کہا مزے تو بہت اگرچہ شکار میں ہیں

IN Khan's picture

کہا مزے تو بہت اگرچہ شکار میں ہیں
یہ دیکھ لو پہلے شیر کتنے کچھار میں ہیں

کہو شکاری شکار خود کس جگہ ہوا ھے
کہا یہ خطرے تمام دل کے شکار میں ہیں

کہو کوئی آسمان کی اس طرف کا خواہاں
کہا کہ دنیا کے لوگ سارے قطار میں ہیں

بتا ستارے کہاں ہیں اے رخش مہرتاباں
کہا ستارے تمام میرے غبار میں ہیں

کہو زمیں کو لگام کرنوں کی ڈال دی کیوں
کہا کہ منزل کے راستے ہی مدار میں ہیں

کوئی کہ جس میں انا نہ تندی نہ طیش و تلخی
کہا یہ سارے ہنر کسی خاکسار میں ہیں

No votes yet