Verses

آنکھوں میں جل رہا ہے کیوں بجھتا نہیں دھواں
اٹھتا تو ہے گھٹا سا ،برستا نہیں دھواں

چولہے نہیں جلائے یا بستی ہی جل گئی
کچھ روز ہوگئے ہیں ،اب اٹھتا نہیں دھواں

آنکھوں سے پونچھنے سے لگا آنچ کا پتا
یوں چہرہ پھیر لینے سے چھپتا نہیں دھواں

آنکھوں سے آنسوؤں کے مراسم پرانے ہیں
مہماں یہ گھر میں آئیں تو چھبتا نہیں دھواں

Author

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer