وہ روزِ حشر تھا یا خواب سا تھا/rafiq sandeelvi

noorulain's picture

وہ روزِ حشر تھا یا خواب سا تھا
فرشتہ گرز تھامے چل رہا تھا

ترے بھی گرد تھی نارِ جہنم
مرے بھی چاروں جانب ہاویہ تھا

زباں میں کیل ٹھونکے جا رہے تھے
شکم آری سے کاٹا جا رہا تھا

مری بھی کھال کھینچی جا رہی تھی
ترا بھی جسم داغا جا رہا تھا

تجھے بھی کوئی ناگن ڈس رہی تھی
مجھے بھی کوئی بچھو کاٹتا تھا

رفیق سندیلوی