس نے عقل کی دہلیز پر پہلا قدم رکھا
نگاہ عصر میں دیوانہ پن روشن ہوا اس کا

Sun Mere Bandhu

sun mere bandhu re, sun mere mitwa
sun mere saathi re

hota tu peepal, main hoti amar lata teri
tere gale maala ban ke, padi muskaati re
sun mere saathi re
sun mere bandhu re ...

deeya kahe tu saagar, main hoti teri nadiya
lehar bahaar kar tu apne, peeya chaman jaati re
sun mere saathi re
sun mere bandhu re ...

Kismat Ke Likhe Ko

ra : ( kismat ke likhe ko mita na sake
ham unako apana bana na sake ) -2
wo aa na sake ham ja na sake
aur zakm-e-jigar bhi dikha na sake
jo raaz chhupa hai seene mein
usako bhi haay suna na sake

kismat ke likhe ko mita na sake
ham unako apana bana na sake

su : ( ham qaid mein the majaboor huye
nazdeek bhi reh kar door huye ) -2
dil ke sheeshe choor huye
ye baat kisi ko bata na sake

دیکھو راہِ حیات میں کہیں ہمسفر تنہا نہ ہو

Verses

دیکھو راہِ حیات میں کہیں ہمسفر تنہا نہ ہو،،،،،
محبت والفت کی راہ میں مال ودولت کی بات نہ ہو،،،،
دل جذبوں سے سرشار ہوں، نگاہیں محبت سے مخمور ۔
الفت کی راہ گذر میں منافرت کی بات نہ ہو،،،،
جانتے ہیں سفرِ حیات کی راہ بڑی کٹھن ہے مگر ۔۔۔۔۔۔۔
متاعِ حیات میں، حسنِ اخلاق میں مسابقت کی بات نہ ہو،،،،،
دانش رکھو رہن سہن ایسا ہمسفر کیساتھ۔۔۔۔۔
رہے تا ابد موسمِ بہار، خزاں کی بات نہ ہو،،،،،
........................mei apni ghazal laga raha houn munasib maqam per laga deijeiy gaa Syed Anwer Jawaid Hashmi Karachi.

uغزل
سیدانورجاویدھاشمی

یہ چشم ۔ دیر خوابی ذرا دیر اگر کھلے
کیا جانے کون منظروں پہ یہہ نظرکھلے

ٹوٹے طلسم ۔ خانہء بے اعتبار اگر
دیکھے گا کون کسے ہمارے ہنر کھلے

ہستی رہے غبار میں یا پیچ و تاب میں
خود اپنے آ پ پر نہ کبھی بے خبرکھلے

نیرنگ جانیے کہ طلسم ۔ تماشا لب
لب بستگی کھلی تو لبوں کے ہنرکھلے

دولت سخن کی ملک ۔ خدا داد جانئے
جس کے کر م سے ھاشمی پہ ھفت درکھلے

غم کی اِس سِل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

Verses

غم کی اِس سِل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی
تُو مرے دل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

مجھ کو تسلیم تری ساری ذہانت لیکن
مجھ سے جاہل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

پوچھ لے مجھ سے حقیتت تُو وگرنہ اپنے
آنکھ کے تِل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

بِن محبت کے تُو ہنستی ہوئی ان آنکھوں کی
بھیگی جِھلمل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

زندگی خود بھی تجھے مرنا پڑے گا ورنہ
میرے قاتل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer