Kar De Zara Ishara

kar de zara ishaara
tere naam ka sahaara - 2

chhai hui siyaahi
bhataka huaa hai raahi
sar par khadi tabaahi - 2
teri raza se chamake,dooba huaa sitaara
tere naam ka sahaaraa

anjaam zindagi ka
dil ko dara raha hai
toofaan aa raha hai - 2
tu hi use bacha le, duniya ne jis ko maara
tere naam ka sahaara

kar de zara ishaara
tere naam ka sahaara

Posted by: p u r n i m a

آپ جیسے یہاں فنکار بہت ملتے ہیں

Verses

آپ جیسے یہاں فنکار بہت ملتے ہیں
جان و دل دینے کو تیار بہت ملتے ہیں

بھولی بھالی کسی صُورت پہ نہ جانا صاحب!
گُل کے پردے میں یہاں خار بہت ملتے ہیں

تیرے ہاتھوں کی لکیروں میں کئی موڑملے
اور بدل جانے کے آثار بہت ملتے ہیں

مانا ہم جیسے بھی لاکھوں ہیں جہاں میں لیکن
آپ جیسے بھی تو سرکار! بہت ملتے ہیں

آنکھ کُھل جانے پہ ‘ اِک بار کبھی آن ملو
خواب وادی کے تو اُس پار بہت ملتے ہیں

زندگی کو کوئی جانے بھی تو جانے کیسے
اِس کہانی میں تو کردار بہت ملتے ہیں

عدل ملتا ہی نہیں سارے زمانے میں کہیں
مسندیں ملتی ہیں ‘ دَربار بہت ملتے ہیں

کوئی تعبیر کو تصویر کا پیکر بھی تو دے
خواب اِن آنکھوں کو بے کار بہت ملتے ہیں

کوئی حَد ہے کہ جنہیں مل کے ملے ہیں خود سے
وہ بھی ملتے ہیں بے زار بہت ملتے ہیں

آؤ ‘ اِک بار کُھلے دل سے ‘ محبت سے ملیں
مستقل دل پہ لیے بار بہت ملتے ہیں

دل میں رکھ کر کوئی پوجے گا تو مانیں گے بتول
خالی خولی ہمیں اِظہار بہت ملتے ہیں

Kab Tujhe Zindagi Se Jod Liya

kab tujhe zindagi se jod liya, ajnabi humko kuchh pata na chala
kab tujhe khud pe humne odh liya, ajanabi humko kuchh pata na chala
tere liye hai mere jism-o-jaan, tere liye hai mere shaam-subah
kab tujhe zindagi se jod liya, ajnabi humko kuch pata na chala
kab tujhe khud pe humne odh liya, ajanabi humko kuch pata na chala

