Ho Jata Hai - Devang Patel

main kuchh nahi karta hoon
mere saath sab ho jata hain
log mujhse kehte hai
ke tu kya karta hain
aap hi bataaon ismein main kya kar sakta hoon

aai aai ya susu susu
aai aai ya kar diya susu susu
kahi bhi ho gaya susu susu
aai aai ya kar diya susu susu
kabhi bhi ho gaya susu susu

Mere Dil Mein Jo Hota Hai

mere dil mein jo hota hai
tere dil mein kya hota hai
hota hai to
ye pyaar hai
ikaraar hai
haan thoda kuchh hota to hai
jaane kya isaka naam main hoon mushqil mein
mere dil mein

apani mushqil ko aasaan kar lo
aankhon mein jhaanko pahachaan kar lo
is dosti ko kuchh naam de do
aagaaz de do anjaam de do
tum jo chaaho isako samajho
jo samajho vo mujhako kah do
mujhako kahaan inkaar hai ikaraar hai

جانے، کون رہزن ہیں! جانے، کون رہبر ہیں

Verses

جانے، کون رہزن ہیں! جانے، کون رہبر ہیں
گرد گرد چہرے ہیں، آئینے مکدّر ہیں

مجھ کو جبر لفظوں کا، بولنے نہیں دیتا
ورنہ جتنے صحرا ہیں، ریت کے سمندر ہیں

بیسویں صدی کیسا انقلاب لائی ہے
کوہ پر ببولیں ہیں، دشت میں صنوبر ہیں

جب سے ایک چڑیا نے شیر کو پچھاڑا ہے
فاختہ کی آنکھوں میں قاتلوں کے تیور ہیں

دائیں بائیں میرے ساتھ اِک ہجوم رہتا ہے
دوستوں کی یادیں ہیں، دشمنوں کے لشکر ہیں

سوُئے جسم و جاں دیکھوں، یا میں یہ سماں دیکھوں
پھوُل پھوُل ہاتھوں میں کیسے کیسے پتّھر ہیں

بید زن کا لہجہ کچھ نرم پڑ گیا، ورنہ
مالک اب بھی مالک ہیں، چاکر اب بھی چاکر ہیں

سوت پہنے بیٹھے ہیں یہ جو فرشِ مر مر پر
نام کے قلندر ہیں، بخت کے سکندر ہیں

صبر کیوں دلاتے ہو، ضبط کیوں سکھاتے ہو
مُجھ کو کتنی صَدیوں کے یہ سبق تو ازبر ہیں

زندگی تھی جنّت بھی، زندگی تھی دوزخ بھی
داورا! یہ انساں کے دیکھے بھالے منظر ہیں

کرب میرے شعروں کا، انبساطِ فردا ہے
اشک جو ہیں آنکھوں میں، سیپیوں میں گوہر ہیں

jhoom barabar jhoom sharabi

naa haram mein, naa sukoon milataa hai butakhaane mein
chain milataa hai to saaqii tere maikhaane mein

jhuum, jhuum, jhuum
( jhuum baraabar jhuum sharaabii, jhuum baraabar jhuum ) -3
kaalii ghaTaa hai, aa aa..., mast fazaa hai, aa aa...
kaalii ghataa hai mast fazaa hai, jaam uthaakar ghuum ghuum ghuum
jhuum baraabar ...

جاتے کہاں تھے، اور چلے تھے کہاں سے ہم

Verses

جاتے کہاں تھے، اور چلے تھے کہاں سے ہم
بیدار ہو گئے کِسی خوابِ گراں سے ہم

اے نو بہارِ ناز، تیری نکہتوں کی خیر
دامن جھٹک کے نکلے تیرے گلستاں سے ہم

پندارِ عاشقی کی امانت ہے آہِ سرد
یہ تیر آج چھوڑ رہے ہیں کماں سے ہم

آؤ غبارِ راہ میں ڈھونڈیں شمیمِ ناز
آؤ خبر بہار کی پوچھیں خزاں سے ہم

آخر دُعا کریں بھی، تو کِس مدّعا کے ساتھ
کیسے زمیں کی بات کہیں آسماں سے ہم

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer