Azad Nazam

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdupoetry/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
Guest Author's picture

Shehr e qalandari men ash o israt ka koi muqam nahi

SHEHR E QALANDARI MEN ASH O ISHRAT KA KOI MUQAM NAHI. MAGAR HOSN E SADGI KA DOR E HAZAR MEN NAM NAHI. TALAWAT E QURAN HAI LAZIM MAGAR GHOR O FIKAR KA NAM NAHI. BAZAHIR HAIN HUM SURAT E MOMIN' PAR BATIN MUSALMAN NAHI. KHOWAHISHAT E NAFS HAI TAARI' PAR TAQWA KA NAM NAHI. GUNAHON KA HAI TASALSUL PAR TUBA O ASTAGHFAR AAM NAHI. RAAH E HAQ PE ROKAWATEN HAZAR' GAR SHAR KI BANDISH AAM NAHI.

No votes yet
Guest Author's picture

Shehr e qalandari men ash o israt ka koi muqam nahi

SHEHR E QALANDARI MEN ASH O ISHRAT KA KOI MUQAM NAHI . MAGAR HOSN E SADGI KA DOR E HAZIR MEN NAM NAHI . TALAWAT E QURAN HAI LAZIM, PAR GHOR O FIKAR KA NAM NAHI. BAZAHIR HAIN HUM SURAT E MOMIN' PAR BATIN MUSALMAN NAHI. KHOWAHISHAT E NAFS HAI TAARI' PAR TAQWA KA NAM NAHI. TAN O IMAN FAROSHI HAI AAM' MAGAR US PAR KOI ROK THAM NAHI. GUNAHON KA HAI TASALSUL' PAR TUBA O ASTAGFAR KA NAM NAHI. RAAH E HAQ PE ROKAWATEN HAZAR' GAR SHAR KI BANDISH AAM NAHI.

No votes yet
dabirahmedshaikh's picture

Masroof magroor

Masroof magroor
behiss zamana
kyun kise sey
baat karey.
Dokh sookh batey
wakt apna
berbaad karey.
Pyar key
geet gaye
shanty key
deep jalae
nerg ko
Swarg bnaey.

Your rating: None Average: 5 (1 vote)
dabirahmedshaikh's picture

Ofaque paar andhera

Aftab mahtab
Ofaque paar andhera
falaque par andhera.
Dil mey andhera
rooh mey andhera.
Her gaam her modh andhera
nagar nagar dager dager andhera.
Teri moskan ka ojala
Wajood ka ojala.
Dil dil ojala,
dhadken dhadken ojala,
saas saas ojala.
Payar ki nagri mey ,
gher gher ojala.
Pal pal ojala,
har chehra aftab,
Har dil mahtab.

Your rating: None Average: 3.8 (4 votes)
Guest Author's picture

AUS SAY BHRA GLASS

No votes yet
Guest Author's picture

عجب حادثہ

عجب حادثہ
---------------
حوادث کی بھیڑ میں،
اس اجڑے گلستاں میں، کبھی کلیاں نو بہار تھیں
لیکن اب کے ساون اور برکھا کی ہواوں نے کچھ ایسا اثر دکھایا
کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھلکھلاتے گلستان گلاب کی سرخ پتیاں ،
زمیں پہ بکھری لاشوں کے مصداق ،
خونی مناظر کی طرح،
باغ کے مالی کو پیغام دے رہی ہیں
کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیز ہوائیں جھنجھوڑ دیتی ہیں اور اکثر کایا پلٹ کہ رکھ دیتی ہیں ،
لیکن ہماری ان مذکورہ سرخ پتیوں کا رس ،
اسی خمیر میں شہیدان وطن کی طرح جذب ہو کر رہ جائے گا،
اور
امید واثق ہے کہ ساون کہ اس کہر آلود اور برکھا کی شدت کی ہواوں کے بعد،
اس گلشن میں جو نئے گلاب کھلیں گے ان کے عرق میں ہماری لال پتیوں کا رس ہو گا،
اور اب کے بہار جو پھول کھلیں گے وہ زیادہ جاذب نظر ہوں گے،

