کچھ روز سے وہ سنجیدہ ہے

Verses

کچھ روز سے وہ سنجیدہ ہے
ہم سے کچھ کچھ رنجیدہ ہے

چل دِل کی راہ سے ہو کے چلیں
دلچسپ ہے اور پیچیدہ ہے

ہم عمر خُدا ہوتا کوئی
جو ہے، وہ عمر رسیدہ ہے

بیدار نہیں ہے کوئی بھی
جو جاگتا ہے، خوابیدہ ہے

ہم کس سے اپنی بات کریں
ہر شخص تیرا گرویدہ ہے

Dil Ki Shikaayat

dil ki shikaayat,nazar ke shikawe,ek zubaan aur laakh bayaan
chhupa sakon,na dikha sakon, mere dil ke dard bhi hue jawaan

chaand hansa,taare chamke aur mast hawaa jab uthalaaee
chhup ti phiri naa jaane kyun main, jaane kyun main sharamaaee
tere siwaa hai koun, jo samajhe kyaa guzari mujh par yahaan
chhupaa sakon

sapano mein bhi hum mil naa sake, neend bhi tere saath gayi
saawan aag lagaa ke chal diyaa,ro ro ke barsaat gayi
main apani takdeer pe roi,mujh pe hansaa bedard jahaan
chhupaa sakon

مرجھا کے کالی جھیل میں گرتے ہوئے بھی دیکھ

Verses

مرجھا کے کالی جھیل میں گرتے ہوئے بھی دیکھ
سورج ہوں، میرا رنگ مگر دن ڈھلے بھی دیکھ

ہر چند راکھ ہو کے بکھرنا ہے راہ میں
جلتے ہوئے پروں سے اڑا ہوں مجھے بھی دیکھ

عالم میں جس کی دھوم تھی اس شاہکار پر
دیمک نے جو لکھے کبھی وہ تبصرے بھی دیکھ

تو نے کہا نہ تھا کہ میں کشتی پہ بوجھ ہوں
آنکھوں کو اب نہ ڈھانپ مجھے ڈوبتے بھی دیکھ

بچھتی تھیں جس کی راہ میں پھولوں کی چادریں
اب اس کی خاک گھاس کے پیروں تلے بھی دیکھ

کیا شاخ با ثمر ہے جو تکتا ہے فرش کو
نظریں اٹھا شکیب کبھی سامنے بھی دیکھ

ہر ذہن میں منزل کا تصوّر تھا ہوائی

Verses

ہر ذہن میں منزل کا تصوّر تھا ہوائی
اپنے قدم اُٹھے تو زمانے کی بن آئی

اندازِ نظر کی ہے سب اعجاز نمائی
رنگت ہے سُلگتے ہوُئے صحرا کی حنائی

آوارہ نگاہی بھی اِک اندازِ وفا ہے
ہر حُسن ، تیرے حُسن کی ہے جلوہ نمائی

شب کو تو ذرا مشعلِ رُخسار کی لوَ دے
دن کو تو میرے سائے نے کی راہ نمائی

طے کر بھی سکوں گا کہ نہیں، کون بتائے
پھَیلا ہوُا تجھ تک ہے میرا دشتِ جدُائی

ہر نقشِ قدم، گلُشنِ فردا کی کلی ہے
صحراؤں کی رونق ہے میری آبلہ پائی

سچ ہے کہ جہاں تابعِ آئینِ خدا ہے
ویرانۂ دل پر ہے مگر میری خُدائی

دامن میرا تر ہے، مگر اے داورِ محشر
اِک دردِ محبت ہے میری نیک کمائی

اشکوں سے جو بچ نِکلی ہے، شعروں میں ڈھلی ہے
جو بات میری خلوتِ دل میں نہ سمائی

Dil Naiyyo Maane Re

dil naiyyo maane re - 3
dil naiyyo maane re - 3
tujhe dekhe bina - 4
dil naiyyo maane re - 3
ek tere siva kachhu nahi jaane yeh
dil naiyyo maane re - 3
ek tere siva kachhu nahi jaane yeh
dil naiyyo maane re - 3

shaam-o-sehar chain mein bechaingi
dillagi yeh dillagi ban gayi dil ki lagi
kya karu
tere ehsaanson ka chhaya hai silsila
lamhalamha teri yaadon ka kaafila
ek tere siva kachhu nahi jaane yeh
dil naiyyo maane re - 3
tujhe dekhe bina - 4
dil naiyyo maane re - 3

پھر یاد وہ مہ جمال آیا

Verses

پھر یاد وہ مہ جمال آیا
ہے حدِّ نظر تک اپنا سایا

تھا پاسِ ادب کہ اپنے دل میں
غم بھی تیرا نام لے کے آیا

اس بزم میں تیرے واسطے سے
کوئی نہ لگا ہمیں پرایا

ہائے وُہ سُپردگی کی مستی
لَٹ کر بھی جبیں پہ بَل نہ آیا

۔۔۔۔۔۔۔ق۔۔ ۔۔۔۔۔

خورشید بدست جستجو کو
لیکن توُ کہیں نظر نہ آیا

ہم دل کا دیا جلا کے لائے
جب جا کے تیرا سُراغ پایا

۔۔۔۔۔۔۔ق۔۔ ۔۔۔۔۔

ہم ہیں تیرا نقشِ خود نمائی
پندار ہمیں سے کیوں خدایا

تخلیقِ زمیں کا طنز مت کر
ہم نے تیرا آسماں بنایا

Thoda Sa Dil Laga Ke Dekh

thoda sa dil laga ke dekh
tar ram pam pam
nainon se muskura ke dekh
tar ram pam pam
mera na ban sake agar apana hamein bana ke dekh
tar ram pam pam

dhadakan mein tere liye nagamein bahaaron ke hain
dil ke kazaane saare apane hi pyaaron ke hain
a mere dil mein aa ke dekh
tar ram pam pam
nainon se muskura

hansane ki baat kar le gam ke fasaane se kya
ulfat se jholi bhar le tujhako zamaane se kya
duniya ka gam bhula ke dekh
tar ram pam pam
nainon se muskura

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer