Parveen Shakir

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdupoetry/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
پروین شاکر
noorulain's picture

طویل غزل/rafiq sandeelvi

فضا خاموش تھی وقتِ دعا تھا
میں قرآں کی تلاوت کر رہا تھا

لبوں پر سورہء یاسین تھی اور
مرا سینہ گرجنے لگ گیا تھا

کئی دن سے نہیں برسی تھیں آنکھیں
کہیں اندر ہی آنسو رُک گیا تھا

اُسی جانب ہی سچے راستے تھے
جدھر رُخ اونٹنی نے کر لیا تھا

قریب المرگ تھا تو اُس نے مجھکو
شفا دی تھی سکون ِ دل دیا تھا

بڑی شدت تھی میرے المیے میں
سمندر کا بھی پانی جل اٹھا تھا

ہوا تھا اک طلسماتی اشارہ
جہاں پر جو بھی تھا ساکن ہوا تھا

غلاف ِ گرد میں ہر شے تھی لیکن
مرا چہرہ دکھائی دے رہا تھا

چھما چھم دوسری بارش ہوئی تھی
میں تنہا بالکونی میں کھڑا تھا

گلے ہم مل رہے تھے کہ اچانک
دمامہ کوچ کا بجنے لگا تھا

گلوں کی خوشبوئیں باسی ہوئی تھیں
پھلوں کا ذائقہ پھیکا ہوا تھا

کرن پر چھپکلی اوندھی پڑی تھی
نیولا روشنی سے لڑ رہا تھا

اندھیرا کیچوے کی چال چل کر
ہوا کے پیٹ میں داخل ہوا تھا

اداسی میں نے خود تخلیق کی تھی
مجھے جو دکھ بھی تھا خود ساکتہ تھا

مساجد میں عبادت ہو رہی تھی
دلوں میں پھر بھی کوئی وسوسہ تھا

تری چاندی بھی میلی ہو گئی تھی
مری مے میں بھی پانی مل گیا تھا

سبھی پیروں نے مٹی چھوڑ دی تھی
اکیلا ریچھ چرخہ کاتتا تھا

تجھے ماں باپ رخصت کر رہے تھے
تری آنکھوں سے دریا بہ رہا تھا

گھروں میں پھر بھی چوری ہو گئی تھی
اگرچہ شہر پر پہرا کڑا تھا

مری باتوں میں لکنت آگئی تھی
روانی سے مگر وہ بولتا تھا

نگر کو عاجزی کا درس دے کر
وہ خود فرعون بنتا جا رہا تھا

خطا اس سے بھی ہو سکتی تھی کوئی
خمیر اس کا بھی مٹی سے اٹھا تھا

اُسی کوئے کے بچے گم ہوئے تھے
جو اک چڑیا کے انڈے کھا گیا تھا

فشارِ لمس میں اُلجھی تھیں روحیں
شجر سے اژدہا لپٹا ہوا تھا

تِری شریانیں بھی جلنے لگی تھیں
مرا خوں بھی رگوں میں کھولتا تھا

بہشتی پھل دھرے تھے طشری میں
کوئی بابِ تلذذ کھل گیا تھا

کھلے تھے چاندنی کے بال کیونکر
ستارہ کیوں گریباں پھاڑتا تھا

کسی نے بت کے ٹکڑے کر دیے تھے
عبادت گاہ میں اک شور سا تھا

مری ماں مجھکو باہر ڈھونڈتی تھی
میں اپنے گھر کے ملبے میں دبا تھا

مجھے دو نیلی آنکھیں روکتی تھیں
مگر میں کالے پانی جا رہا تھا

محلوں میں ضیافت اڑ رہی تھی
بھکاری شہر میں بھوکا رہا تھا

نہیں تھا اُس طرف تیراک کوئی
جدھر سیلاب کا پانی بڑھا تھا

تری بیماری کے خط مل رہے تھے
میں کالج کے جھمیلوں میں پڑا تھا

