Tadap, Tadap, Tadap Ho Tum

(tadap, tadap, tadap ho tum
dil ki, jaan ki hasrat ho tum
abb toh jeena nahi tere bin hamnashin - 2
o o o o..........) - 3

(shaamil huye ho jabse jindagi mein
geharaayiyon ka aalam hai aashiqi mein) - 2
(waqt tabdiliyaan laayega magar
kam hoga na mere ishq ka asar) - 2
abb toh jeena nahin tere bin hamnashin - 2
o o o o..........

Saare Shahar Mein Aapasa Koyi Nahin

saare shahar mein aapasa (koyi nahin) - 2
sach
saare shahar mein
yahi sochakar raat bhar main (soyi nahin) - 2 - 2
saare shahar mein

tumako meri vafa pe jaane kyaa-kya gumaan ho rahe hain
kitana bhi tum chhupaao afasaane bayaan ho rahe hain
ishq karata huun aashiq mera naam hai
aah aashiq h h h h
ishq karata huun aashiq mera naam hai
aish karana meri jaan mera kaam hai
aise bhi ho tum vaise bhi ho tum jaise bhi ho
hamako shiqaayat aapase (koyi nahin) - 2
saare shahar mein

اندھیری رات ٹھکانے لگا کے آتے ہیں - اِبنِ اُمید

Verses

اندھیری رات ٹھکانے لگا کے آتے ہیں
چلو کہ اپنی صبح کو جگا کے آتے ہیں

سبھی جو مان رھے ہیں، بہت اندھیرا ھے
چراغ جوڑ کے سورج بنا کے آتے ہیں

ہجومِ شہر پہ سکتہ کہ پہل کون کرے
صلیبِ شہر کو آؤ سجا کے آتے ہیں

یہ رات روز جو ہم سے خراج مانگے ھے
ہزار سر کا چڑھاوا، چڑھا کے آتے ہیں

نہیں ھے کچھ بھی بچا اب، بجز یہ زنجیریں
اُٹھو یہ مال و متاع بھی، لٹا کے آتے ہیں
ஜ۩۞۩ஜ اِبنِ اُمید ஜ۩۞۩ஜ
http://www.ibn-e-Umeed.com/

Baavari Piya Ki

baavari piya ki - 6
kaase kahe jaake peer jiyaaki
baavari piyaa ki - 2

piyu rang man ki chunar rangaai - 2
piyu piyu rath ke piyu mein samaai

ban gayi chhaayaa - 2
chhal baliyaa ki
baavari piyaa ki - 4

itha utha dekhe panth nihaare - 2
har din palchhin naam pukaare
sud nahin bisare - 3
man basiyaa ki
baavari piyaa ki - 4
kaase kahe jake peer jiyaaki
baavari piyaa ki - 6

گئے دنوں کا سراغ لے کر کدھر سے آیا کدھر گیا وہ

Verses

گئے دنوں کا سراغ لے کر کدھر سے آیا کدھر گیا وہ
عجیب مانوس اجنبی تھا مجھے تو حیران کر گیا وہ

بس ایک موتی سی چھب دکھا کر بس ایک میٹھی سی دھن سنا کر
ستارہء شام بن کے آیا برنگِ خوابِ سحر گیا وہ

خوشی کی رت ہو کہ غم کا موسم نظر اُسے ڈھونڈتی ہے ہردم
وہ بوئے گل تھا کہ نغمہ ء جاں مرے تو دل میں اتر گیا وہ

نہ اب وہ یادوں کا چڑھتا دریا نہ فرصتوں کی اداس برکھا
یونہی ذرا کسک ہے دل میں جو زخم گہرا تھا بھر گیا وہ

کچھ اب سنبھلنے لگی ہے جاں بھی بدل چلا دورِ آسماں بھی
جو رات بھاری تھی ٹل گئی ہے جو دن کڑا تھا گزر گیا وہ

بس ایک منزل ہے بوالہوس کی ہزار رستے ہیں اہلِ دل کے
یہی تو ہے فرق مجھ میں اس میں گزر گیا میں ٹھہر گیا وہ

شکستہ پا راہ میں کھڑا ہوں گئے دنوں کو بلا رہا ہوں
جو قافلہ میرا ہمسفر تھا مثالِ گردِ سفر گیا وہ

مرا تو خوں ہو گیا ہے پانی ستمگروں کی پلک نہ بھیگی
جو نالہ اٹھا تھا رات دِل سے نہ جانے کیوں بے اثر گیا وہ

وہ میکدے کو جگانے والا وہ رات کی نیند اڑانے والا
یہ آج کیا اس کے جی میں آئی کہ شام ہوتے ہی گھر گیا وہ

وہ ہجر کی رات کا ستارہ وہ ہم نفس ہم سخن ہمارا
سدا رہے اس کا نام پیارا سنا ہے کل رات مر گیا وہ

وہ جس کے شانے پہ ہاتھ رکھ کر سفر کیا تو نے منزلوں کا
تری گلی سے نہ جانے کیوں آج سر جھکائے گزر گیا وہ

وہ رات کا بے نوا مسافر وہ تیرا شاعر وہ تیرا ناصر
تری گلی تک تو ہم نے دیکھا پھر نہ جانے کدھر گیا وہ

Paas Nahin Aana Bhool

Paas Nahin Aana Door Nahin Jaana
Tum Ko Saugandh Hai Ke Aaj Mohabbat Band Hai

Pehle Tu Aag Bhadakati Hai
Phir Dil Ki Pyaas Buzaati Hai
Teri Yehi Ada To Mujh Ko Pasand Hai
Achchha Haan Haan
Magar Aaj Mohabbat Band Hai

Kitna Kitna Maza Hai Aise Jeene Men
Dhak Dhak Bhi Hoti Nahi Seene Men
Koi Bechaini Nahi Kitna Anand Hai
Ke Aaj Mohabbat Band Hai

Mat Chhed Apne Diwane Ko
Rahne De Tu Is Bahane Ko
Hothon Pe Na Hai Magar Dil To Razamand Hai
Razamand Hai Magar Aaj Mohabbat Band Hai

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer