خواب دیرینہ سے رخصت کا سبب پوچھتے ہیں

Verses

خواب دیرینہ سے رخصت کا سبب پوچھتے ہیں
چلیے پہلے نہیں پُوچھا تھا تو اب پوچھتے ہیں

کیسے خوش طبع ہیں اس شہرِ دل آزار کے لوگ
موجِ خوں سر سے گزر جاتی ہے تب پوچھتے ہیں

اہلِ دنیا کا تو کیا ذکر کہ دیوانوں کو
صاحبانِ دلِ شوریدہ بھی کب پوچھتے ہیں

خاک اڑاتی ہوئی راتیں ہوں کہ بھیگے ہوئے دن
اوّل صبح کے غم آخرِ شب پوچھتے ہیں

ایک ہم ہی تو نہیں ہیں جو اُٹھاتے ہیں سوال
جتنے ہیں خاک بسر شہر کے سب پوچھتے ہیں

یہی مجبور، یہی مُہر بلب، بے آواز
پوچھنے پر کبھی آئیں تو غضب پوچھتے ہیں

کرمِ مسند و منبر کہ اب اربابِ حَکَم
ظلم کر چکتے ہیں تب مرضیِ رب پوچھتے ہیں

کل نالۂ قمری کی صدا تک نہیں آئی

Verses

کل نالۂ قمری کی صدا تک نہیں آئی
کیا ماتمِ گل تھا کہ صبا تک نہیں آئی

آدابِ خرابات کا کیا ذکر یہاں تو
رندوں کو بہکنے کی ادا تک نہیں آئی

تجھ ایسے مسیحا کے تغافل کا گلہ کیا
ہم جیسوں کی پرسش کو قضا تک نہیں آئی

جلتے رہے بے صرفہ چراغوں کی طرح ہم
تو کیا، ترے کوچے کی ہوا تک نہیں آئی

کس جادہ سے گزرا ہے مگر قافلۂ عمر
آوازِ سگاں ، بانگِ درا تک نہیں آئی

اس در پہ یہ عالم ہوا دل کا کہ لبوں پر
کیا حرفِ تمنا کہ دعا تک نہیں آئی

دعوائے وفا پر بھی طلب دادِ وفا کی
اے کشتۂ غم تجھ کو حیا تک نہیں آئی

جو کچھ ہو فراز اپنے تئیں ، یار کے آگے
اس سے تو کوئی بات بنا تک نہیں ہوئی

Panchhi Meri Kushi Ka Zamaana

(panchhi meri khushi ka (zamaana kahaan gaya) - 2) - 2
aankhon ne jo likha wo (fasaana kahaan gaya) - 2

(ab unako rokane ki zaruurat bhi pad gayi) - 2
wo mere ruuthane ka (bahaana kahaan gaya) - 2

(main dil se puuchhati huun (kahaan hai mera suhaag) - 2) - 2
(dil mujh se puuchhata hai (diwaana kahaan gaya) - 2) - 2

(tu meri qaid mein hai to (main gam ki qaid mein) - 2) - 2
wo tera git mera (taraana kahaan gaya) - 2

توُ جو بدلا تو زمانہ ہی بدل جائے گا

Verses

توُ جو بدلا تو زمانہ ہی بدل جائے گا
گھر جو سُلگا تو بھرا شہر بھی جل جائے گا

سامنے آ، کہ میرا عشق ہے منطق میں اسیر
آگ بھڑکی تو یہ پتّھر بھی پِگھل جائے گا

دل کو مَیں منتظرِ ابرِ کرم کیوں رکھوں
پھوُل ہے، قطرہء شبنم سے بہل جائے گا

موسمِ گُل اگر اس حال میں آیا بھی تو کیا
خوُنِ گُل، چہرہء گُلزار پہ مَل جائے گا

وقت کے پاؤں کی زنجیر ہے رفتار، ندیم
ہم جو ٹھہرے تو اُفق دُور نِکل جائے گا

Tujhko Baahon Mein Bhar Lu

(tujhako baahon mein bhar liya hamne ye faisala kar liya - 2
ek duje ke pyaar mein jeena marna hain
ab hamko iss duniya se nahi darna hain - 2) - 2

(saare jahaan ke aage khulke yahi kahenge
ho ke juda kahi bhi ek pal na hum rahenge) - 2
vaade kiye hain jo unko na todenge
daaman wafaaon ka ab hum na chhodenge
jo dil mein aayega hamko karna hain
ab hamko is duniya se nahi darna hain - 2

Ae Zindagi

ae zindagi, ae zindagi, ae zindagi, ae zindagi....

(ae zindagi meri ankhiyon mein hai noor noor noor
main lagadi hoor hoor hoor) - 3
tu sufi rab da banda - 4
main apane nashe mein choor

ae zindagi meri ankhiyon mein hai noor noor noor
main lagadi hoor hoor hoor

Dil Chaahe Kisi Se

Dil chaahe kisise pyaar karoon
Dil chaahe kisise pyaar karoon
Phir sochoon vo beimaan to nahin
Dil chaahe kisi sang bhaag chaloon
Dil chaahe kisi sang bhaag chaloon
Phir sochoon main naadaan to nahin
Dil chaahe kisise pyaar karoon
Phir sochoon vo beimaan to nahin

Main Yahaan Tu Kahaan Mera Dil Tujhe Pukaare

main yahaan tu kahaan
mera dil tujhe pukaare
ljhuki-jhuki hai nazar jhuume-jhuume re jigar
koyi kyon hamein pukaare
main yahaan tu kahaan

lkhil rahi chaandani raat hai
jaise chaandi ki barasaat hai
aaj kah do na dil khol ke
jo dil mein chhupi baat hai
main yahaan tu kahaan

lsach kah duun tumhein o balam
bichhadenge nahin tum-ham - 2
ik pal bhi nahin duur hon
chaand-taaron ki hamako qasam
main yahaan tu kahaan