جب اِندر کا اکھاڑا ہو رہا تھا/rafiq sandeelvi

noorulain's picture

جب اِندر کا اکھاڑا ہو رہا تھا
میں کالے دیو کے ہتھے چڑھا تھا

پری انسان پر عاشق ہوئی تھی
سنہرے دیو کو سکتہ ہوا تھا

پرستاں میں اُداسی چھا گئی تھی
اچانک ختم جلسہ ہو گیا تھا

پری کے سبز پر نوچے گئے تھے
مجھے بھی قید میں ڈالا گیا تھا

مری فرقت میں وہ لاغر ہوئی تھی
میں اُس کے ہجر میں کانٹا ہوا تھا

رفیق سندیلوی