ہم سے جو کُچھ کہنا ہے وہ بعد میں کہہ

Verses

ہم سے جو کُچھ کہنا ہے وہ بعد میں کہہ
اچھی ندیا ! آج ذرا آہستہ بہہ

ہَوا ! مرے جُوڑے میں پُھول سجاتی جا
دیکھ رہی ہوں اپنے من موہن کی راہ

اُس کی خفگی جاڑے کی نرماتی دُھوپ
پارو سکھی! اس حّدت کو ہنس کھیل کے سہہ

آج تو سچ مچ کے شہزادے آئیں گے
نندیا پیاری ! آج نہ کُچھ پریوں کی کہہ

دوپہروں میں جب گہرا سناٹا ہو
شاخوں شاخوں موجِ ہَوا کی صُورت بہہ

Garaj-Garaj Ghir Aaye Baadar

garaj-garaj ghir aaye baadar
umad-ghumad kar chhayein
jal-thal kar di baras-baras ghan
garaj-garaj ghir aaye baadar
aa aa aa

garaj-garaj ghir aaye baadar
umad-ghumad kar chhayein
jal-thal kar di baras-baras ghan
garaj-garaj ghir aaye baadar

dhalati bojhal uthin ghataayein - 2
nagari-nagari juum ke chhaayein
ras-buundan ki pade phuhaar
chale pawaniya sanan-sanan ghan
garaj-garaj ghir aaye baadar

Ghar Jayegi

Ghar jaayegi, tar jaayegi, doliyaan chadh jaayegi
Ghar jaayegi, tar jaayegi, doliyaan chadh jaayegi
Ghar jaayegi, tar jaayegi, doliyaan chadh jaayegi
Ghar jaayegi, tar jaayegi, doliyaan chadh jaayegi

Mehndi lagaaye ke re, kaajal sajaaye ke re
Dulhania mar jaayegi, dulhania mar jaayegi

Chanchal Chudiyaan Khanaka Ke

chanchal chudiyaan khanaka ke mehandi haathon mein racha ke
jhumar maathe pe saja ke ghunghata laaj ka gira ke
maike ki gali chhod ke tujhe jaana hoga
maike ki gali chhod ke

laayo sakhi laayo joda suhaag laado ko saja de ham pyaar se
pairon mein laga de haldi mahaavar mukhada chamaka de shrr^ingaar se
phoolon si javaani pe vo lalachaayenge
chanda si bindiya chamaka ke
ghunghata laaj ka

Deenan Dukh Haran Dev

deenan dukh haran dev santan hitakaari

ajaamil gidh byaadh inamein kah kaun saadh
panchhi ko pada padhaat ganikaasi taari

dhruv ke sar chhatra det prahlaad ko ubaar let
bhakt het baandhyo set lankapuri jaari

tandul det rijh jaat saag paat son aghaat
ginat nahin juuthe phal khaate mithe khaari

itane hari aaye gaye basanan aaruudh bhaye
suuradaas dvaare khado aandharo bhikaari

وہ جو ٹل جاتی رہی سر سے بلا شام کے بعد

Verses

وہ جو ٹل جاتی رہی سر سے بلا شام کے بعد
کوئی تو تھا کہ جو دیتا تھا دعا شام کے بعد

ہم نے تنہائی سے پوچھا کہ ملو گی کب تک
اس نے بے چینی سے فوراً ہی کہا شام کے بعد

میں اگر خوش بھی رہوں پھر بھی میرے سینے میں
سوگواری روتی ہے میرے گھر میں سدا شام کے بعد

تم گئے ہو تو سیاہ رنگ کے کپڑے پہنے
پھرتی رہتی ہے میرے گھر قضا شام کے بعد

لوٹ آتی ہے میری شب کی عبادت خالی
جانے کس عرش پہ رہتا ہے خدا شام کے بعد

دن عجب مٹھی میں جکڑے ہوئے رکھتا ہے مجھے
مجھ کو اس بات کا احساس ہوا شام کے بعد

کوئی بھولا ہوا غم ہے جو مسلسل مجھ کو
دل کے پاتال سے دیتا ہے صدا شام کے بعد

مار دیتا ہے اجڑ جانے کا دہرا احساس
کاش ہو کوئی کسی سے نہ جدا شام کے بعد

فلک کے روزنوں سے جھانک کر سورج نے دیکھا :رفیق سندیلوی

Verses

فلک کے روزنوں سے جھانک کر سورج نے دیکھا
اِدھر شب مر رہی تھی اور اُدھر سورج نے دیکھا

کہیں پانی کی آنکھوں نے زیارت کی ہوا کی
کہیں حبسِ افق کو خاک پر سورج نے دیکھا

کہیں صحرا نے دیکھا ریت کے ذروں کا سجدہ
کہیں جھُکتا ہوا کرنوں کا سر سورج نے دیکھا

کہیں دریا میں دیکھا زلزلہ پیلی کرن نے
کہیں خاکی پہاڑوں میں بھنور سورج نے دیکھا

چلی آتی تھیں پچھم سے کئی کالی بلائیں
مدارِ آسماں میں گھوم کر سورج نے دیکھا

کہیں چوتھے طبق میں بُجھ رہے تھے کچھ ستارے
فضا میں اک اندھیرے کا نگر سورج نے دیکھا

جہاں بارہ ستونوں پر زمینِ دلکھڑی تھی
وہاں پر خواہشوں کا مستقر سورج نے دیکھا

Kitni Narmi Se

o ho o ..
kitni narmi se kitne dheere se - 2
dil mein aati hain - 2
dabe paav mohabbat aur phir
dhadkano mein chupke yeh phir dolti hain
rang sa zindagi mein gholti hain
aankho ankho mein jaise bolti hain - 2
haule se dheere se
kitni narmi se kitne dheer se

My Dil Goes

My Dil Goes Mmmm
Shaan, Gayatri Iyer

aati hain woh aaise chal ke jaise jannat mein rehti hain
dekhti hain sabko aaise jaise sabko woh sehti hain
par gusse mein jo aaye aur ankhein woh dikhlaye
ladte ladte galti se muskaaye
my dil goes mmmmmm....
my dil goes mmmmmm....
my dil goes mmmmmm....
my dil goes mmmmmm....

جیسے جیسے لوگ حق کے رازداں بنتے گئے

Verses

جیسے جیسے لوگ حق کے رازداں بنتے گئے
جو حقائق تھے وہ سب وہم و گماں بنتے گئے

جن گُلوں کا حُسن تھا قندیلِ شہراہِ حیات
ٹہنیوں سے ٹوُٹ کر سنگِ گراں بنتے گئے

اوّل اوّل چند دھبّے تھے وفورِ رنگ کے
شدّتِ تخلیقِ فن سے جو جہاں بنتے گئے

کچھ نہ کچھ پاتا بھی ہے انسان محرومی کے ساتھ
جن کے دل بُجھتے گئے، برقِ تپاں بنتے گئے

ہر غبارِ کاروں سے کارواں بنتا گیا
کارواں یوُں تو غبارِ کارواں بنتے گئے

تیرگی میں اپنے پیچھے آنے والوں کے لیے
جانے والے پھوُٹتی پوَ کا سماں بنتے گئے

دُور سے دیکھا تو پلکوں تک کے سائے گن لیے
جیسے جیسے تم قریب آئے، دُھوآں بنتے گئے

تم جب آئے، پھوُل بھی تحلیل ہو کر رہ گئے
جب گئے، موجِ ہوا تک پر نشاں بنتے گئے

اب فقط اِک ٹیس میں سمٹی ہوُئی ہے ان کی یاد
حلقئہ آغوش میں جو بے کراں بنتے گئے