کمر سے بوجھ قبرستان کا اُترے کسی دن/rafiq sandeelvi

Verses

کمر سے بوجھ قبرستان کا اُترے کسی دن
کہ اب چھلکا مری پہچان کا اُترے کسی دن

کبھی اترا نہیں جو مسندِ آبِ رواں سے
زمیں پر پاؤں اس انسان کا اُترے کسی دن

کبھی دروازہء مرگِ بدن سے میں بھی گزروں
مرے سر سے بھی صدقہ جان کا اُترے کسی دن

کسی دن جفت ساعت میں دُعا کا ہاتھ تھامے
ہیولا سا مرے مہمان کا اُترے کسی دن

نکل آئے کبھی پھر بیچ میں سے خاک چہرہ
بنفشی رنگ میرے دھیان کا اُترے کسی دن

کبھی میں جذب کے عالم میں ہو جاؤں برہنہ
لبادہ پھر مرے وجدان کا اُترے کسی دن

رفیق سندیلوی