میں دادا جان کی ٹوٹی لحد کو
اٹھارہ سال سے بھولا ہوا تھا

معموں کی طرح تھے جسم اپنے
اُسے میں وہ مجھے حل کر رہا تھا

بہت گنجل تھا اس کا آئینہ بھی
مرا بھی عکس پیچیدہ ہوا تھا

پڑے تھے جھول اُس کے پانیوں میں
سقم میری بھی مٹی میں پڑا تھا

مجھے سمجھانے میں صدیاں لگی تھیں
سمجھنے میں اُسے عرصہ لگا تھا

چراگاہوں میں بھیڑیں چر رہی تھیں
افق کے پار سورج ڈوبتا تھا

مرے ماں باپ نے میرے جنم پر
سنہری اونٹ کا صدقہ دیا تھا

صلیبوں سے مجھے وحشت ہوئی تھی
میں طبعی موت مرنا چاہتا تھا

کٹورے دودھ کے بانٹے گئے تھے
زمینداروں کے گھر بیٹا ہوا تھا

یتیمی شہر پر چھائی ہوئی تھی
سبھی کا باپ جیسے مر گیا تھا

ترے بھی گرد تھی نارِ جہنم
مرے بھی چاروں جانب ہاویہ تھا

زباں میں کیل ٹھونکے جا رہے تھے
شکم آری سے کاٹا جا رہا تھا

مری بھی کھال کھینچی جا رہی تھی
ترا بھی جسم داغا جا رہا تھا

تجھے بھی کوئی ناگن ڈس رہی تھی
مجھے بھی کوئی بچھو کاٹتا تھا

فضا میں گونگھرو بجنے لگے تھے
میں پریوں کے جلو میں آ رہا تھا

ہوائیں مجھکو لوری دے رہی تھی
میں پھولوں کا پنگوڑا جھولتا تھا

وہ اک بھیگی اماوس رات تھی جب
مسخر چاند میں نے کر لیا تھا

پہاڑ اہنی جگہ سے ہٹ گئے تھے
سمندر نے مجھے رستہ دیا تھا

دورانِ آب شمعیں جل رہی تھیں
ہوا کے طاق پر پانی دھرا تھا

جڑیں تھیں سبز مائل اور باہر
شجر کا رنگ پیلا پڑ گیا تھا

ہوئے تھے چھید دستِ خاکداں میں
فلک کے پاؤں میں سوراخ سا تھا

رکابی میں دھری تھیں سرخ آنتیں
پیالے میں لہو رکھا ہوا تھا

پڑا تھا دودھ خالی کھوپڑی میں
دھواں برتن کے منہ سے اٹھ رہا تھا

کہیں دیوار سے کھالیں ٹنگی تھیں
کہیں مُردے کا پنجر جھولتا تھا

کہیں چربی پگھلتی تھی چتا پر
کہیں شعلوں پہ مینڈک بھن رہا تھا

یکایک ہیر کو غصہ چڑھا تھا
کوئی رنگلے پلنگ پر سو رہا تھا

جسے مارا تھا اس نے چھمکیوں سے
اسے بھینسوں کا کاماں رکھ لیا تھا

اسی کے واسطے کوٹی تھی چوری
اسی کی بانسری پر سر دھنا تھا

لڑی تھی کیدو سے اس کے لئے ہی
بہت ماں باپ سے جھگڑا کیا تھا

بڑے صدمے سہے تھے اس کی خاطر
مگر ڈولی کو کھیڑا لے گیا تھا

حویلی میں چڑیلیں آ گئیں تھیں
کوئی اس رات چھت پر دوڑتا تھا

سڑک پر خون کے چھینٹے پڑے تھے
کوئی گاڑی تلے کچلا گیا تھا

ہوئی تھیں کُند میری پانچوں حسیں
چھٹی حس کا ہی سارا معجزہ تھا

کیا تھا چاک پانی نے گریباں
اندھیرا سر میں مٹی ڈالتا تھا

پہاڑی سے نہیں اترا تھا ریوڑ
گڈریا رات بھر روتا رہا تھا

کوئی شے بھی نظر آتی نہیں تھی
مری آنکھوں پہ پردہ پڑ گیا تھا

پچھل پائی مرے پیچھے لگی تھی
میں سر پر پاؤں رکھ کر بھاگتا تھا

مجھے اڑنے کی شکتی مل گئی تھی
مگر مین پیٹ کے بل رینگتا تھا

ہزاروں اونٹ میری ملکیت تھے
مگر میں پا پیادہ چل رہا تھا

مرے احکام کی تابع تھیں نیندیں
مگر میں تھا کہ شب بھر جاگتا تھا

بنفشی آئینوں کی اک روش پر
ہوا کے رتھ پہ سورج گھومتا تھا

بچھی تھی فرش پر چاندی کی چادر
اور اس پر اک ستارا ناچتا تھا

دیے تھے جس نے کپڑے شہر بھر کو
وہی بازار میں ننگا ہوا تھا

بڑی محنت سے جس نے ہل چلائے
اسی کی فصل کو کیڑا لگا تھا

جنہوں نے بند کیں نیلام گاہیں
انہی ہاتھوں کا سودا ہو رہا تھا

جو چہرے پہلے ہی سے زشت رو تھے
انہی پر کوڑھ کا حملہ ہوا تھا

کچھ ایسی تیز سانسیں چل رہی تھیں
منڈیروں پر دیا بجھنے لگا تھا

مری ملکہ کی ساتوں بیٹیوں پر
کسی ڈائن نے جادو کر دیا تھا

وہ اپنے شہر واپس جا رہا تھا
میں اس کے سامنے گم صم کھڑا تھا

یکایک ریل کی سیٹی بجی تھی
مجھے اس نے خدا حافظ کہا

کھلی کھڑکی سے تا حد ِ بصارت
وہ اپنا ہاتھ لہراتا رہا تھا

سمٹ کر چھکڑے نقطہ بن گئے تھے
سٹیشن پر میں تنہا رہ گیا تھا

اندھیری رات کے پھیلے تھے سائے
میں تکیے سے لپٹ کر رو دیا تھا

بدن میں سوئیاں چبھنے لگی تھیں
عمل سارا ہی الٹا ہو گیا تھا

گرفتِ چشم میں تھا آب ِ باراں
گھٹا میں اس کا چہرہ تیرتا تھا

نگاہیں دھند میں ڈوبی ہوئی تھیں
کہاسا جسم پر چھایا ہوا تھا

میں اندھا یاتری بوڑھا تھا لیکن
وہ تبت کا پہاڑی سلسلہ تھا

محبت پھر ہماری جاگ اٹھی تھی
پلوں کے نیچے پانی آ گیا تھا

دھرے تھے میرے آگے سات کھانے
اور اُن میں لمس اس کے ہاتھ کا تھا

نوالے بھی بہت نمکیں تھے لیکن
عجب اُس کے لبوں کا ذائقہ تھا

شراب اور گوشت کی اپنی تھی لذت
مگر اس کے بدن کا جو مزا تھا

زمیں،عورت،حویلی اور مویشی
سبھی کچھ غدر میں لُٹ پُٹ گیا تھا

کجاوے،باغ،جھولےاور پنگھٹ
پرانا وقت یاد آنے لگا تھا

برہنہ پشت پر لگتے تھے کوڑے
غلامی کا زمانہ آ گیا تھا

رکی تھیں گھر میں آدم خور راتیں
اندھیرا مجھکو کھانے دوڑتا تھا

جب اِندر کا اکھاڑا ہو رہا تھا
میں کالے دیو کے ہتھے چڑھا تھا

پری انسان پر عاشق ہوئی تھی
سنہرے دیو کو سکتہ ہوا تھا

پرستاں میں اُداسی چھا گئی تھی
اچانک ختم جلسہ ہو گیا تھا

پری کے سبز پر نوچے گئے تھے
مجھے بھی قید میں ڈالا گیا تھا

مری فرقت میں وہ لاغر ہوئی تھی
میں اُس کے ہجر میں کانٹا ہوا تھا

مرا جغرافیہ تھے سرخ شعلے
دھواں ہی میری سرحد بن گیا تھا

جڑیں کیا پھیلتیں میری زمیں میں
میں اک چھوٹے سے گملے میں اگا تھا

کھلیں جب نصف شب کو میری آنکھیں
کوئی آسیب بستر پر جھکا تھا

ڈرامہ ہم نے وہ دیکھا کھ جس کا