دشت ہجراں میں کوئی سایہ نہ صدا تیرے بعد

Verses

دشت ہجراں میں کوئی سایہ نہ صدا تیرے بعد
کتنے تنہا ھیں تیرے آبلہ پا تیرے بعد

کوئی پیغام نہ دلدار نوا تیرے بعد
خاک اڑاتی ھوئی گزری ھے صبا تیرے بعد

لب پہ اک حرف طلب تھا،نہ رھا تیرے بعد
دل میں تاثیر کی خواہش نہ دعا تیرے بعد

عکس و آئینہ میں اب ربط ھو کیا تیرے بعد
ھم تو پھرتے ھیں خود اپنے سے خفا تیرے بعد

دھوپ عارض کی نہ زلفوں کی گھٹا تیرے بعد
ہجر کی رت ھے کہ حبس کی فضا تیرے بعد

لیے پھرتی ھے سر کوئے جفا تیرے بعد
پرچم تار گریباں کو ھوا تیرے بعد

پیراہن اپنا سلامت نہ قبا تیرے بعد
بس وھی ھم وھی صحرا کی ردا تیرے بعد

نکہت و لے ھے تہہ دست قضا تیرے بعد
شاخ جاں پہ کوئی غنچہ نہ کھلا تیرے بعد

دل نہ مہتاب سے الجھا نہ جلا تیرے بعد
ایک جگنو تھا کہ چپ چاپ بجھا تیرے بعد

کون رنگوں کے بھنور،کیسی حنا تیرے بعد
اپنا خون اپنی ہتھیلی پہ سجا تیرے بعد

درد سینے میں ھوا نوحہ سرا تیرے بعد
دل کی دھڑکن ھے کہ ماتم کی صدا تیرے بعد

ایک ھم ھیں کہ ھیں بے برگ و نوا تیرے بعد
ورنہ آباد ھے سب خلق خدا تیرے بعد

ایک قیامت کی خراشیں تیرے چہرے پہ سجیں
اک محشر میرے اندر سے اٹھا تیرے بعد

تجھ سے بچھڑا ھوں تو مرجھا کے ہوا برد ھوا
کون دیتا مجھے کھلنے کی دعا تیرے بعد

اے فلک ناز میری خاک نشانی تیری
میں نے مٹی پہ تیرا نام لکھا تیرے بعد

تو کہ سمٹا تو رگ جاں کی حدوں میں سمٹا
میں کہ بکھرا تو سمیٹا نہ گیا تیرے بعد

ملنے والے کئی مفہوم پہن کر آئے
کوئی چہرہ بھی نہ آنکھوں نے پڑھا تیرے بعد

بجھتے جاتے ھیں خدوخال،مناظر،آفاق
پھیلتا جاتا ھے خواہش کا خلا تیرے بعد

یہ الگ بات کہ افشا نہ ھوا تو ورنہ
میں نے کتنا تجھے محسوس کیا تیرے بعد

میری دکھتی ھوئی آنکھوں سے گواھی لینا
میں نے سوچا ھے تجھے اپنے سوا تیرے بعد

سہ لیا دل نے تیرے بعد ملامت کا عذاب
ورنہ چبھتی ھے رگ جاں میں ہوا تیرے بعد

جان"محسن"میرا حاصل یہی مبہم سطریں
شعر کہنے کا ہنر بھول گیا تیرے بعد

Jaane Wale Zara

jaane vaale zara hoshiyaar yahaan ke ham hain raaj kumaar
oy hoy
aage peechhe hamaari sarakaar yahaan ke ham hain raaj kumaar
oy hoy
jaane vaale

amareeki andaaz bhi seekhe
ham yoraph ke raaz bhi seekhe
ham se jo baazi le kar jaaye
hai koi aisa saamane aaye
saari duniya mein apani jayakaar
yahaan ke ham hain raaj kumaar ...

hamase muhabbat hamase javaani
rang bhari hai apani kahaani

Tu Dil Ki Khushi

--MALE--
Tu, dil ki khushi dil ki pyaas tu
Mere tan mein meri saans tu
Kami thi jo mujh mein vohi to mohabbat hai tu
Zindagi mein meri aasmaan ki inaayat hai tu
Dil ki khushi dil ki pyaas tu
Mere tan mein meri saans tu
Kami thi jo mujh mein vohi to mohabbat hai tu
Zindagi mein meri aasmaan ki inaayat hai tu

--FEMALE--
Phir se nahin duniya bani, maheke zameen tere kaaran
Pehle kahan aisi thi main, main hoon haseen tere kaaran

Chirag Dil Ka Jalavo

Chirag Dil Ka Jalaayo
Bahut Andhera Hai
Kahin se Laut ke aayo
Bahut Andhera Hai...

Kahan se laaoun
Kahan se laaoun
woh rangat gayi baharon ki
Tumhare saath gayi roshni nazaaron ki
Mujhe bhi paas bulaayo
bahut andhera hai..

Chirag dil ka jalaayo
Bahut andhera hai..

Sitaaron tumse andhere
kahan sambhalte hain
unhi ke nakshe kadam se
chirag jalte hain
Unhi ko dhoondh ke laayo
Bahut andhera hai..

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer