Sun Champa Sun Taara

hurra ho maara
sun champa sun taara koi jeeta koi haara
are bada maza aaye haay suno meri baat
jhoomein naachen gaayen chalo aaj saari raat
sun champa ...

sach ke gale mein padi maala
jhoothon ka to munh hua kaala
kaise hua aise hua hairaan hai jag saara
sun champa ...

banda hoon main to seedhaa-saada
karata hoon tumase main ye vaada
aaj se hoga vah dukh mera dukha hai jo tumhaara
sun champa ...

آبدیدہ تھا جو میں بے سر و سامانی پر

Verses

آبدیدہ تھا جو میں بے سر و سامانی پر
محوِ حیرت ہوں محبت کی فراوانی پر

تجھ سے بیگانۂ احساسِ الم کیا جانیں
کیا گزرتی ہے شب و روز کے زندانی پر

موج درد موج بہے جاتا ہوں تہ داری میں
آج کل درد کا دریا بھی ہے طغیانی پر

چشمِ نم سے کہاں ممکن ہے نظارا دل کا
نقش بنتا ہی نہیں بہتے ہوئے پانی پر

حُسنِ جاں سوز کو جب شعر میں ڈھالا میں نے
لوگ حیران ہوئے میری سخن دانی پر

وہی اندازِ عمل داری بھی سکھلائے گا
جس نے مامور کیا مجھ کو جہاں بانی پر

میرا ہر خواب تہِ خاک پڑا ہے آصفؔ
نوحہ کس طرح لکھوں شہر کی ویرانی پر

ساحل تمام اشکِ ندامت سے اٹ گیا

Verses

ساحل تمام اشکِ ندامت سے اٹ گیا
دریا سے کوئی شخص تو پیاسا پلٹ گیا

لگتا تھا بے کراں مجھے صحرا میں آسماں
پہنچا جو بستیوں میں تو خانوں میں بٹ گیا

یا اتنا سخت جان کہ تلوار بے اثر
یا اتنا نرم دل کہ رگِ گل سے کٹ گیا

بانہوں میں آ سکا نہ حویلی کا اک ستون
پُتلی میں میری آنکھ کی صحرا سمٹ گیا

اب کون جاۓ کوۓ ملامت کو چھوڑ کر
قدموں سے آکے اپنا ہی سایہ لپٹ گیا

گنبد کا کیا قصور اسے کیوں کہوں بُرا
آیا جدھر سے تیر، اُدھر ہی پلٹ گیا

رکھتا ہے خود سے کون حریفانہ کشمکش
میں تھا کہ رات اپنے مقابل ہی ڈٹ گیا

جس کی اماں میں ہوں وہ ہی اکتا گیا نہ ہو
بوندیں یہ کیوں برستی ہیں، بادل تو چھٹ گیا

وہ لمحۂ شعور جسے جانکنی کہیں
چہرے سے زندگی کے نقابیں الٹ گیا

ٹھوکر سے میرا پاؤں تو زخمی ہوا ضرور
رستے میں جو کھڑا تھا وہ کہسار ہٹ گیا

اک حشر سا بپا تھا مرے دل میں اے شکیب
کھولیں جو کھڑکیاں تو ذرا شور گھٹ گیا

ROH E INQALAB

Verses

Main nahin sipahi wo peit jo dikha jaye
Hamsafar nahin aisa sath jo nachal payee

Main nahin wo saya jo tergee main kho jayee
Rahh main chor jaon main ye ho nahin sakta

Mout to muqaddar hai ik khuli haqiqat hai
Quaom ki baqa hai yeh zindagi ki qemat hai

Rahey haq main mara to izzat o shahadat hai
Is say khoof khaon main yeh ho nahin sakta

Kaaravaan Guzar Gayaa

sapan jhare phuul se, mit chubhe shuul se
lut gaye singaar sabhi, baag ke babuul se
aur ham khade-khade, bahaar dekhate rahe
kaaravaan guzar gayaa, gubaar dekhate rahe

nind bhi khuli na thi, ke hai dhuup dhal gayi
paanv jab talak uthe, ke zindagi phisal gayi
paat-paat jhar gae, shaakh-shaakh jal gayi
git ashq ban gae, svapn ho dafan gae
saath ke sabhi die, dhuaan pahan-pahan gae
aur ham jhuke-jhuke, mod par ruke-ruke
umr ke chadhaav kaa, utaar dekhate rahe
kaaravaan guzar gayaa, gubaar dekhate rahe

Kabhi Kabhi Sochta Hoon Main

Kabhi kabhi sochta hu main
Kya hu main tere bina
Thame thame zindegi yehi bole
Tu hai mera jaha
Bhigi bhigi ye hasi tere
Jo de jene ki dua
Nahi nahi saas le nahi sakta
Main tere bina

Kabhi kabhi sochta hu main
Kya hu main tere bina }-2

Kabhi tujhse khafa hua tha
Main kisi aur ke liye….
Kabhi tujhse zuda hua tha
Main kisi gair ke liye…
Kai maine kiya gunah
Mujhe uska malal hai
Tum mera ho aaina
Mujhe Ye bhi khayal hai

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer