Khawab dykh Baithy hain

Verses

Khawab dekhny waly

Khawab dekh Baithy hain

Ab aye mery YUSUF kuch

Imtehan tera bhi .....

خلا چپو ,ستارا رات کا مانجھی بنے گا/rafiq sandeelvi

Verses

خلا چپو ,ستارا رات کا مانجھی بنے گا
زمیں پانی بنے گی آسماں کشتی بنے گا

بندھے جائیں گے پھر چودہ طبق کے ہاتھ پاؤں
کوئی کالا سمندر بان کی رسی بنے گا

سجے گی روشنی سے خاک کی نازک کلائی
کبھی یہ دب اکبر کانچ کی چوڑی بنے گا

پھریں گے معرفت کی تنگنائے میں ستارے
ولی سورج بنے گا ,مشتری صوفی بنے گا

بنفشی رنگ ہوں اور جس کے اندر رتجگے ہوں
ہوا کا پیرہن اس آنکھ کی وردی بنے گا

جہاں گرتا رہا ہے بے حسی کا سرد پانی
اسی مٹی کے خلیوں سے کوئی باغی بنے گا

شکستہ پاؤں پر کھل جائیں گے اسرار سارے
سفر تالا بنے گا,راستہ کنجی بنے گا
رفیق سندیلوی

ashfaque qureshi

Verses

hai aabido.n ko ta'at-o-tajariid kii Khushii
aur zaahido.n ko zuhad kii tamahiid kii Khushii
ri.nd aashiqo.n ko hai ka_ii ummiid kii Khushii
kuchh dil-baro.n ke val kii kuchh diid kii Khushii

[aabid=devotee; ta'at=devotion; tajariid=solitude]
[zaahid=preacher; zuhad kii tamaheed=start of religious talk]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

pichhale pahar se uTh ke nahaane kii dhuum hai
shiir-o-shakar sivayyaa.N pakaane kii dhuum hai
piir-o-javaan ko nema'te.n khaane kii dhuum hai
la.Dako ko iid-gaah ke jaane kii dhuum hai

[piir=old; nema't=bounty]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

ko_ii to mast phirataa hai jaam-e-sharab se
ko_ii pukarataa hai ke chhuuTe azaab se
kallaa kisii kaa phuulaa hai laDDuu kii chaab se
chaTakaare.n jii me.n bharate hai.n naan-o-kabaab se

[azaab=agony; kallaa=cheek]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

kyaa hi muaanqe kii machii hai ulaT palaT
milate hai.n dau.D dau.D ke baaham jhapaT jhapaT
phirate hai.n dil-baro.n ke bhii galiyo.n me.n Gat ke Gat
aashiq maze u.Daate hai.n har dam lipaT lipaT

[muaaniq=embrace; GaT=crowd]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

kaajal hinaa Gazab masii-o-paan kii dha.Dii
pishavaaze.n surKh sausanii laahii kii phul-jha.Dii
kurtii kabhii dikhaa kabhii angiyaa kasii ka.Dii
kah 'iid iid' luuTen hai.n dil ko gha.dii gha.Dii

[pishwaaz=ladies' skirt]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

roze kii Khushkiyo.n se jo hai.n zard zard gaal
Khush ho gaye vo dekhate hii iid kaa hilaal
poshaake.n tan me.n zard, sunaharii safed laal
dil kyaa ke ha.Ns rahaa hai pa.Daa tan ka baal baal

[roze=fastings; hilaal=crescent moon of Eid; poshaak=clothes]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

jo jo ke un ke husn kii rakhate hai.n dil se chaah
jaate hai.n un ke saath taa baa-iid-gaah
topo.n ke shor aur dogaano.n kii rasm-o-raah
mayaane, khilone, sair, maze, aish, vaah-vaah

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

Koi ilhaam hai na koi nazool....

Verses

کوئ الہام ہے نہ کوئ نزُول
بند کیوں ہو گیا ہے بابِ قبُول ۔
بے ثمر کیوں ہوا ہے دشتِ وجُود
کوئ پتہ نہ خار ہے نہ ببُول ۔
بربطِ دل پے کوئ نَے ہے نہ لَے
جم گئ ہے ہر ایک ساذ پہ دھُول ۔
ٹُوٹتی جا رہی ہے ذیست کی ڈور
کھینچتا جا رہا عشق بھی طُول ۔
موسمِ ہجر خاک پھینک گیا
کشتِ ہستی میں ہیں خزاں کے پھوُل ۔
محفلِِ میکشاں سلامت باد
جسمیں ہوتی نہیں ہے کوئ بھُول ۔
مر مِٹے جس کو بھی کبھی چاہا
عشق میں مُنفرِد ہے اپنا اصُول ۔ محبوب صدیقی ۔

ham apni khataon kh iqrar nahin kartai duniya ki mohabbat po iarar nahin kartai

Verses

ham ap ni khatan kh iqrar nahin kartai
duniya ki mohabbat paih israr nahin kartai
ghaflat main jv ham soai khoee hai jawani bhee
peeri jo abhi aiyee inkar nahin kartai
hm mahvai tamasha hain kartain hain tamasha hambh
bhatkai saiy musafir kh kirdar nahin kartai
mana kai hai dil toota mahman ka dil rakhlo
ashkon sai tawazo to ghamkhar nahin kartai
gulshan aim agar aaee pat jharh hai to rahnai do
veerana hai veerana hai veerana gulzar nahin karai
karti hai hokoomat jv kartai hain inayat voh
mohtaj aur muflis paih aazar nahin kartai
hamsahanasheeon ka sara bhe nashaiman hai
dolat bheeagar aa aiy ghar baar nahin kartai
tasweerai mohabbat to bas dil main rahi roshan
deevanain hain ham aisay deedarnahin artai
voh apni jafaon ki tashheer kiya kartai
ham apni vafaon ka parchar nahin kartai
maidan amal main ab parwaz uta jaow
hal sarai masail o afkaar nahin kartai

