کسی آزمائش و امتحاں میں پڑا رہا/rafiq sandeelvi

Verses

کسی آزمائش و امتحاں میں پڑا رہا
میں سیاہیء شب ِ خاکداں میں پڑا رہا

میں کہ علم ِ غیب نہ جانتا تھا مگر یہ دل
کسی آب ِ کشف ِ رواں دواں میں پڑا رہا

کوئی سالمہ تھا جنون کا مرا خواب بھی
سو اسی لئے مری چشم ِ جاں میں پڑا رہا

مری شش جہات میں کوئی آخری حد نہ تھی
میں وسیع تھا، سر ِ لا مکاں میں پڑا رہا

رفیق سندیلوی