Gaye Dinon Ka Suraag Lekar Kidhar Se

gaye dinon ka suraag lekar kidhar se aaya kidhar gaya wo
ajib maanuus ajanabi tha mujhe to hairaan kar gaya wo

wo hijr ki raat ka sitaara wo ham-nafas ham-sukan hamaara
sada rahe usaka naam pyaara suna hai kal raat mar gaya wo

wo raat ka be-nava musaafir wo tera shaayir wo tera ' naasir'
teri gali tak to hamane dekha tha phir na jaane kidhar gaya wo

bas ek moti si chhab dikhaakar bas ek mithi si dhun sunaakar
sitaaraa-e-shaam ban ke aaya ba-rang-e-kaab-e-sahar gaya wo

فلک سے چاند ، ستاروں سے جام لینا ہے

Verses

فلک سے چاند ، ستاروں سے جام لینا ہے
مجھے سحر سے نئی ایک شام لینا ہے

کسے خبر کہ فرشتے غزل سمجھتے ہیں
خُدا کے سامنے کافر کا نام لینا ہے

معاملہ ہے ترا بد ترین دُشمن سے
مرے عزیز محبت سے کام لینا ہے

مہکتی زُلف سے خوشبو ‘چمکتی آنکھ سے دُھوپ
شبوں سے جام ، سحر کا سلام لینا ہے

تمہاری چال کی آہستگی کے لہجے میں
سخن سے دل کو مسلنے کا کام لینا ہے

نہیں میں میر کے در پر کبھی نہیں جاتا
مجھے خُدا سے غزل کا کلام لینا ہے

بڑے سلیقے سے نوٹوں میں اُس کو تلوا کر
میرِ شہر سے اب انتقام لینا ہے

کہیں کہیں پہ ستاروں کے ٹوٹنے کے سوا

Verses

کہیں کہیں پہ ستاروں کے ٹوٹنے کے سوا
افق اداس ہے دنیا بڑی اندھیری ہے

لہو جلے تو جلے اس لہو سے کیا ہوگا
کچھ ایک راہ نہیں ہر فضا لُٹیری ہے

نظر پہ شام کی وحشت ، لبوں پہ رات کی اوس
کسے طرب میں سکوں ، کس کو غم میں سیری ہے

بس ایک گوشہ میں کُچھ دیپ جگمگاتے ہیں‌
وہ ایک گوشہ جہاں زُلفِ شب گھنیری ہے

یقین ہی نہیں آتا کہ تیری خدمت میں
یہ شعر میں نے کہے ہیں ! یہ غزل میری ہے !

Ek Kabhi Do Kabhi

Kavita:
Hey Hey, La La La
Hey Hey, La La La...

Ek Kabhi, Do Kabhi
Ek Kabhi, Do Kabhi
Teen Kabhi, Chaar Chaar
Aane Lagey Meri Gali, Haye

Ek Kabhi, Do Kabhi
Ek Kabhi, Do Kabhi
Teen Kabhi, Chaar Chaar
Aane Lagey Meri Gali, Haye

Bhanvare Bahaut, Main Akeli Kali
Bhanvare Bahaut, Main Akeli Kali

Koi Kahey, Laila Mujhe
Koi Kahey Laila Mujhe
Koi Kahey Sweetie Mujhe
Koi Kahey Mann Kali

Bhanvare Bahaut, Main Akeli Kali
Bhanvare Bahaut, Main Akeli Kali...

Dil Mein Hai Tu

dil mein hai tu dhadakan mein tu
o my darling i love you
apana tujhe bana ke le jaaoonga uda ke
o jaana hoon hoon

sapanon mein tu hi tu hai teri hi aarazu hai
o jaana hoon hoon

dil mein hai tu dhadakan mein tu
haan mil ke bhi kyon sanam milane ki aas hai
pahale aisa na tha kaisa ahasaas hai
ye aalam naya hai
chhaai hai bekhudi main bhi hoon bekhabar
sunate hain pyaar mein hota hai ye asar
ye kaisa nasha hai madahosh ho gai hoon
o jaana hoon hoon ...

Barsaat Bhi Aakar

Barsaat bhi aakar chali gayi
Baadal bhi garajkar baras gaye
Barsaat bhi aakar chali gayi
Baadal bhi garajkar baras gaye
Par uski ek jhalak ko hum
Ae husn ke maalik taras gaye
Kab pyaas bujhegi aankhon ki
Din raat yeh dukhda rehta hai
(Mere saamnewaali khidki mein
Ek chaand ka tukda rehta hai) - 2
Afsos yeh hai ke voh humse
Kuch ukhda ukhda rehta hai
Mere saamnewaali khidki mein
Ek chaand ka tukda rehta hai
Jis roz se dekha hai usko
Hum shamma jalaana bhool gaye
Ho, jis roz se dekha hai usko

دوسروں کی پرکھ تجربہ اور ہے

Verses

دوسروں کی پرکھ تجربہ اور ہے
خود کی پہچان کا مرحلہ اور ہے

تیرے پیش نظر ہے ترا آئنہ
مجھ کو آزارِ صد آئنہ اور ہے

تم نے اپنے حوالے سے سمجھا مجھے
زندگی کا مری مسئلہ اور ہے

یہ نہیں ہے کہ تجھ سے گریزاں ہوں میں
ان دنوں خود سے بھی رابطہ اور ہے

میں ازل سے ہوں تیری ہی جانب رواں
اب تُو کہتا ہے یہ راستہ اور ہے

ہے کوئی، دے تسلی ذرا جو مجھے
ہے کوئی، جو کہے واقعہ اور ہے

کس کے پیمان دل میں ہے اور غم
کون کہتا ہے مجھ کو نشہ اور ہے

جیت کر ایک دن ہار دیں گے تجھے
زندگی تجھ سے اک معرکہ اور ہے

Kya Cheez Hai Mohabbat

( kyaa cheez hai mohabbat
kyaa cheez hai mohabbat
mohabbat
koii mere dil se puuchhe
mere dil se puuchhe ) -2
kyaa cheez hai mohabbat

aapas mein pahale-pahale
milatii hain jab nigaahen -2
ban-ban ke jab fasaanaa
aatii hain lab pe aahen -2
aise mein dil kii haalat
o o o
aise mein dil kii haalat
koii mere dil se puuchhe -2
kyaa cheez hai mohabbat

Sharm Aati Hai Magar

sharma aatee hain magar, aaj ye kahanaa hogaa
ab humei aap ke kadamo hee rahanaa hogaa

aap se ruthh ke hum jitanaa jiye khaank jiye
kaee iljaam liye, aaur kaee iljaanm diye
aaj ke baad magar, kuchh bhee naa kahanaa hogaa

der ke baad ye samaze hain mohabbat kyaa hai
ab humei chaand ke zoomar kee jarurat kyaa hai
pyaar se badh ke bhalaa aaur kyaa gahanaa hogaa