عشق نے بے حال کر دیا ہے

Verses

عشق نے بے حال کر دیا ہے
میرا تو جینا محال کر دیا ہے

پہلے تو بس شوق تھا ملاقات کا
اب اک جنون نے نڈھال کر دیا ہے

میں برف کا پہاڑ تھا پگھل گیا
یہ محبت نے کیا کمال کر دیا ہے

سُنا ہے رتجگوں نے اُسکی بھی
سرمئی آنکھوں کو لال کر دیا ہے

اُسکی مرضی ہے جواب دے نہ دے
ہم نے تو پیش اپنا سوال کر دیا ہے

مان لو تم کہیں کے نہیں رہے ایمان
وقفِ صنم تم نے ہرخیال کر دیا ہے

اک بات سمجھ نہیں آتی

Verses

اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں آنکھوں میں بس
ایک ہی چہرہ رہتا ہے؟
کیوں دل میں بس
ایک ہی صورت بستی ہے؟
کیوں اسکی یاد اچانک
سوچوں کو جنگل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں کچھ نہ ہونے کا
ہر پل احساس رہتا ہے؟
کیوں بہت دور ہوتا ہے کوئی مگرپھر بھی
دل کے آس پاس رہتا ہے؟
کیوں میری ہر بات ادھوری رہتی ہے؟
کیوں وہ ہر بات مکمل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں من اسکی باتوں پہ
امید کا اک جہاں بساتا ہے؟
کیوں دل کے خالی کینوس پر
تصویر اسکی بناتا ہے؟
وہ میرا نہیں ہے‘ وہ میرا نہیں ہے
کیوں دماغ کی اس تکرار کو
دل کی آنکھ اوجھل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟

اتنی محبت اِک صنم سے حد کر دیتے ہو

Verses

اتنی محبت اِک صنم سے حد کر دیتے ہو
کبھی کبھی تو قسم سے حد کر دیتے ہو

کر کے چُپکے سے بند آنکھیں میری
دبے دبے قدم سے حد کر دیتے ہو

نظروں سے بھی چھُو لوں تو تم
چہرہ لال شرم سے حد کر دیتے ہو

خالی تیرے در سے کبھی کوئی نہیں لوٹا
سُنا ہے اپنے کرم سے حد کر دیتے ہو

ڈوب ڈوب جاتا ہے سو سو بار ایمان
جب تم کجلائی چشم سے حد کر دیتے ہو

عشق نے بے حال کر دیا ہے

Verses

عشق نے بے حال کر دیا ہے
میرا تو جینا محال کر دیا ہے

پہلے تو بس شوق تھا ملاقات کا
اب اک جنون نے نڈھال کر دیا ہے

میں برف کا پہاڑ تھا پگھل گیا
یہ محبت نے کیا کمال کر دیا ہے

سُنا ہے رتجگوں نے اُسکی بھی
سرمئی آنکھوں کو لال کر دیا ہے

اُسکی مرضی ہے جواب دے نہ دے
ہم نے تو پیش اپنا سوال کر دیا ہے

مان لو تم کہیں کے نہیں رہے ایمان
وقفِ صنم تم نے ہرخیال کر دیا ہے

خرچے وہ عشق میں آئے ہیں کہ جی جانتا ہے

Verses

خرچے وہ عشق میں آئے ہیں کہ جی جانتا ہے
اُدھار ایسے ایسے اٹھائے ہیں کہ جی جانتا ہے

اک تمہیں پٹانے کے لئے تمہیں کیا معلوم
جھوٹ سچ میں اتنے ملائے ہیں کہ جی جانتا ہے

اب کہاں نصیب سنگ سنگ وہ ”پی سی“ کے کھانے
بل کریڈٹ کارڈ کے اتنے آئے ہیں کہ جی جانتا ہے

کھا چاٹ گئی ہو سب کچھ پھر بھی ہوبے دید
برتن تک گھر کے تم نے بکوائے ہیں کہ جی جانتا ہے

اب تو ہم بھی ہو گئے ہیں بڑے گھاگ استاد
سبق اتنے تم نے سکھلائے ہیں کہ جی جانتا ہے

ہم ہی کبوتر کیطرح آنکھیں بند کئے رہے ورنہ تم نے
شہر بھر میں دل اتنے دکھائے ہیں کہ جی جانتا ہے

بہت ہو چکااب اور کیسے اٹھائیں بھلا ہم تیرے ناز
پیسے اس مشکل سے کمائے ہیں کہ جی جانتا ہے

گرگٹ کی طرح جواس نے رنگ بدلے ہیں ایمان
سامنے رہ کے اسکے ہم اتنے پرائے ہیں کہ جی جانتا ہے