Verses

ہوش آتے ہی محو ہوگئے ہم
جب آنکھ کھُلی تو سو گئے ہم

پیری میں جواں ہوگئے ہم
جب صبح ہوئی تو سوگئے ہم

راحت سے عدم میں ہوگئے ہم
منزل پہ پہنچ کے سو گئے ہم

اُس بزم میں دل نے ساتھ چھوڑا
ایک آئے وہاں سے دو گئے ہم

کافر کہیں ہم کو یا مسلماں
اب ہو گئے جس کے ہوگئے ہم

جب زلف کی بو سُنگھائی تم نے
دیوانے تمہارے ہو گئے ہم

اب روئے گا ہم کو اک زمانہ
اگلوں کو جہاں میں ر و گئے ہم

محفل سے تری ملا یہ ہم کو
دل اپنی گرہ سے کھو گئے ہم

دل لینے کی تم کو آرزو تھی
اب جان سے اپنی لو گئے ہم

کل آئے جو وہ کہیں سے اے داغ
آج اُن کے سلام کو گئے ہم

Author

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer