ایک سیاہ بشارت والے ڈر کے ساتھ گزاری/rafiq sandeelvi

Verses

ایک سیاہ بشارت والے ڈر کے ساتھ گزاری
میں نے پہاڑ کے اک درے میں ساری رات گزاری

پہلے آنکھ کی شہ رگ کاٹی اور اس فعل کے پیچھے
اک تاریک سرنگ سے میں نے اپنی ذات گزاری

اس برکھا میں بھورے رنگ کی مٹی نے آ گھیرا
سرخ غبار کے چو رستے میں یہ برسات گزاری

رفیق سندیلوی