وہاں لے لوٹنا ہے جست جس گوشے میں کرتے ہیں

Verses

وہاں لے لوٹنا ہے جست جس گوشے میں کرتے ہیں
ہمیں معلوم ہے پرواز ہم پنجرے میں کرتے ہیں

کوئی صدیاں نہیں لگتیں ہمارے دن بدلنے میں
ہم اپنا فیصلہ بس ایک ہی لمحے میں کرتے ہیں

در و دیوار زنداں سے مخاطب ہو رہے ہیں ہم
وہی کچھ کر رہے ہیں لوگ جو ایسے میں کرتے ہیں

سنی تھی ہم نے بھی شیرینی گفتار کی شہرت
مگر وہ گفتگو کچھ اور ہی لہجے میں کرتے ہیں

بھٹکتے پھر رہے ہیں آج تک اس جرم عصیاں پر
مذمت رہزن و رہبر کی ہم رستے میں کرتے ہیں

یہ صحرا شام تک ساری گلی میں پھیل جاتا ہے
ہم اپنی صبح کا آغاز جس کمرے میں کرتے ہیں

کسی دن ان فضاؤں میں چہکتے دیکھنا ہم کو
ابھی اس شوق کی تکمیل ہم پنجرے میں کرتے ہیں

رُک گئی عقل و فکر کی پرواز

Verses

رُک گئی عقل و فکر کی پرواز
جب نمایاں ہوُئے نشیب و فراز

خم بہ خم پھیلتی ہی جاتی ہے
شاہدِ آگہی کی زُلفِ دراز

کِتنا تاریک ہے میرا انجام
کِتنا موہوم ہے میرا آغاز

نیلگوں آسماں کے محلوں سے
دے رہا ہے مجھے کوئی آواز

رفعتیں بھی انھیں کی جویا تھیں
بے محل تھی ندیم کی پرواز

Vafaayein Dekh Lin Patthar Jigar Zaalim Zamaane Ki

vafaayein dekh lin patthar jigar zaalim zamaane ki
qasam khaayi hai ab hamane kisi se dil lagaane ki

sab pyaar ki baatein karate hain par karana aata pyaar nahin
hai matalab ki duniya saari yahaan koyi kisi ka yaar nahin
kisi ko sachcha pyaar nahin

sukh mein sab aa-aa kar apane (rishte-naate hain batalaate) -2
bure dinon mein dekha hamane (aankh bacha kar hain jaate) -2
thokar kha kar sambhalane vaale jit hai teri haar nahin
hai matalab ki duniya

ریاضِ دہر میں پوچھو نہ میری بربادی

Verses

ریاضِ دہر میں پوچھو نہ میری بربادی
برنگِ بو ادھر آیا ادھر روانہ ہوا

خدا کی راہ میں دینا ہے گھر کا بھر لینا
ادھر دیا ۔ کہ ادھر داخل خزانہ ہوا

قدم حضور کے آئے مرے نصیب کھلے
جوابِ قصرِ سلیماں غریب خانہ ہوا

جب آئی جوش پہ میرے کریم کی رحمت
گرا جو آنکھ سے آنسو ۔ درِ یگانہ ہوا

چنے مہینوں ہی تنکے غریب بلبل نے
مگر نصیب نہ دو روز آشیانہ ہوا

اٹھائے صدمے پہ صدمے ۔ تو آبرو پائی
امیر ٹوٹ کے دل گوہر یگانہ ہوا

Har taraf ab yahi afsaane hain

Har taraf ab yahi afsaane hain
Ham teri aankho ke diwaane hain
Har taraf ab yahi afsaane hain…

Itni sachchaai hai in aankho mein
Khote sikke bhi khare ho jaaye
Tu kabhi pyaar se dekhe jo udhar
Sukhe jangal bhi hare ho jaaye
Baag ban jaaye, baag ban jaaye jo viraane hain
Ham teri aankho ke diwaane hain
Har taraf ab yahi afsaane hain…

Ganga Ki Lehre

Lata :Aaaaaaaaaa...........
Kishore:Machalti hui hawa mein chham chham...
Hamare sang sang chalein Ganga ki laharein
Lata :O' Jamaane se kaho,Akele nahin hum,
Hamare sang sang chalein Ganga ki laharein
Kishore:Saath diya hai,in laheron ne jab sabne
moonh pher liya.
Lata :Aur kabhi jab gum ki dhalti...
dhoop ne hamko gher liya,
to inke hi charnon mein jhuk gaye hum
Kishore:Machalti hui hawa mein chham chham...
Hamare sang sang chalein Ganga ki laharein

Jay Aadya Shakti Ma

Jaya Aadya Shakti
Ma Jaya Aadya Shakti
Akhand Brhamand dipavya
panave pragatya ma
Om Jayo Jayo Ma Jagdambe

Dwitiya Mehsarup Shivshakti janu
ma shivshakti janu
brahma ganapti gaye
brahma ganapti gaye
hardayi har ma
Om Jayo Jayo Ma Jagdambe

Trutiya tran sarup tribhuvan ma betha
ma tribhuvan ma betha
daya thaki karveli
daya thaki karveli
utarvenima
Om Jayo Jayo Ma Jagdambe

Aaj Kee Raat Yeh Kaisi

aaj ki raat yeh kaisi raat ke humko neend nahin aati
meri jaan aao baitho paas ke humko neend nahin aati)
(2)
aaj ki raat

aye yeh aaj tumhe kya ho gaya hai
ufff to apne dil ko samjaao na

machal utha yeh dil nadan bada ziddi badi mushkil (2)
khuda ko bhi manalu mein magar mane na rutha dil
tumhi dekho karo koi baat ke humko neend nahin aati
meri jaan aao baitho paas ke humko neend nahin aati
aaj ki raat

گرمئی حسرتِ ناکام سے جل جاتے ہیں

Verses

گرمئی حسرتِ ناکام سے جل جاتے ہیں
ہم چراغوں کی طرح شام سے جل جاتے ہیں

شمع جس آگ میں جلتی ہے نمائش کے لیے
ہم اُسی آگ میں گمنام سے جل جاتے ہیں

خود نمائی تو نہیں شیوہء اربابِ وفا
جن کو جلنا ہو وہ آرام سے جل جاتے ہیں

بچ نکلتے ہیں اگر آتشِ سیّال سے ہم
شعلہء عارضِ گلفام سے جل جاتے ہیں

جب بھی آتا ہے مرا نام ترے نام کے ساتھ
جانے کیوں لوگ مرے نام سے جل جاتے ہیں

دُشمنِ جاں کئی قبیلے ہُوئے

Verses

دُشمنِ جاں کئی قبیلے ہُوئے
پھر بھی خُوشبو کے ہاتھ پِیلے ہُوئے

بدگُمانی کے سَرد موسم میں
میری گُڑیا کے ہاتھ نِیلے ہُوئے

جب زمیں کی زباں چٹخنے لگی
تب کہیں بارشوں کے حیلے ہُوئے

وقت نے خاک وہ اُڑائی ہے
شہر آباد تھے جو ٹِیلے ہُوئے

جب پرندوں کی سانس رُکنے لگی
تب ہُواؤں کے کچھُ وسیلے ہُوئے

کوئی بارش تھی بدگُمانی کی
سارے کاغذ ہی دِل کے گَیلے ہُوئے