Nazam

کیا خوب کربلا میں نبھائ حسین نے

Verses

کیا خوب کربلا میں نبھائ حسین نے

کیا خوب کربلا میں نبھائ حسین نے
نانا کے دیں کی لاج بچائ حسین نے

.یوں تو کربلا میں پیاسے لگے حسین.
مے معرفت کی سب کو پلائ حسین نے

یہ ادنی سا شاعر کیا ان کی شان لکھے؟؟؟
کس کس کی لاش نہ جا کے اٹھائ حسین نے

جان دے دو مت جھکو باطل کے سامنے
امت تلک کربلا سے یہ بات پہنچائ حسین نے

نیزے پہ چڑھ کے بھی تلاوت قرآن ہوئ
کیا یزيد کے سینے میں آگ لگائ حسین نے

سر کٹا کہ ازل تک امر وہ ہوۓ عثمان
کیسی ارفع کی کربلا میں کی کمائ حسین نے

Lab Pe Aati Hai Dua Banke Tamanna Meri

prayer lab pe aati hai dua by deeraf4444
[ vid eo:http://youtu.be/ffH5aS5d53U autoplay:0]

لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری
زندگی شمع کی صورت ہو خدایا میری

دور دنیا کا میرے دم سے اندھیرا ہو جاے
ہر جگہ میرے چمکنے سےاجالا ہو جاے

ہو میرے دم سے یونہی میرے وطن کی زینت
جس طرح پھول سے ہوتی ہے چمن کی زینت

زندگی ہو میری پروانے کی صورت یا رب
علم کی شمع سے ہو مجھ کو محبت یا رب

ہو میرا کام غریبوں کی حمایت کرنا
درد مندوں سے ضعیفوں سے محبت کرنا

میرے اللہ برائی سے بچانا مجھ کو
نیک جو راہ ہو اس راہ پہ چلانا مجھ کو

Lab pe aati hai dua ban kay tamana meri
Zindagi sham’a key surat ho Khudaya meri.

Dur dunya ka maray dam say andheera ho jaye!
Har jagah meray chamaknay say ujala ho jaye!

Ho maray dam say younhi meray watan key zeenat
Jis tarah phool say hoti hai chaman ki zenat.

Zindgi hoo maray parwanay key surat Ya Rab!
Ilm ki sham’a say ho mujko muhabat Ya Rub!

Ho mara kaam ghareeboon key himayat kerna
Dard mandoon say za’ieefoon say muhabbat karna.

Maray Allah! burai say bachana mujhko
Naik jo rah hoo us raah pay chalana mujh ko.

Lub pay aati hai dua baan key tamana mayri
Zindagee shama ki surat ho Khudaya meree.

Laher laher laherati haien

Verses

Transcreation of urdu on English
Laher laher laherati haien
Nazer nazer takrati haien
Raat ki rani ,mahek failaker
Pel pel moatter karti haien
Transcreation of urdu into English
Wave each whirl dance
Sight each meet smile
Spread fragrance, night queen
Bathed in fragrance moment each .
Dabir Ahmed shaikh

Nahi

Verses

Trenscreation of Urdu poem in to English
Nahi
Payas haie ke bujhti hi nahe
Aas haie ke tooti hi nahe
Dara haie ke rokta hi nahi
Dawa haie k milti h nahie
Dabir Ahmed

Never
Thirst quenches never
Expectation ends never
Pain ceases not
Medicine available not

Khawab dekhny waly

Verses

Nazm.....

Khawab Dekhny waly

Khawab Dekh baithy hain

Ab ....Aye mery YUSUF kuch

Imtehan......Tera Bhi?????

Khawab dykh Baithy hain

Verses

Khawab dekhny waly

Khawab dekh Baithy hain

Ab aye mery YUSUF kuch

Imtehan tera bhi .....

ashfaque qureshi

Verses

hai aabido.n ko ta'at-o-tajariid kii Khushii
aur zaahido.n ko zuhad kii tamahiid kii Khushii
ri.nd aashiqo.n ko hai ka_ii ummiid kii Khushii
kuchh dil-baro.n ke val kii kuchh diid kii Khushii

[aabid=devotee; ta'at=devotion; tajariid=solitude]
[zaahid=preacher; zuhad kii tamaheed=start of religious talk]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

pichhale pahar se uTh ke nahaane kii dhuum hai
shiir-o-shakar sivayyaa.N pakaane kii dhuum hai
piir-o-javaan ko nema'te.n khaane kii dhuum hai
la.Dako ko iid-gaah ke jaane kii dhuum hai

[piir=old; nema't=bounty]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

ko_ii to mast phirataa hai jaam-e-sharab se
ko_ii pukarataa hai ke chhuuTe azaab se
kallaa kisii kaa phuulaa hai laDDuu kii chaab se
chaTakaare.n jii me.n bharate hai.n naan-o-kabaab se

