وہ میری میزبانی کر رہا تھا/rafiq sandeelvi

noorulain's picture

وہ میری میزبانی کر رہا تھا
میں دستر خوان پر بیٹھا ہوا تھا

دھرے تھے میرے آگے سات کھانے
اور اُن میں لمس اس کے ہاتھ کا تھا

چمک اٹھی تھی میری بھوک جیسے
میں صدیوں سے غذا ناآشنا تھا

نوالے بھی بہت نمکیں تھے لیکن
عجب اُس کے لبوں کا ذائقہ تھا

شراب اور گوشت کی اپنی تھی لذت
مگر اس کے بدن کا جو مزا تھا
رفیق سندیلوی