نہ بوجھ یوں دلِ مُضطر پہ اپنے ڈال کے رکھ -- غزلِ شفیق خلش

Verses

غزلِ

شفیق خلش

نہ بوجھ یوں دلِ مُضطر پہ اپنے ڈال کے رکھ
دُکھوں کوگوشوں میں اِس کے نہ تُو سنبھال کے رکھ

ہرایک شے پہ تو قدرت نہیں ہے انساں کو
شکستِ دل کوبصورت نہ اک وبال کے رکھ

گِراں ہیں رات کےآثار، ذہن دل کے لئے
سُہانے یاد کے لمحے ذرا نکال کے رکھ

میں جانتا ہوں نہیں دسترس میں وہ میری
ہَوا مہک سے نہ اُس کی یہ دل اُچھال کے رکھ

بہل ہی جائیں گے ایّام ہجرتوں کے خَلِش
خیال وخواب اُسی حُسنِ بے مثال کے رکھ

شفیق خلش

بنتی اگر جو بات تو کیا بات تھی جناب

Verses

غزل

شفیق خلش

کِس کِس ادا سے اُن سے نہ تھی بات کی جناب
بنتی اگر جو بات تو کیا بات تھی جناب

ہو کر جُدا نہ دے ہے تکلّف مِزاج سے
اب تک وہ گفتگو میں کریں آپ، جی، جناب

بارآور آپ پر نہ ہوں کیوں کوششیں مِری
کب تک یہ بے ثمر سی رہے آشتی جناب

جاتے نہ کیسے اُن کے بُلانے پہ ہم بھلا
موضوعِ گفتگو پہ کہا عاشقی جناب

کب تھا میں اِضطراب وغمِ ہجْر آشنا
جب تک کہ آپ سے تھی فقط دوستی جناب

جانے کہاں گئی ہے، خوشی چھوڑ کر مجھے
کل تک تو ہر قدم وہ مِرے ساتھ تھی جناب

للچائے کیوں نہ جی ہر اک اچھی سی چیز پر
شامل ہے یہ سرشت میں، ہوں آدمی جناب

پُختہ یقین ہے کہ یہ جب تک جہان ہے
گونجے گی کوبہ کو یہ مِری نغمگی جناب

احساس، رنجِ مرگ پہ غالب ہے یہ خلش
زندہ اگر نہ میں تو مِری شاعری جناب

شفیق خلش

مِسمار کرنے آئی مِری راحتوں کے خواب

Verses

غزل
شفیق خلش

مِسمار کرنے آئی مِری راحتوں کے خواب
تعبیر وَسوَسے لئے سب چاہتوں کے خواب

دل کے یقینِ وصل کو پُختہ کریں کچھ اور
ہرشب ہی ولوَلوں سے بھرے ہمّتوں کے خواب

پَژمُردہ دل تُلا ہے مِٹانے کو ذہن سے
اچّھی بُری سبھی وہ تِری عادتوں کے خواب

کیسے کریں کنارا، کہ پیشِ نظر رہیں
تکمیلِ آرزو سے جُڑے عظمتوں کے خواب

ہجرت سِتم نہ لوگوں کے ہم سے چُھڑا سکی
آئیں یہاں اب اُن کی اُنہی تہمتوں کے خواب

یادش بخیر! اُس نے ہی دِکھلائے تھے ہمیں
رنگوں بھرے گُلوں سے لدے پربتوں کے خواب

دل کو لُبھائے رکھتے ہیں پردیس میں خلش
نسبت سے اُن کی یاد ہمیں، مُدّتوں کے خواب

شفیق خلش

جب جب کِئے سِتم، تو رعایت کبھی نہ کی

Verses

غزلِ
شفیق خلش

جب جب کِئے سِتم، تو رعایت کبھی نہ کی
کیسے کہیں کہ اُس نے نہایت کبھی نہ کی

کیا ہو گِلہ سِتم میں رعایت کبھی نہ کی
سچ پُوچھیےتو ہم نے شکایت کبھی نہ کی

چاہت ہمارے خُوں میں سدا موجْزن رہی
صد شُکر نفرتوں نے سرایت کبھی نہ کی

شاید ہمارے صبْر سے وہ ہار مان لیں
یہ سوچ کر ہی ہم نے شکایت کبھی نہ کی

اُس چشمِ مے نواز و فسُوں ساز نے ہمیں
اک دیدِ التفات عنایت کبھی نہ کی

ہوگا غلط ، اگر یہ کہیں کارِعشق میں
عقل و ہُنر نے دل کی حمایت کبھی نہ کی

بھرتا ہُوں دَم میں اب بھی اُسی دلنواز کا
