Shair

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdupoetry/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
noorulain's picture

شبِ خوابیدگی میں مسکرانے سے ذرا پہلے/rafiq sandeelvi

شبِ خوابیدگی میں مسکرانے سے ذرا پہلے
کُھلا دروازہءِ دل نیند آنے سے ذرا پہلے

فقط اک ارغوانی لو ہے اور خالی مکاں ساہے
کوئی موجود تھا مشعل جلانے سے ذرا پہلے

noorulain's picture

بیمار تشنہ لب تھا اکیلا مکان میں/ rafiq sandeelvi

بیمار تشنہ لب تھا اکیلا مکان میں
رکھا ہوا تپائی پہ خالی گلاس تھا
توُ ہمسفر تھا اور تذبذب تھا آنکھ میں
ڈوبا نہیں تھا چاند مگر دل اداس تھا
رفیق سندیلوی

Guest Author's picture

Zahra

Khuda kare usey zindagi main sada thokrainnaseeb hon
meray hath se meray humsafar tera hath jis ne chora diya

Guest Author's picture

متفرق اشعار

پیام امن پہ کرنا مذاکرے لیکن
فصیلِ شہر پہ افواجِ جنگجو رکھنا
*
بنا جو شیر کا لقمہ غریب چرواہا
ہراس پھیل گیا بکریوں کے ریوڑ میں
*
لٹ گیا تھا نگر کا چین تمام
یرغمالی تھے والدین تمام
*
بد نما داغ ہیں چہروں پہ پرائی آنکھیں
اس سے بہتر تھا کہ ہر چوک پہ اندھے ہوتے
*
فضا میں قتل ہوا ہے کسی پرندے کا
لہو کی باس رچی ہے ہوا کے جھونکوں میں
*
یہ آسماں کے مناظر تجھے مبارک ہوں
ہماری آنکھیں دبی ہیں چٹان کے نیچے
*
بھوکے اسیر نے یہی سمجھا طعام ہے
سر پوش کو ہٹایا تو ہیرے تھے قاب میں
*
میں سازش کر کے سلطاں کا محل تاراج کیوں کرتا
رعایا پر کوئی باہر سے آ کر راج کیوں کرتا
*
بس واقعہ اتنا ہے کہ حق مانگا گیا تھا
اور گرم سلاخوں سے ہمیں داغا گیا تھا
*
بکھر گیا ہے بدن پھر بھی گھونسلے کی طرف
سجا گیا ہے پرندہ چٹان پر آنکھیں
*
خوں بہا مانگ رہا ہوں تو یہ میرا حق ہے
شہر کے ہر نئے مقتول کا میں بھائی ہوں
*

رفیق سندیلوی/سبز آنکھوں میں تیر

Guest Author's picture

تیری سُلجھی ہوئی زُلف کی مانند

تیری سُلجھی ہوئی زُلف کی مانند
زندگی کس قدر ہے پیچیدہ

ندیم جاوید عثمانی

Guest Author's picture

کسی عامل کا پتا بتاؤ مُجھے

کسی عامل کا پتا بتاؤ مُجھے
اُس کی آنکھوں نے کردیا جادو
ندیم جاوید عثمانی

Guest Author's picture

mohabat

Weesaal Ankahen
Shiraaz Palken krti hain kaya kamal palken
uth jayen to le leti hain jaan palken
na uthen to ajab sa entazaar palken
qatil bana diya sab ko tuney
kush to khaayl kr Allah Ke bandey..........................
Gudia khan

Guest Author's picture

mohabat

Merey pass se guzar gaye mera haal tak na puchaa..........
Mai kesey maan jaon wo door ja k roya hoga.........
parveen shakir
Terey pass se guzary to bekhudi k aalam they.......
jab door ja k sanbhaley to zaar-o-zaar roye..........

Syndicate content