ہونے کا خدشہ

Verses

ہونے کا خدشہ

ڈرو کہ سب خاکروب ہاتھوں میں گرد لے کر
گلاب ہاتھوں،بہار چہروں کو ڈھونڈتے ہیں
ڈرو کہ مکتب کے راستے پر
جلوس ناخواندگاں کتابوں کو برچھیوں میں پرو رہا ہے
تمام بچوں کو خندقوں میں چھپا کے مکتب کے سب معلم
نئی کتابوں میں اقتباس محافظت کو تلاش کرنے میں منہمک ہیں
ڈرو کہ پکی حویلیوں کو اکھاڑ دینے کا عزم لے کر
ہزاروں خانہ بدوش تیشوں سے چوکھٹوں پر توانا ضربیں لگا رہے ہیں
ڈرو کہ اب اونٹ اپنی کروٹ بدل رہا ہے
RAFIQ SANDEELVI