ترسیلِ غم میں جس نے کفایت کبھی نہ کی

اِس جُرمِ عاشقی میں برابر کے ہو شریک
تم بھی خلش، کہ دل کو ہدایت کبھی نہ کی

شفیق خلش

نہ پوچھو ہم سے کہ وہ خورد سال کیا شے ہے

Verses

غزل
شفیق خلش

نہ پوچھو ہم سے کہ وہ خورد سال کیا شے ہے
کمر کے سامنے جس کی ہلال کیا شے ہے

حَسِین چیزکوئی کیا، جمال کیا شے ہے
خدا نے اُس کو بنایا کمال، کیا شے ہے

بنایا وہ یَدِ قدرت نے خاک سے پُتلا
خجِل ہوں حُورمقابل غزال کیا شے ہے

تمہارے حُسن سے، شاید مِرے تصور کو
کبھی خبر ہی نہیں ہو زوال کیا شے ہے

بتانا چاہیں بھی تو خاک ہم بتا نہ سکیں
وہ سَرْو قد، وہ خِراماں مثال کیا شے ہے

کہَیں جو وقت کو ہرایک زخم کا مرہم
اُنھیں خبر ہی نہیں ہے خیال کیا شے ہے

بتائیں کیا، کہ بنایا ہے اُس نے کاجل سے
نظر سے دل میں اُترتا جو خال، کیا شے ہے

ہے مشتِ خاک میں جاری وہ رقصِ بے ہنگام
مقابلے میں کہ جس کے دھمال کیا شے ہے

وہی ہیں ولولے دل میں خلش اوائل کے
غموں سے عشق میں ہونا نڈھال کیا شے ہے

شفیق خلش

zain mirza poetry

Verses

fursat mein dey humy bhi kabhi dars_e_khamshi
kehty hein loug ZAIN buhaat bolty hou TUM........
Third book of mirza zain ul abedin zain

Mujrim

Verses

Mujrim
Be missal hosn-e-malkooti pur behar shabaab ki khushboo philati aor zia bareya loo taa ti her nigah ko madhosh karti wha apni hum omer os jaisi nahi magar kafi haseen saheli ke saath nazar aai aisa lag reha tha key wh kisi ki talaash mey hie. Hum teeno rate per baithe jannet nisha sormae sohane seserati sham me khoae……. Acanek mahe kamil jo kuch fasle per tha key kirno ne hamein hairat zada kar diya lashaoori taur per ek saath byek waqt Faize ka misra keh uthe, “Tu jo miljaie to takdeer nigo ho jaie”. Pari paiker, pari vesh pari chehera pari jamal ne mere kaan paked ke keha mammi aap ko fauran bula rehi haie Aap ko dekhene wo loge aiye haie . Aap teeno itne ghbraie howe que haie our yeh paseena Kaise? Nahi nahi koi khas baat nahi. Peshemani aour nadmat me dube hoe mai ney apne dosto ko kupkupate hoe kudha hafiz kaha. Lajja ka bojh uthae shermsr ek mujrim ki tereh bejaan kadmo se apni chhoti behen ke ssaath gher ki ore chal peda.

Teri tashnagi k hisaar mei

Verses

Teri tashnagi k hisaar mei,
teri aarzoo k ghubaar mei...

Meri zaat sar sy paaon tak,
hai dabi huyi tery pyar mei.....

kya wo bhi tujh mei hi gum hua,
Tu raha hai jis k khumaar mei...

Apni jeet sy hai wo muztarib,
Mein khush hun apni haar mei....

Meri zaat meri rahi nahi,
Jab rakhi oos nay shumaar mei...