Jigayasa - Remix

kisi ke dil mein khwaahishen
kisi ke dil mein hasraten
kisike dil mein jigyasa
yaha har shaks hain pyasa - 2
kisi ke dil mein khwaahishen
kisi ke dil mein hasraten
kisike dil mein jigyasa
yaha har shaks hain pyasa - 2

koi bhuka jawani ka koi aashiq hain shauhrat ka
mohabbat koi karta hain deewana koi daulat ka
koi bhuka jawani ka koi aashiq hain shauhrat ka
mohabbat koi karta hain deewana koi daulat ka
har ke chahata hain dilasa sabhi ke mann mein jigyasa
yaha har shaks hain pyasa - 4

Dhak Chik Dana

--CHORUS--
(Dhak chik dana, ta din din
Dhak chik dana) - 2
--MALE--
Jisse dil ka dushman samajhte rahe hain
--CHORUS--
Dhak chik dana, ta din din
Dhak chik dana
--MALE--
Jisse dil ka dushman samajhte rahe hain
Voh dildaar ho jaaye to kya kare
--CHORUS--
(Dhak chik dana, ta din din
Dhak chik dana) - 2
--FEMALE--
Yeh dil hi bataayega, dil hi se poochho
--CHORUS--
Dhak chik dana, ta din din
Dhak chik dana
--FEMALE--
Yeh dil hi bataayega, dil hi se poochho

Bhuuli Bisari Chand Ummidein

bhuuli bisari chand ummidein chand fasaane yaad aaye
tum yaad aaye aur tumhaare saath zamaane yaad aaye

dil ka nagar aabaad tha phir bhi jaise kaak si udati rahati thi
kaise zamaane ai gam-e-dauraan tere bahaane yaad aaye

hansane waalon se darate the chhup chhup kar ro lete the
gahari gahari soch mein duube to divaane yaad aaye

thandi sard hava ke jhonke aag lagaakar chhod gaye
phuul khile shaakon pe naye aur dard puraane yaad aaye

تیری محفل بھی مداوا نہیں تنہائی کا

Verses

تیری محفل بھی مداوا نہیں تنہائی کا
کِتنا چرچا تھا تیری انجمن آرائی کا

داغِ دل نقش ہے اِک لالئہ صحرائی کا
یہ اثاثہ ہے میری بادیہ پیمائی کا

جب بھی دیکھا ہے تجھے، عالمِ نو دیکھا ہے
مرحلہ طے نہ ہوُا تیری شناسائی کا

وہ تیرے جسم کی قوسیں ہوں کہ محرابِ حرم
ہر حقیقت میں ملا خم تیری انگڑائی کا

افقِ ذہن پہ چمکا تیرا پیمانِ وصال
چاند نکلا ہے میرے عالمِ تنہائی کا

بھری دُنیا میں فقط مُجھ سے نگاہیں نہ چُرا
عشق پر بس نہ چلے گا تیری دانائی کا

ہر نئی بزم تیری یاد کا ماحول بنی
مَیں نے یہ رنگ بھی دیکھا تیری یکتائی کا

نالہ آتا ہے جو لب پر تو غزل بنتا ہے
میرے فن پر بھی ہے پَرتو تیری رعنائی کا

عرش سے پار پہنچتی میری پروازِ خیال

Verses

عرش سے پار پہنچتی میری پروازِ خیال
ذہن میں گر نہ اُبھرتا تیری خلوت کا سوال

ختم توفیقِ بغاوت فقط آدم پہ نہ کر
اب کسی اور بھی مخلوق کو جنّت سے نکال

رُخ بدل اب تو ہوا کا، کہ زمانے بدلے
منتظر دشت ہیں کب سے، کہ چلے بادِ شمال

گھر سے ہر شخص نِکلتا ہے شکاری بن کر
شہر میں جیسے چلے آئے ہوں صحرا کے غزال

دل نچڑتے ہیں، جگر کٹتے ہیں، سر گرتے ہیں
یہ تجارت کے مراکز ہیں کہ میدانِ قتال

میرے ہر درد کا انجام میرے علم میں ہے
اِک نئی صُبح کا پیغام ہے سوُرج کا زوال

مُجھ سے اِک پل کی بھی تقویم مکمّل نہ ہوُئی
کون رکھتا ہے محبّت میں حسابِ مہ و سال

اِنھی دھبّوں کو جو نزدیک سے دیکھو تو بہشت
میری غزلیں ہیں سمندر میں جزیروں کی مثال

آج بھی ہے میرا محبوُب وہی شخص ندیمؔ
وقت کے ظلم سے مُرجھا گئے جس کے خد و خال

ہر اک چلن میں اسی مہربان سے ملتی ہے

Verses

ہر اک چلن میں اسی مہربان سے ملتی ہے
زمیں ضرور کہیں آسماں سے ملتی ہے

ہمیں تو شعلہء خرمن فروز بھی نہ ملا
تری نظر کو تجلی کہاں سے ملتی ہے

تری نظر سے آخر عطا ہوئی دل کو
وہ اک خلش کہ غم دو جہاں سے ملتی ہے

چلے ھیں سیف وہاں ہم علاج ِغم کے لیے
دلوں کو درد کی دولت جہاں سے ملتی ہے

Falak se todkar dekho

Falak se todkar dekho sitarein laye hai
Magar mein voh nahi laya jo log laye hai
Koi najarana lekar aaya hun mein diwana tere liye
Aaaj chhalkka hai khushi se dil ka paymaana tere liye
Koi najarana lekar aaya hun mein diwana tere liye

Sabhi ke dilon ko yeh dhadka raha hai
Shamam aaj dil pe gazal ga rahi hai
Sari raat gayee hai sabki aankhein jhook gayee hai
Teri mehfil me aaya shaayar koi mastana tere liye
Koi najarana lekar aaya hun mein diwana tere liye

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer