Koi ilhaam hai na koi nazool....

Guest Author's picture

کوئ الہام ہے نہ کوئ نزُول
بند کیوں ہو گیا ہے بابِ قبُول ۔
بے ثمر کیوں ہوا ہے دشتِ وجُود
کوئ پتہ نہ خار ہے نہ ببُول ۔
بربطِ دل پے کوئ نَے ہے نہ لَے
جم گئ ہے ہر ایک ساذ پہ دھُول ۔
ٹُوٹتی جا رہی ہے ذیست کی ڈور
کھینچتا جا رہا عشق بھی طُول ۔
موسمِ ہجر خاک پھینک گیا
کشتِ ہستی میں ہیں خزاں کے پھوُل ۔
محفلِِ میکشاں سلامت باد
جسمیں ہوتی نہیں ہے کوئ بھُول ۔
مر مِٹے جس کو بھی کبھی چاہا
عشق میں مُنفرِد ہے اپنا اصُول ۔ محبوب صدیقی ۔

Your rating: None Average: 4.7 (3 votes)

Comments

dabirahmedshaikh's picture

My views on the gazal by Mehboob siddiqui

ek murrasa aur moassir taqulique. Aap ke munfarid ishque ki tarah app ki gazal bhi munfarid hai. Please guide to post my creations and views in our script . When i type in Perisin script and post it is posted in either in Chinese or Japanese script.