Sunaa Hai Log Use Aankh Bhar Ke Dekhte Hain

Administration's picture

For more Urdu poetry videos visit here

سُنا ہے لوگ اُسے آنکھ بھر کے دیکھتے ہیں
سو اُس کے شہر میں کُچھ دِن ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے رَبط ہے اُس کو خراب حالوں سے
سو اپنے آپ کو برباد کر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے درد کی گاہک ہے چشمِ ناز اُس کی
سو ہم بھی اُس کی گلی سے گُزر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کو بھی ہے شعر و شاعری سے شغف
سو ہم بھی معجزے اپنے ہُنر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے بولے تو باتوں سے پھول جھڑتے ہیں
یہ بات ہے تو چلو بات کر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے رات اُسے چاند تکتا رہتا ہے
ستارے بامِ فلک سے اُتر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے حشر ہیں اُس کی غزال سی آنکھیں
سُنا ہے اُس کو ہِرن دَشت بھر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے دِن کو اُسے تِتلیاں ستاتی ہیں
سُنا ہے رات کو جُگنو ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے رات سے بڑھ کر ہیں کاکلیں اُس کی
سُنا ہے شام کو سائے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کی سیہ چشمگی قیامت ہے
سو اُس کو سُرمہ فروش آہ بھر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کے لبوں پہ گُلاب جلتے ہیں
سو ہم بہار پہ اِلزام دھر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے آئینہ تمثال ہے جبیں اُس کی
جو سادہ دِل ہیں اُسے بَن سنور کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے جب سے حمائل ہیں اُس کی گردن میں
مزاج اور ہی لعل و گوہر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کے بدن کی تراش ایسی ہے
کہ پھول اپنی قبائیں کَتر کے دیکھتے ہیں

بس اِک نِگاہ سے لُٹتا ہے کافلہ دِل کا
سو رہروانِ تمنا بھی ڈر کے دیکھتے ہیں

سُنا ہے اُس کے شبستاں سے متصل ہے بہشت
مکیں اُدھر کی بھی جلوے اِدھر کے دیکھتے ہیں

رُکے تو گردشیں اُس کا طواف کرتی ہیں
چلے تو اُس کو زمانے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

کِسے نصیب کہ بے پیراہن اُسے دیکھے
کبھی کبھی در و دیوار گھر کے دیکھتے ہیں

کہانیاں ہی سہی ، سب مُبالغے ہی سہی
اگر وہ خواب ہے ، تعبیر کر کے دیکھتے ہیں

اب اُس کے شہر میں ٹھہریں کہ کُوچ کر جائیں
فراز آؤ ستارے سفر کے دیکھتے ہیں

sunaa hai log use aankh bhar ke dekhte hain
so us ke shahr mein kuchh din Thehr ke dekhte hain

sunaa hai rabt hai usko Kharaab haalon se
so apne aap ko barbaad karke dekhte hain

sunaa hai dard kii gaahak hai chashm-e-naazuk uskii
so ham bhii uskii galii se guzar kar dekhte hain

sunaa hai usko bhii hai sheir-o-shaaiirii se sharf
soham bhii maujzay apne hunar ke dekhte hain

sunaa hai bole to baaton se phuul jharte hain
ye baat hai to chal baat kar ke dekhte hain

sunaa hai raat use chaand taktaa rehtaa hai
sitaare baam-e-falak se utar kar dekhte hain

sunaa hai hashr hain uskii Ghazaal sii aankhein
sunaa hai usko hiran dasht bhar ke dekhte hai.n

sunaa hai din ko use titliyaan sataatii hain
sunaa hai raat ko jugnuu Thehr ke dekhte hain

sunaa hai uskii siyaah chashmagii qayaamat hai
so usko surmaafarosh aankh bhar ke dekhte hain

sunaa hai uske labon se gulaab jalate hai.n
so ham pahaarh pe ilzaam dhar ke dekhte hain

sunaa hai aaiinaa tamasal hai jabiin uski
jo saadaa dil hain ban-savar ke dekhte hain

sunaa hai uske badan ke taraash aise hain
ke phuul apnii qabaaein katar ke dekhte hain

sunaa hai uskii shabistaan se muttasil hai bahisht
makeen udhar ke bhii jalve idhar ke dekhte hai.n

ruke to gardish uskaa tavaaf kartii hai
chale to usko zamaane Thehr ke dekhte hain

mubaalaGe hii sahii, sab kahaaniyaa.N hiin sahii
agar vo Khvaab hai to taabiir kar ke dekhte hain

ab usake shehr mein Thehrein ke kuch kar jaaeiN
"Faraz" aao sitaare safar ke dekhte hai.n

Your rating: None Average: 4.4 (20 votes)

Comments

Guest Author's picture

its realy heart touching

its realy heart touching awesomee........
boht aaalaaaaaaaaaaa.................gud job