ہزاروں سال کا دورانیہ تھا

پسِ کہسار خیمے تھے نہ سائے
اب آنکھیں تھیں ہوا تھی اور کیا تھا

جمی تھی دھوپ سطحِ آئنہ پر
اور اس کا عکس چھاؤں سے اٹا تھا

مچی تھیں میری آنکھیں اور منہ پر
کوئی انگور کا گچھا جھکا تھا

پرندہ ڈوبتا تھا آبِ یخ میں
اور آبِ یخ ہوا میں ڈوبتا تھا

ستونِ خواب پر بارش کی چھت تھی
اور اُس چھت پر چراغ اور آئینہ تھا

رفیق سندیلوی

Guest Author's picture

mohabat

Merey pass se guzar gaye mera haal tak na puchaa..........
Mai kesey maan jaon wo door ja k roya hoga.........
parveen shakir
Terey pass se guzary to bekhudi k aalam they.......
jab door ja k sanbhaley to zaar-o-zaar roye..........

Guest Author's picture

mohabat

sonay ki kaya jaldi hoti hai tumhey
lagtaaa hai ishq se mehroom ho abhi tak........
Gudia khan

Lubna's picture

کتنے برس لگے یہ جاننے میں

کتنے برس لگے
یہ جاننے میں
کہ تیرا ہونا میرے لیے کیا ہے
ایسا ہونا بھی چاہئے تھا
شام ہوتے ہی
چاند میں روشنی نہیں آجاتی
رات ہوتے ہی
رات کی رانی مہک نہیں اُٹھتی
شام اور خوشبو کے بیچ
ایک ایسا لمحہ ہوتا ہے
جس کا ہماری زمیں سے کوئی تعلق نہیں ہوتا
اس آسمانی لمحے نے
اب ہمیں چھو لیا ہے

Lubna's picture

دنیا کو تو حالات سے امید بڑی تھی

دنیا کو تو حالات سے امید بڑی تھی
پر چاہنے والوں کو جدائی کی پڑی تھی

کس جان گلستاں سے یہ ملنے کی گھڑی تھی
خوشبو میں نہائی ہوئی اک شام کھڑی تھی

میں اس سے ملی تھی کہ خود اپنے سے ملی تھی

Lubna's picture

چراغ میلے سے باہر رکھا گیا وہ بھی

چراغ میلے سے باہر رکھا گیا وہ بھی
ہوا کی طرح سے نامعتبر رہا وہ بھی

زمین زاد بھی بھُولا جو لفظِ رہداری
فصیلِ شہر سے باہر کھڑا رہا وہ بھی

میں اُس کے سارے رویوں پر معترض ہوتی

Lubna's picture

اپنی ہی صدا سُنوں کہاں تک

اپنی ہی صدا سُنوں کہاں تک
جنگل کی ہوا رہوں کہاں تک

دَم گھٹتا ہے ، گھر میں حبس وہ ہے
خوشبو کے لیے رُکوں کہاں تک

پھر آگے ہوائیں کھول دیں گی
زخم اپنے رفو کروں کہاں تک

miss pinky's picture

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے
یہی کیا کم ہے کہ نسبت مجھے اس خاک سے ہے

خواب میں بھی تجھے بھولوں تو روا رکھ مجھ سے
وہ رویّہ جو ہوا کو خس و خاشاک سے ہے

بزم انجم میں قبا خاک کی پہنی میں نے
اور مری ساری فضیلت اسی پوشاک سے ہے

اتنی روشن ہے تری صبح کہ ہوتا ہے گماں
یہ اجالا تو کسی دیدہء نمناک سےہے

ہاتھ تو کاٹ دیئے کوزہ گروں کے ہم نے
معجزے کی وہی امید مگر چاک سے ہے

Syndicate content