Verses

معصومیت بھی ہو، ہنسی بے ساختہ بھی ہو
اس عہدِ گمشدہ سے کوئی رابطہ بھی ہو

مایوسیوں کے اندھے گھنے جنگلوں کے بیچ
امید کی کرن کا کوئی راستہ بھی ہو

آنکھوں میں خواب، ہونٹوں پہ لے کر دعا کے پھول
اپنے خدا سے کوئی مجھے مانگتا بھی ہو

خوشیاں ہوں ہمرکاب سدا میرے بعد بھی
میری طرح سے کوئی اسے چاہتا بھی ہو

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer