سنہری اونٹ ہم نے لے لیا تھا/rafiq sandeelvi

Verses

سنہری اونٹ ہم نے لے لیا تھا
مگر اس سے زیادہ خوں بہا تھا

ڈرامہ ہم نے وہ دیکھا کھ جس کا
ہزاروں سال کا دورانیہ تھا

پسِ کہسار خیمے تھے نہ سائے
اب آنکھیں تھیں ہوا تھی اور کیا تھا

جمی تھی دھوپ سطحِ آئنہ پر
اور اس کا عکس چھاؤں سے اٹا تھا

مچی تھیں میری آنکھیں اور منہ پر
کوئی انگور کا گچھا جھکا تھا

رفیق سندیلوی