بتا نجومی میری ہتھیلی میں پیار کوئی

IN Khan's picture

بتا نجومی میری ہتھیلی میں پیار کوئی
کہا کہ تجھ پر تو ہو چکا ھے نثار کوئی

بتا ستارہ شناس کوئی سفر ھے لمبا
کہا بلائے گا آسمانوں کے پار کوئی

بتا اٹھائے گا اس زمیں کی بھی کوئی ڈولی
کہا کہ لے جائے گا اسے بھی کہار کوئی

کہا کہ ساحل کی اس طرف ھے مرا ٹھکانہ
بتاؤ رہتا ہے کیوں سمندر کے پار کوئی

سنو سمندر تمام اپنی رسائی میں ہیں
کہو کہ لہریں بھی کر سکا ھے شمار کوئی

سنا ھے محبت میں بھی ملاوٹ ھے مصلحت کی
کہو کسی کا عدیم کیا اعتبار کوئی

کہو در کون سا ہے، دستک کہاں پہ دے دی
عدیم گھڑیاں تو کر رہا تھا شمار کوئی

No votes yet