شکیل چوھان آزادکشمیر

Your rating: None Average: 3 (1 vote)
Raja Ishaq's picture

خدا مخاطب ہے آدمی سے

خدا کا فرمان لکھنے والے
حریص ہاتھوں پہ کپکپی ہے
ٹھٹھرتے موسم کی سیڑھیوں سے اتر تی شب کاسکون غارت
خدا کی بستی گناہ کے برگزیدہ پانی سے بھر گئی ہے
ملول چہروں پہ بین کرتی یہ رات آخر گزر گئی ہے
گھروں کے بھیگے ستون چپ ہیں
چھتوں پہ حیرت کی نوحہ کاری
کسے خبر ہے،کسے پتہ ہے
کہ کون کیا ہے
خنک ہواؤں کا سلسلہ ہے
رعونتوں کی غلیظ مٹی بدن کی پوروں میں جذب ہو کر
وضو کے پانی سے مل گئی ہے
سیاہ چہروں پہ روشنی کی ملمع کاری عروج پر ہے
گناہ گاروں کی بے حسی پر
اداس شیطان تلملایا
شبوںکی وحشت سے پیٹ بھرتی کدورتوں نے
خدا کے گھر کے کواڑ کھولے
خدا کے فرمان پر دکھاوے کی رونمائی کا مرحلہ ہے
اداس شیطان مضمحل ہے
بہشت حوروں سے بھر گئی ہے
حریص آنکھیں
گناہ گاروں پہ خندہ زن ہیں
فضا میں پہلی اذان گونجی
خدا مخاطب ہے آدمی سے
وہ آدمی جو خدا نہیں ہے
مگر خدا ہے
کہ جس نے اپنے خدا کے ہاتھوں پہ بوسہ دینے کی آرزو میں
گناہ گاروں کے ہاتھ کاٹے
بدن جلائے
گھروں کے روشن دیئے بجھائے
زمیں کے سر پہ ملامتوں سے بھری عبادت کا تاج رکھا
ابھی یہ دن جو طلوع ہوا ہے
خود اپنے حصے کا رزق چننے سے پیشتر ہی گزر نہ جائے
لہو کے دھبوں سے بھر نہ جائے
اداس شیطان مضمحل ہے
_____________
راجہ اسحٰق

No votes yet
Raja Ishaq's picture

چلو لکھتے ہیں کاغذ پر

چلو لکھتے ہیں کاغذ پر
کوئی حرفِ شناسائی
کوئی عنوان
افسردہ دنوں کی نارسائی کا
بیاضِ عمر کے صفحات پربے نور ہوتی روشنائی کا
کسی کی کج ادائی کا
بسر ہوتے ہوئے سالوں پہ انگشتِ شہادت سے
چلو کچھ نام لکھتے ہیں
چلو لکھتے ہیں کاغذ پر
بہت سی ان کہی باتیں
جنھیں پہلے نہیں لکھا
جنھیں پہلے نہیں سوچا
کہیں سے ڈھونڈ کر لائیں گزشتہ عمر کے منظر
جنھیں پہلے نہیں دیکھا
ذرا محسوس کر کے دیکھتے ہیں
پھر وہی شامیں
کہ جو راتوں کی نرمیلی ہوا سے گفتگو کر کے
نئی صبحوں کی دھیمی روشنی میں جذب ہوتی تھیں
ذرا جب حبس بڑھتا تھا
کہیں سے ابر اٹھتا تھا
کہیں بارش کی بوندوں سے
زمیں موسم اگاتی تھی
کہیں امرود کی شاخوںپہ چڑیاں شور کرتی تھیں
پھلوں سے پیٹ بھرتی تھیں
چلو لکھتے ہیں کاغذ پر
کہ جب لکھنا نہ آتا تھا
تو پریوں کی کہانی سنتے سنتے
نیند کی سرسبز وادی میں
قدم رکھنا
ہواؤں میں پرندوں کی طرح اڑنا
پرستانوں میں جا کر تتلیوں سے گفتگو کرنا
بہت سے جادوئی منظر جگاتا تھا
ہمیں خود سے ملاتا تھا
پرانی صحبتیں برہم
سوادِ شہرِ جاں سے دور اک بستی ہے خوابوں کی
چلو پھر سے اسی بستی میں اپنی عمر کی تجدید کرتے ہیں
خود اپنی زندگی کے کینوس میں
رنگ بھرتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راجہ اسحٰق

Your rating: None Average: 5 (1 vote)
Syndicate content