سلگنا ہی مقدر میں لکھا تھا/rafiq sandeelvi

noorulain's picture

سلگنا ہی مقدر میں لکھا تھا
کہ میرا بر ِ اعظم آگ کا تھا

مرا جغرافیہ تھے سرخ شعلے
دھواں ہی میری سرحد بن گیا تھا

جڑیں کیا پھیلتیں میری زمیں میں
میں اک چھوٹے سے گملے میں اگا تھا

بوقتِ صبح میں کیا دیکھتا ہوں
کھ سایہ شام کا پھیلا ہوا تھا

کھلیں جب نصف شب کو میری آنکھیں
کوئی آسیب بستر پر جھکا تھا

رفیق سندیلوی