Popular

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdupoetry/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
Guest Author's picture

Zahra

Khuda kare usey zindagi main sada thokrainnaseeb hon
meray hath se meray humsafar tera hath jis ne chora diya

Guest Author's picture

متفرق اشعار

پیام امن پہ کرنا مذاکرے لیکن
فصیلِ شہر پہ افواجِ جنگجو رکھنا
*
بنا جو شیر کا لقمہ غریب چرواہا
ہراس پھیل گیا بکریوں کے ریوڑ میں
*
لٹ گیا تھا نگر کا چین تمام
یرغمالی تھے والدین تمام
*
بد نما داغ ہیں چہروں پہ پرائی آنکھیں
اس سے بہتر تھا کہ ہر چوک پہ اندھے ہوتے
*
فضا میں قتل ہوا ہے کسی پرندے کا
لہو کی باس رچی ہے ہوا کے جھونکوں میں
*
یہ آسماں کے مناظر تجھے مبارک ہوں
ہماری آنکھیں دبی ہیں چٹان کے نیچے
*
بھوکے اسیر نے یہی سمجھا طعام ہے
سر پوش کو ہٹایا تو ہیرے تھے قاب میں
*
میں سازش کر کے سلطاں کا محل تاراج کیوں کرتا
رعایا پر کوئی باہر سے آ کر راج کیوں کرتا
*
بس واقعہ اتنا ہے کہ حق مانگا گیا تھا
اور گرم سلاخوں سے ہمیں داغا گیا تھا
*
بکھر گیا ہے بدن پھر بھی گھونسلے کی طرف
سجا گیا ہے پرندہ چٹان پر آنکھیں
*
خوں بہا مانگ رہا ہوں تو یہ میرا حق ہے
شہر کے ہر نئے مقتول کا میں بھائی ہوں
*

رفیق سندیلوی/سبز آنکھوں میں تیر

Guest Author's picture

mohabat

Weesaal Ankahen
Shiraaz Palken krti hain kaya kamal palken
uth jayen to le leti hain jaan palken
na uthen to ajab sa entazaar palken
qatil bana diya sab ko tuney
kush to khaayl kr Allah Ke bandey..........................
Gudia khan

Guest Author's picture

mohabat

Merey pass se guzar gaye mera haal tak na puchaa..........
Mai kesey maan jaon wo door ja k roya hoga.........
parveen shakir
Terey pass se guzary to bekhudi k aalam they.......
jab door ja k sanbhaley to zaar-o-zaar roye..........

Guest Author's picture

mohabat

sonay ki kaya jaldi hoti hai tumhey
lagtaaa hai ishq se mehroom ho abhi tak........
Gudia khan

Administration's picture

Sunaa Hai Log Use Aankh Bhar Ke Dekhte Hain

[video:http://youtu.be/zWamkPaSgkQ]

For more Urdu poetry videos visit here

سُنا ہے لوگ اُسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں
سو اُس کے شہر میں کُچھ دِن ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے رَبط ہے اُس کو خراب حالوں سے
سو اپنے آپ کو برباد کر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے درد کی گاہک ہے چشمِ ناز اُس کی
سو ہم بھی اُس کی گلی سے گُزر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کو بھی ہے شعر و شاعری سے شغف
سو ہم بھی معجزے اپنے ہُنر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے بولے تو باتوں سے پھول جھڑتے ہیں
یہ بات ہے تو چلو بات کر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے رات اُسے چاند تکتا رہتا ہے
ستارے بامِ فلک سے اُتر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے حشر ہیں اُس کی غزال سی آنکھیں
سُنا ہے اُس کو ہِرن دَشت بھر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے دِن کو اُسے تِتلیاں ستاتی ہیں
سُنا ہے رات کو جُگنو ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے رات سے بڑھ کر ہیں کاکلیں اُس کی
سُنا ہے شام کو سائے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کی سیہ چشمگی قیامت ہے
سو اُس کو سُرمہ فروش آہ بھر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کے لبوں پہ گُلاب جلتے ہیں
سو ہم بہار پہ اِلزام دھر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے آئینہ تمثال ہے جبیں اُس کی
جو سادہ دِل ہیں اُسے بَن سنور کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے جب سے حمائل ہیں اُس کی گردن میں
مزاج اور ہی لعل و گوہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کے بدن کی تراش ایسی ہے
کہ پھول اپنی قبائیں کَتر کے دیکھتے ہیں