[azaab=agony; kallaa=cheek]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

kyaa hi muaanqe kii machii hai ulaT palaT
milate hai.n dau.D dau.D ke baaham jhapaT jhapaT
phirate hai.n dil-baro.n ke bhii galiyo.n me.n Gat ke Gat
aashiq maze u.Daate hai.n har dam lipaT lipaT

[muaaniq=embrace; GaT=crowd]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

kaajal hinaa Gazab masii-o-paan kii dha.Dii
pishavaaze.n surKh sausanii laahii kii phul-jha.Dii
kurtii kabhii dikhaa kabhii angiyaa kasii ka.Dii
kah 'iid iid' luuTen hai.n dil ko gha.dii gha.Dii

[pishwaaz=ladies' skirt]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

roze kii Khushkiyo.n se jo hai.n zard zard gaal
Khush ho gaye vo dekhate hii iid kaa hilaal
poshaake.n tan me.n zard, sunaharii safed laal
dil kyaa ke ha.Ns rahaa hai pa.Daa tan ka baal baal

[roze=fastings; hilaal=crescent moon of Eid; poshaak=clothes]

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

jo jo ke un ke husn kii rakhate hai.n dil se chaah
jaate hai.n un ke saath taa baa-iid-gaah
topo.n ke shor aur dogaano.n kii rasm-o-raah
mayaane, khilone, sair, maze, aish, vaah-vaah

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

aisii na shab-e-baraat na baqriid kii Khushii
jaisii har ek dil me.n hai is iid kii Khushii

اک بات سمجھ نہیں آتی

Verses

اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں آنکھوں میں بس
ایک ہی چہرہ رہتا ہے؟
کیوں دل میں بس
ایک ہی صورت بستی ہے؟
کیوں اسکی یاد اچانک
سوچوں کو جنگل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں کچھ نہ ہونے کا
ہر پل احساس رہتا ہے؟
کیوں بہت دور ہوتا ہے کوئی مگرپھر بھی
دل کے آس پاس رہتا ہے؟
کیوں میری ہر بات ادھوری رہتی ہے؟
کیوں وہ ہر بات مکمل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟
کیوں من اسکی باتوں پہ
امید کا اک جہاں بساتا ہے؟
کیوں دل کے خالی کینوس پر
تصویر اسکی بناتا ہے؟
وہ میرا نہیں ہے‘ وہ میرا نہیں ہے
کیوں دماغ کی اس تکرار کو
دل کی آنکھ اوجھل کر دیتی ہے؟
اک بات سمجھ نہیں آتی
کیوں محبت پاگل کر دیتی ہے؟

سواری اُونٹ کی ہے/rafiq sandeelvi

Verses

rafiq sandeelvi /سواری اُونٹ کی ہے

سواری اُونٹ کی ہے

اَور مَیں شہر شکستہ کی
کسی سنساں گلی میںَ سرجھکائے
ہاتھ میں بد رنگ چمڑے کی مہاریں تھام کر
اُس گھر کی جانب جا رہا ہوں
جس کی چوکھٹ پر
ہزاروں سال سے
اِک غم زَدہ عورت
مرے وعدے کی رسّی
ریشۂدل سے بنی
مضبوط رسّی سے بندھی ہے
آنسوؤں سے تر نگاہوں میں
کسی کہنہ ستارے کی چمک لے کر
مرے خاکستری ملبوس کی
مخصوص خوشبو سونگھنے کو
اَوربھورے اُو نٹ کی
دُکھ سے لبالب بَلبلاہَٹ
سننے کو تیار بیٹھی ہے

وُ ہی سیلن زدہ اُوطاق کا گوشہ
جہاں مَیں ایک شب اُس کو
لرَزتے‘سَنسناتے‘زہر والے
چوبی تیروں کی گھنی بارش میں
بے بس اور اکیلا چھوڑ آیا تھا
مجھے سب یاد ہے قصّہ
برس کراَبر بالکل تھم چکا تھا
اوِر خلا میں چاند
یوں لگتا تھا جیسے
تخت پر نو عمر شہزادہ ہو کوئی
یوں ہَوا چہرے کو مَس کر کے گزرتی تھی
کہ جیسے ریشمیں کپڑاہو کوئی
اپنے ٹھندے اورگیلے خول کے اَندر
گلی سوئی ہوئی تھی
دَم بہ خوُ د سارے مکاں
ایسے نظر آتے تھے
جیسے نرم اور باریک کاغذ کے بنے ہوں
موم کے تَرشے ہوئے ہوں
اِک بڑی تصویر میں
جیسے اَزل سے ایستادہ ہوں
وُ ہی سیلن زدہ اُوطاق کا گوشہ
جہاں مہتاب کی بُرّاق کرنیں
اُس کے لانبے اورکھلے بالوں میں اُڑسے
تازہ تر انجیر کے پتے روشن کر رہی تھیں
اُس کی گہری گندمِیں کُہنی کا بوسہ یاد ہے مجھ کو
نہیں بھولا ابھی تک
سارا قصّہ یاد ہے مجھ کو
اُسی شب
مَیں نے جب اِک لمحۂ پُرسوز میں
تلوار‘ اُس کے پاؤں میں رکھ دی تھی
اور پھریہ کہا تھا:
’’میرا وعدہ ہے
یہ میرا جسم اوراِس جسم کی حاکم
یہ میری باطنی طاقت
قیامت اوِر
قیامت سے بھی آگے
سرحدِامکاں سے لا امکاں تلک
تیری وفا کا ساتھ دے گی
وقت سُنتا ہے
گواہی کے لئے
آکاش پر یہ چاند
قدموں میں پڑی یہ تیغ
اوِر بالوں میں یہ اِنجیر کا پتّا ہی کافی ہے

خداوندا‘وہ کیسا مرحلہ تھا
اَب یہ کیسا مرحلہ ہے!
ایک سُنسانی کا عالم ہے
گلی چپ ہے
کسی ذی روح کی آہٹ نہیں آتی
یہ کیسی ساعتِ منحوس ہے
جس میں ابھی تک
کوئی ننھاسا پرندہ یا پتنگا
یا کوئی موہوم چیونٹی ہی نہیں گزری
کسی بھی مردوزَن کی
مَیں نے صورت ہی نہیں دیکھی
سواری اُونٹ کی ہے
اَور مَیں شہرشکستہ کی
کسی سنساں گلی میں سَرجھکائے
ہاتھ میں بد رنگ چمڑے کی مہاریں تھام کر
اُس گھر کی جانب جا رہا ہوں
یا کسی محشر
خموشی کے کسی محشر کی جانب جا رہا ہوں
ہچکیوں اوِر سسکیوں کے بعد کا محشر
کوئی منظر
کوئی منظرکہ جس میں اِک گلی ہے
ایک بھورا اُونٹ ہے
اوِر ایک بُزدِل شخص کی ڈِھیلی رفاقت ہے
سفر نا مختتم
جیسے اَبد تک کی کوئی لمبی مسافت ہے!

سواری اُونٹ کی
یا کاٹھ کے اَعصاب کی ہے
آزمائش اِک انوکھے خواب کی ہے
پتلیاں ساکت ہیں
سایہ اُونٹ کا ہلتا نہیں
آئینۂ آثار میں
ساری شبیہیں گم ہوئی ہیں
اُس کے ہونے کا نشاں ملتا نہیں
کب سے گلی میں ہوں
کہاں ہے وُ ہ مری پیاری
مری سیلن زدہ اُوطاق والی
وُ ہ سُریلی گھنٹیوں والی
زمینوں ‘پانیوں اور اَنفَس وآفاق والی
کس قدر آنکھوں نے کوشش کی
مگر رونا نہیںآتا
سبب کیا ہے
گلی کا آخری کونا نہیں آتا
گلی کو حکم ہو‘ اَب ختم ہو جائے
مَیں بھُورے اور بو ڑھے اُو نٹ پر بیٹھے ہوئے
پیری کے دِن گنتا ہوں
شاید اِس گلی میں رہنے والا
کوئی اُس کے عہد کا زَنبوُ ر ہی گزرے
مَیں اُس کی بارگہ میں
دست بستہ‘ معذرت کی بھیک مانگوں
سَر ندامت سے جھکاؤں
اَوراُس زَنبوُ ر کے صدقے
کسی دِن اَپنے بوڑھے جسم کو
اوِر اُونٹ کو لے کر
گلی کی آخری حد پار کر جاؤں
رفیق سندیلوی

یہ عجیب شہر ِنگار ہے

Verses

کوئی ساز ہے نہ صدا کوئی
کوئی نازنیں نہ ادا کوئی
کہیں دھوپ ہے نہ گھٹا کوئی
کوئی ہمسفر نہ جدا کوئی
کوئی ہجر ہے نہ جفا کوئی
یہ عجیب شہر ِنگار ہے

نہ وہ داغِ دل نہ وہ گھاؤہے
نہ سنگھار ہے نہ بناؤہے
شبِ وصل ہے نہ الاؤ ہے
کہیں بحر ہے نہ بہاؤ ہے
نہ عدو کوئی نہ لگاؤ ہے
نہ وہ لشکروں کا پڑاؤ ہے
یہ عجیب شہر ِنگار ہے

کہیں شاخ ہے تو ثمر نہیں
کہیں آنکھ ہے تو نظر نہیں
کہیں ہاتھ ہے تو ہُنر نہیں
کہیں بات ہے تو اثر نہیں
کہیں راستے میں شجر نہیں
کسی چارہ گر کو خبر نہیں
یہ عجیب شہر ِنگار ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
راجہ اسحٰق