A-H

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdupoetry/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
asifemaan's picture

عشق نے بے حال کر دیا ہے

عشق نے بے حال کر دیا ہے
میرا تو جینا محال کر دیا ہے

پہلے تو بس شوق تھا ملاقات کا
اب اک جنون نے نڈھال کر دیا ہے

میں برف کا پہاڑ تھا پگھل گیا
یہ محبت نے کیا کمال کر دیا ہے

سُنا ہے رتجگوں نے اُسکی بھی
سرمئی آنکھوں کو لال کر دیا ہے

اُسکی مرضی ہے جواب دے نہ دے
ہم نے تو پیش اپنا سوال کر دیا ہے

مان لو تم کہیں کے نہیں رہے ایمان
وقفِ صنم تم نے ہرخیال کر دیا ہے

asifemaan's picture

اک بات سمجھ نہیں آتی

اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں آنکھوں میں بس
ایک ہی چہرہ رہتا ہے؟
کیوں دل میں بس
ایک ہی صورت بستی ہے؟
کیوں اسکی یاد اچانک
سوچوں کو جنگل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں کچھ نہ ہونے کا
ہر پل احساس رہتا ہے؟
کیوں بہت دور ہوتا ہے کوئی مگرپھر بھی
دل کے آس پاس رہتا ہے؟
کیوں میری ہر بات ادھوری رہتی ہے؟
کیوں وہ ہر بات مکمل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں من اسکی باتوں پہ
امید کا اک جہاں بساتا ہے؟
کیوں دل کے خالی کینوس پر
تصویر اسکی بناتا ہے؟
وہ میرا نہیں ہے‘ وہ میرا نہیں ہے
کیوں دماغ کی اس تکرار کو
دل کی آنکھ اوجھل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟

asifemaan's picture

اتنی محبت اِک صنم سے حد کر دیتے ہو

اتنی محبت اِک صنم سے حد کر دیتے ہو
کبھی کبھی تو قسم سے حد کر دیتے ہو

کر کے چُپکے سے بند آنکھیں میری
دبے دبے قدم سے حد کر دیتے ہو

نظروں سے بھی چھُو لوں تو تم
چہرہ لال شرم سے حد کر دیتے ہو

خالی تیرے در سے کبھی کوئی نہیں لوٹا
سُنا ہے اپنے کرم سے حد کر دیتے ہو

ڈوب ڈوب جاتا ہے سو سو بار ایمان
جب تم کجلائی چشم سے حد کر دیتے ہو

asifemaan's picture

عشق نے بے حال کر دیا ہے

عشق نے بے حال کر دیا ہے
میرا تو جینا محال کر دیا ہے

پہلے تو بس شوق تھا ملاقات کا
اب اک جنون نے نڈھال کر دیا ہے

میں برف کا پہاڑ تھا پگھل گیا
یہ محبت نے کیا کمال کر دیا ہے

سُنا ہے رتجگوں نے اُسکی بھی
سرمئی آنکھوں کو لال کر دیا ہے

اُسکی مرضی ہے جواب دے نہ دے
ہم نے تو پیش اپنا سوال کر دیا ہے

مان لو تم کہیں کے نہیں رہے ایمان
وقفِ صنم تم نے ہرخیال کر دیا ہے

asifemaan's picture

خرچے وہ عشق میں آئے ہیں کہ جی جانتا ہے

خرچے وہ عشق میں آئے ہیں کہ جی جانتا ہے
اُدھار ایسے ایسے اٹھائے ہیں کہ جی جانتا ہے

اک تمہیں پٹانے کے لئے تمہیں کیا معلوم
جھوٹ سچ میں اتنے ملائے ہیں کہ جی جانتا ہے

اب کہاں نصیب سنگ سنگ وہ ”پی سی“ کے کھانے
بل کریڈٹ کارڈ کے اتنے آئے ہیں کہ جی جانتا ہے

کھا چاٹ گئی ہو سب کچھ پھر بھی ہوبے دید
برتن تک گھر کے تم نے بکوائے ہیں کہ جی جانتا ہے

اب تو ہم بھی ہو گئے ہیں بڑے گھاگ استاد
سبق اتنے تم نے سکھلائے ہیں کہ جی جانتا ہے

ہم ہی کبوتر کیطرح آنکھیں بند کئے رہے ورنہ تم نے
شہر بھر میں دل اتنے دکھائے ہیں کہ جی جانتا ہے

بہت ہو چکااب اور کیسے اٹھائیں بھلا ہم تیرے ناز
پیسے اس مشکل سے کمائے ہیں کہ جی جانتا ہے

گرگٹ کی طرح جواس نے رنگ بدلے ہیں ایمان
سامنے رہ کے اسکے ہم اتنے پرائے ہیں کہ جی جانتا ہے

Guest Author's picture

mujhe udaas kar gaey ho, khush raho

mujhe udaas kar gaey ho, khush raho
mere mizaaj par gaey ho, khush raho

mere liye nah ruk sakey to kya huwa
jahaN kaheiN thehar gaey ho, khush raho

khushi huwi hey aaj tum ko dekh kar
bahut nikhar sanwar gaey ho, khush raho

udaas ho kisi ki bey wafai par
wafa kaheiN to kar gaey ho, khush raho

gali meiN oar log bhi thay aashna
humheiN salaam kar gaey ho, khush raho

tumheiN to mairi dosti peh naaz thaa
osi sey ab mukar gaey ho, khush raho

kisi ki zindagi bano keh bandagi
merey liye to mar gaey ho, khush raho

By Fazil Jamili

Syndicate content