بس اِک نِگاہ سے لُٹتا ہے کافلہ دِل کا
سو رہروانِ تمنا بھی ڈر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کے شبستاں سے متصل ہے بہشت
مکیں اُدھر کی بھی جلوے اِدھر کے دیکھتے ہیں

رُکے تو گردشیں اُس کا طواف کرتی ہیں
چلے تو اُس کو زمانے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

کِسے نصیب کہ بے پیراہن اُسے دیکھے
کبھی کبھی در و دیوار گھر کے دیکھتے ہیں

کہانیاں ہی سہی ، سب مُبالغے ہی سہی
اگر وہ خواب ہے ، تعبیر کر کے دیکھتے ہیں

اب اُس کے شہر میں ٹھہریں کہ کُوچ کر جائیں
فراز آؤ ستارے سفر کے دیکھتے ہیں

sunaa hai log use aankh bhar ke dekhte hain
so us ke shahr mein kuchh din Thehr ke dekhte hain

sunaa hai rabt hai usko Kharaab haalon se
so apne aap ko barbaad karke dekhte hain

sunaa hai dard kii gaahak hai chashm-e-naazuk uskii
so ham bhii uskii galii se guzar kar dekhte hain

sunaa hai usko bhii hai sheir-o-shaaiirii se sharf
soham bhii maujzay apne hunar ke dekhte hain

sunaa hai bole to baaton se phuul jharte hain
ye baat hai to chal baat kar ke dekhte hain

sunaa hai raat use chaand taktaa rehtaa hai
sitaare baam-e-falak se utar kar dekhte hain

sunaa hai hashr hain uskii Ghazaal sii aankhein
sunaa hai usko hiran dasht bhar ke dekhte hai.n

sunaa hai din ko use titliyaan sataatii hain
sunaa hai raat ko jugnuu Thehr ke dekhte hain

sunaa hai uskii siyaah chashmagii qayaamat hai
so usko surmaafarosh aankh bhar ke dekhte hain

sunaa hai uske labon se gulaab jalate hai.n
so ham pahaarh pe ilzaam dhar ke dekhte hain

sunaa hai aaiinaa tamasal hai jabiin uski
jo saadaa dil hain ban-savar ke dekhte hain

sunaa hai uske badan ke taraash aise hain
ke phuul apnii qabaaein katar ke dekhte hain

sunaa hai uskii shabistaan se muttasil hai bahisht
makeen udhar ke bhii jalve idhar ke dekhte hai.n

ruke to gardish uskaa tavaaf kartii hai
chale to usko zamaane Thehr ke dekhte hain

mubaalaGe hii sahii, sab kahaaniyaa.N hiin sahii
agar vo Khvaab hai to taabiir kar ke dekhte hain

ab usake shehr mein Thehrein ke kuch kar jaaeiN
"Faraz" aao sitaare safar ke dekhte hai.n

zahid.mahmood's picture

Lab Pe Aati Hai Dua Banke Tamanna Meri

[video:http://youtu.be/ffH5aS5d53U]

Lab pe aati hai dua ban kay tamana meri
Zindagi sham’a key surat ho Khudaya meri.

Dur dunya ka maray dam say andheera ho jaye!
Har jagah meray chamaknay say ujala ho jaye!

Ho maray dam say younhi meray watan key zeenat
Jis tarah phool say hoti hai chaman ki zenat.

Zindgi hoo maray parwanay key surat Ya Rab!
Ilm ki sham’a say ho mujko muhabat Ya Rub!

Ho mara kaam ghareeboon key himayat kerna
Dard mandoon say za’ieefoon say muhabbat karna.

Maray Allah! burai say bachana mujhko
Naik jo rah hoo us raah pay chalana mujh ko.

Lub pay aati hai dua baan key tamana mayri
Zindagee shama ki surat ho Khudaya meree.

Administration's picture

خدا ھم کو ایسی خدائی نہ دے

خدا ھم کو ایسی خدائی نہ دے
کہ خود کے سوا کچھ دکھائی نہ دے

ھنسو آج اتنا کہ اس شور میں
صدا سسکیوں کی سنائی نہ دے

خطا وار سمجھے گی دنیا تمہیں
اب اتنی زیادہ صفائی نہ دے

مجھے اپنی چادر میں یوں ڈھانپ لو
زمیں آسماں کچھ دکھائی نہ دے

خدا ایسے احساس کا نام ہے
رہے سامنے اور دکھائی نہ دے

Syndicate content