Abbas Tabish

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdupoetry/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
عباس تابش
IN Khan's picture

اِسی لیے مرا سایہ مجھے گوارا نہیں

اِسی لیے مرا سایہ مجھے گوارا نہیں
یہ میرا دوست ہے لیکن مرا سہارا نہیں

یہ مہر و ماہ بھی آخر کو ڈوب جاتے ہیں
ہمارے ساتھ کسی کا یہاں گذارا نہیں

ہر ایک لفظ نہیں تیرے نام میں شامل
ہر ایک لفظ محبت کا استعارہ نہیں

تمہی سے چلتے ہیں سب سلسلے تعلق کے
وہ اپنا کیسے بنے گا کہ جو ہمارا نہیں

اور اب برہنگی اپنی چھپاتا پھرتا ہوں
مرا خیال تھا میں خود پہ آشکارا نہیں

ابھی میں نشۂ لاحاصلی میں رہتا ہوں
ابھی یہ تلخئ دنیا مجھے گوارا نہیں

لیے تو پھرتا ہوں آنکھوں میں ناتمام سا نقش
اُسے مٹاؤں گا کیسے، جسے ابھارا نہیں

زمیں کا حُسن مکمل نہ ہو سکا تابش
کہیں چراغ نہیں ہے، کہیں ستارہ نہیں

Your rating: None Average: 4 (72 votes)
IN Khan's picture

کھلا مہتاب بھی ٹوٹے ہوئے دَر کے حوالے سے

کھلا مہتاب بھی ٹوٹے ہوئے دَر کے حوالے سے
سمجھتا ہوں میں اشیاء کو فقط گھر کے حوالے سے

مرے مایوس ہونے سے ذرا پہلے ہی لوٹ آنا
کہ میں بھی سوچتا ہوں اب مقدر کے حوالے سے

Your rating: None Average: 3 (2 votes)
IN Khan's picture

وہ کون ہے جو پسِ چشمِ تر نہیں آتا

وہ کون ہے جو پسِ چشمِ تر نہیں آتا
سمجھ تو آتا ہے لیکن نظر نہیں آتا

اگر یہ تم ہو تو ثابت کرو کہ یہ تم ہو
گیا ہوا تو کوئی لوٹ کر نہیں آتا

یہ دل بھی کیسا شجر ہے کہ جس کی شاخوں پر

Your rating: None Average: 5 (1 vote)
IN Khan's picture

دشتِ جنون و کوہِ ارادہ اٹھا لیا

دشتِ جنون و کوہِ ارادہ اٹھا لیا
سنبھلے گا کیسے بوجھ تو اتنا اٹھا لیا

اُس لب کے سارے پھول تو شاخوں نے لے لیے
اور میں نے اِک گِرا ہوا وعدہ اٹھا لیا

کیا کچھ نہیں تھا مالِ غنیمت کے طور پر

Your rating: None Average: 5 (1 vote)
IN Khan's picture

اِس جہاں میں عجب نہیں کُچھ بھی

اِس جہاں میں عجب نہیں کُچھ بھی
پہلے کیا کچھ تھا اب نہیں کُچھ بھی

پُھول کھلتا ہے شاخ سے باہر
خندہء زیرلب نہیں کُچھ بھی

مختصر یہ کہ اچھے لگتے ہو
چاہنے کا سبب نہیں کُچھ بھی

Your rating: None Average: 3.7 (3 votes)
IN Khan's picture

کون کہتا ہے کہ وہ بُھولتا جاتا ہے مُجھے

کون کہتا ہے کہ وہ بُھولتا جاتا ہے مُجھے
اپنا چہرہ نہ سہی، رہ تو دکھاتا ہے مُجھے

صُبح کے ساتھ میں کھو جاتا ہوں بچے کی طرح
شام ہوتے ہی کوئی ڈھونڈ کے لاتا ہے مُجھے

Your rating: None Average: 5 (1 vote)
IN Khan's picture

شام کا بُھولا ہوا وقتِ سحر آ جائے گا

شام کا بُھولا ہوا وقتِ سحر آ جائے گا
وہ بھی سورج کی طرح کل لوٹ کر آ جائے گا

اِس قدر شفاف کر دے گی یہ تنہائی مجھے
دیکھنے والوں کو تُو مجھ میں نظر آ جائے گا

Your rating: None Average: 5 (1 vote)
IN Khan's picture

بوئے موجود سے موہوم اشارے تک ہے

بوئے موجود سے موہوم اشارے تک ہے
میری حیرت کسی ڈوبے ہوئے تارے تک ہے

ہم نے اِک عمر ترے دھیان میں رہ کر دیکھا
یہ سمندر بھی کسی اور کنارے تک ہے

تجھ مہک کو نہ ملا کوئی اور ہواؤں جیسا

Your rating: None Average: 5 (2 votes)
Syndicate content