Bheegi Bheegi Rut

(bheegi bheegi rut hai nazaare jawaan
tere mere pyaar ke ishaare jawaan) - 2
saathiya aa yahaan, aa bhi ja

bheegi bheegi rut hai nazaare jawaan
tere mere pyaar ke ishaare jawaan
saathiya aa yahaan, aa bhi ja

(dil mein yeh na jaane aag si yeh kaisi lagi
tan mein tan badan mein pyaas na jaane kaisi lagi) - 2
meri jaana o jaana tu aa ja yahaan - 2
chhupa hai tu kahaan

bheegi bheegi rut hai nazaare jawaan
tere mere pyaar ke ishaare jawaan
saathiya aa yahaan, aa bhi ja

یہ سودا مجھ کو مہنگا پڑگیا ہے

Verses

یہ سودا مجھ کو مہنگا پڑگیا ہے
جو تجھ سے پیار کرنا پڑگیا ہے

گلہ کرہی دیا خوشبو نے آخر
کہ اس کو کیوں بکھرنا پڑگیا ہے

تیری آنکھوں میں جھانکا تو یہ جانا
سمندر میں اترنا پڑگیا ہے

شجر کی دیکھ کر چھاؤں گھنیری
گھڑی بھر کو ٹھہرنا پڑگیا ہے

زمانے کے مقابل ڈٹ گئے تم
لگا اب خود سے ڈرنا پڑگیا ہے

بہت ہی سینت کر رکھا تھا جیون
کہا تو نے تو مرنا پڑگیا ہے

تمنا تھی بہت پھولوں کو چھو لوں
مگر خاروں پہ چلنا پڑگیا ہے

Mitwa Lagi Re

mitwaa laagi re ye kaisi
anbujh aag
mitwaa mitwaa mitwaa nahin aaye
laagi re ye kaisi

vyaakul jiyaraa, vyaakul nainaa -2
ik ik chup mein sau sau bainaa
rah gaye aaNsoo luT gaye raag
mitwaa mitwaa mitwaa mitwaa

Hamko Bhi Gham Ne Maara

Ho o o
Ho o o o, o o o, o o o
(Hamko Bhi Gham Ne Maara
Tumko Bhi Gham Ne Maara
Ham Sab Ko Gham Ne Maara
Is Gham Ko Maar Daalo
Ho Ho, Ho Ho) -2
Aaa Ooo Ho (+Laughing)
Hamko Bhi Gham Ne Maara
Tumko Bhi Gham Ne Maara
Ham Sab Ko Gham Ne Maara
Is Gham Ko Maar Daalo -2

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے

Verses

غیر لیں محفل میں بوسے جام کے
ہم رہیں یوں تشنہ لب پیغام کے

خستگی کا تم سے کیا شکوہ کہ یہ
ہتھکنڈے ہیں چرخِ نیلی فام کے

خط لکھیں گے گرچہ مطلب کچھ نہ ہو
ہم تو عاشق ہیں تمہارے نام کے

رات پی زمزم پہ مے اور صبح دم
دھوئے دھبّے جامۂ احرام کے

دل کو آنکھوں نے پھنسایا کیا مگر
یہ بھی حلقے ہیں تمہارے دام کے

شاہ کی ہے غسلِ صحّت کی خبر
دیکھیے کب دن پھریں حمّام کے

عشق نے غالب نکمّا کر دیا
ورنہ ہم بھی آدمی تھے کام کے

سناّٹا فضا میں بہہ رہا ہے

Verses

سناّٹا فضا میں بہہ رہا ہے
دُکھ اپنے ہَوا سے کہہ رہا ہے

برفیلی ہوا میں تن شجر کا
ہونے کا عذاب سہہ رہا ہے

باہر سے نئی سفیدیاں ہیں
اندر سے مکان ڈھ رہا ہے

حل ہوگیا خون میں کُچھ ایسے
رگ رگ میں وہ نام بہہ رہا ہے

جنگل سے ڈرا ہُوا پرندہ
شہروں کے قریب رہ رہا ہے

میں اور قیس و کوہ کن اب جو زباں پہ ہیں

Verses

میں اور قیس و کوہ کن اب جو زباں پہ ہیں
مارے گئے ہیں سب یہ گنہ گار ایک طرح

منظور اس کے پردے میں ہیں بے حجابیاں
کس سے ہوا دُچار وہ عیار ایک طرح

سب طرحیں اُس کی اپنی نظر میں تھیں کیا کہیں
پر ہم بھی ہوگئے ہیں گرفتار ایک طرح

(ق)

نیرنگِ حسنِ دوست سے کر آنکھیں آشنا
ممکن نہیں وگرنہ ہو دیدار ایک طرح

خوشبو کے ہاتھ پھول کا پیغام رہ گیا

Verses

خوشبو کے ہاتھ پھول کا پیغام رہ گیا
یہ دل کا سلسلہ بھی سرِعام رہ گیا

کہتے ہیں جس نے چاند کو دیکھا تھا پہلی بار
وہ شخص اپنے دل کو تو بس تھام رہ گیا

آنکھوں کو موند لینا تھا ہم کو بھی اُس گھڑی
جب اُس کا گھر سنا ہے کہ دوگام رہ گیا

اے شب! نوید دینی تھی تجھ کو سحر کی اور
کیوں تیرے ہاتھ سے بھی یہی کام رہ گیا

جب وصل کو مٹا دیا تو نے ہوا تو پھر
کیوں ریت پر فراق کا یہ نام رہ گیا

یوں زندگی کا کام اُدھورا رہا بتول
کچھ صبح رہ گیا تو کچھ شام رہ گیا

Zinda Rehne Ka Hal Bhi Tau Nahi

Verses

Rab Se Koi Sawal Bhi Tau Nahi
Zinda Rehne Ka Hal Bhi Tau Nahi

Kat Gai Zindagi Andhearoon Maen
Roshni Khal Khal Bhi Tau Nahi

Maen Ne Daikh hae Rang Dunya Ka
Iss Maen Rang o Jamal Bhi Tau Nahi

Naghma-e-Zindagi ko Daikh Zara
Koi Sur Koi Taal bhi Tau Nahi

Aisa Badzan Huwa Zamane se
Dil Maen Koi Malal Bhi Tau Nahi

Mujh se Maanoos Ho gya hae Firraq
Aarzoo-e-Wissaal Bhi Tau Nahi

منہ سے نکلے گی تو پھر دل میں اتر جائے گی

Verses

منہ سے نکلے گی تو پھر دل میں اتر جائے گی
مت ہواؤں کو بتا ، بات بکھر جائے گی

باندھ دی تو نے ، جوپیروں پہ ہوا کے پائل
اب کہانی تری ہر کوچہ و گھر جائے گی

یہ تو اندھیرے سے ہے بہت ہی مانوس
آنکھ اب روشنی دیکھے گی تو ڈرجائے گی

ہونٹ خاموش ہیں پلکوں کے، سیاہ آنکھوں کو
دل کے لٹنے کی بھلا کیسے خبر جائے گی

پہلے ان آنکھوں میں ڈوب تو گئی شاید
جان لگتا ہے کہ اب بارِ دگر جائے گی