Sad Poetry

حدیثِ عشق بھلا کیا کرے بیاں کوئی

Verses

حدیثِ عشق بھلا کیا کرے بیاں کوئی
نہیں فسانہ ء الفت کا رازداں کوئی
تڑپ سے برق کی ہوتا ہے صاف اب ظاہر
بنا ہے آج گلستاں میں آشیاں کوئی
مدھر سروں میں سنو آبشار کا نغمہ
سنا رہا ہے محبت کی داستاں کوئی
قفس میں بلبلِ شیریں نوا رہے کیونکر؟
نہ ہم سخن ہے وہاں اور نہ ہم زباں کوئی
گراں خزانہ ء خسرو سے جذبہ ء الفت
نہ اس سے بڑھ کے ملا گنجِ شائیگاں کوئی
جہاں پہ ہو نہ سکی حکم راں کبھی ظلمت
سیاہ رات میں اختر ہے ضوفشاں کوئی
چمن میں روز ہے کثرت سے آمدِ گل چیں
یہاں تو شاذ ہی آتا ہے باغ باں کوئی
جہاں میں آج بھی ہے راہِ کہکشاں موجود
نہ گامزن ہے مگر اس پہ کارواں کوئی
سنے جو پھولؔ کے اشعار، بول اٹھے غنچے
ہوا پھر آج ہے گلشن میں نغمہ خواں کوئی
(تنویرپھولؔ کے مجموعہ ء کلام "دھواں دھواں چہرے"مطبوعہ اپریل 1999 ء سے ماخوذ
http://en.wikipedia.org/wiki/Tanwir_Phool

کیا خوب کربلا میں نبھائ حسین نے

Verses

کیا خوب کربلا میں نبھائ حسین نے

کیا خوب کربلا میں نبھائ حسین نے
نانا کے دیں کی لاج بچائ حسین نے

.یوں تو کربلا میں پیاسے لگے حسین.
مے معرفت کی سب کو پلائ حسین نے

یہ ادنی سا شاعر کیا ان کی شان لکھے؟؟؟
کس کس کی لاش نہ جا کے اٹھائ حسین نے

جان دے دو مت جھکو باطل کے سامنے
امت تلک کربلا سے یہ بات پہنچائ حسین نے

نیزے پہ چڑھ کے بھی تلاوت قرآن ہوئ
کیا یزيد کے سینے میں آگ لگائ حسین نے

سر کٹا کہ ازل تک امر وہ ہوۓ عثمان
کیسی ارفع کی کربلا میں کی کمائ حسین نے

بے موت ہی مر جائيں گے کسی دن

Verses

بے موت ہی مر جائيں گے کسی دن

ہم تم کو یوں آزمائيں گے کسی دن
بے موت ہی مر جائيں گے کسی دن

یوں تو آوارگی کا سفر جاری ہے
سوچا ہےگھر جائيں گے کسی دن

ہر قدم پر گناہ کرنے والے سن لیں
گھڑے پاپ کے بھر جائيں گے کسی دن

اگر ظالم تیری بے رخی جاری رہی
راہ میں تجھ سے بچھڑ جائيں گے کسی دن

گر دیکھنا ہے معجزہ محبت دنیا کو
سفینے ڈوبتے بھی ابھر جائيں گے کسی دن

عثمان کو آزمانے والے سن لیں اب
ہم ہر حد سے گزر جائيں گے کسی دن

برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا

Verses

برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا
اب ذہن ميں نہيں ہے پر نام تھا بھلا سا

ابرو کھنچے کھنچے سے آنکھيں جھکی جھکی سی
باتيں رکی رکی سی لہجہ تھکا تھکا سا

الفاظ تھے کہ جگنو آواز کے سفر ميں تھے
بن جائے جنگلوں ميں جس طرح راستہ سا

خوابوں ميں خواب اُسکے يادوں ميں ياد اُسکی
نيندوں ميں گھل گيا ہو جيسے رَتجگا سا

پہلے بھی لوگ آئے کتنے ہی زندگی ميں
وہ ہر طرح سے ليکن اوروں سے تھا جدا سا

اگلی محبتوں نے وہ نا مرادياں ديں
تازہ رفاقتوں سے دل تھا ڈرا ڈرا سا

کچھ يہ کہ مدتوں سے ہم بھی نہيں تھے روئے
کچھ زہر ميں بُجھا تھا احباب کا دلاسا

پھر يوں ہوا کے ساون آنکھوں ميں آ بسے تھے
پھر يوں ہوا کہ جيسے دل بھی تھا آبلہ سا

اب سچ کہيں تو يارو ہم کو خبر نہيں تھی
بن جائے گا قيامت اک واقع ذرا سا

تيور تھے بے رُخی کے انداز دوستی کے
وہ اجنبی تھا ليکن لگتا تھا آشنا سا

ہم دشت تھے کہ دريا ہم زہر تھے کہ امرت
ناحق تھا زعم ہم کو جب وہ نہيں تھا پياسا

ہم نے بھی اُس کو ديکھا کل شام اتفاقا
اپنا بھی حال ہے اب لوگو فراز کا سا

Gham_e_Hayat ka jhgada mita rha hy koi

Verses

Gham_e_Hayat ka jhgada mita rha hy koi

Chly aao k dunia sy ja rha hy koi

Koi azal sy khe do k ruk jay do ghadi

Suna hy k any ka wada nibha rha hy koi

Wo ess naz sy bethy hain lassh k pass

Jaesy rothy huy ko mna rha hy koi

Plt kr na aa jay phr sans nbzon main

Itny haseen hathon sy mayet sja rha hy koi

Gham_e_Hayat ka jhgada mita rha hy koi

Verses

Gham_e_Hayat ka jhgada mita rha hy koi

Chly aao k dunia sy ja rha hy koi

Koi azal sy khe do k ruk jay do ghadi

Suna hy k any ka wada nibha rha hy koi

Wo ess naz sy bethy hain lassh k pass

Jaesy rothy huy ko mna rha hy koi

Plt kr na aa jay phr sans nbzon main

Itny haseen hathon sy mayet sja rha hy koi

Koi ilhaam hai na koi nazool....

Verses

کوئ الہام ہے نہ کوئ نزُول
بند کیوں ہو گیا ہے بابِ قبُول ۔
بے ثمر کیوں ہوا ہے دشتِ وجُود
کوئ پتہ نہ خار ہے نہ ببُول ۔
بربطِ دل پے کوئ نَے ہے نہ لَے
جم گئ ہے ہر ایک ساذ پہ دھُول ۔
ٹُوٹتی جا رہی ہے ذیست کی ڈور
کھینچتا جا رہا عشق بھی طُول ۔
موسمِ ہجر خاک پھینک گیا
کشتِ ہستی میں ہیں خزاں کے پھوُل ۔
محفلِِ میکشاں سلامت باد
جسمیں ہوتی نہیں ہے کوئ بھُول ۔
مر مِٹے جس کو بھی کبھی چاہا
عشق میں مُنفرِد ہے اپنا اصُول ۔ محبوب صدیقی ۔

ham apni khataon kh iqrar nahin kartai duniya ki mohabbat po iarar nahin kartai

Verses

ham ap ni khatan kh iqrar nahin kartai
duniya ki mohabbat paih israr nahin kartai
ghaflat main jv ham soai khoee hai jawani bhee
peeri jo abhi aiyee inkar nahin kartai
hm mahvai tamasha hain kartain hain tamasha hambh
bhatkai saiy musafir kh kirdar nahin kartai
mana kai hai dil toota mahman ka dil rakhlo
ashkon sai tawazo to ghamkhar nahin kartai
gulshan aim agar aaee pat jharh hai to rahnai do
veerana hai veerana hai veerana gulzar nahin karai
karti hai hokoomat jv kartai hain inayat voh
mohtaj aur muflis paih aazar nahin kartai
hamsahanasheeon ka sara bhe nashaiman hai
dolat bheeagar aa aiy ghar baar nahin kartai
tasweerai mohabbat to bas dil main rahi roshan
deevanain hain ham aisay deedarnahin artai
voh apni jafaon ki tashheer kiya kartai
ham apni vafaon ka parchar nahin kartai
maidan amal main ab parwaz uta jaow
hal sarai masail o afkaar nahin kartai

mujhe ab khabon se dar lagta hai

Verses

mujhe ab khabon se dar lagta hai, hasin chehron se dar lagta hai, makhmalin baton se dar lagta hai, bhirh main tanha hoti hun tanhai se dar lagta hai, jo sath chorh jate hain un logon ki yadon se dar lagta hai, jo pori nahi hosaktin dil ki un khowahishon se dar lagta hai bhot pyar se jo sapne sajaye the un kanch k sapno se dar lagta hai, kal tak jo hasin lagte the aj un ehsason, jazbaton se dar lagta hai kisi ki yad main bhot dard saha ansowon se roye raton ko jage ab sochon bhi to dar lagta hai, phele phel sapne koh-e-noor se, ujhle motiyon se, meethe itne misri se shafaaf badalon se, par chone pe sapno k badal hath na ayen to dar lagta hai toth gaye jo kanch k sapne ab ankhon main chubh te hain, karna den kahin khon dil ka un sapno se dar lagta hai, kisi k pas hone se, kisi k sath chalne se kiske khub dekhne se dar lagta hai, tanha rehne se nahi , kisi k tanha karjane se dar lagta hai, kisi ke sath chalte chalte dor talak jaye aur wo manzil ane se phele sath chorh jaye to dar lagta hai, bhot se dekhe khab dekhe the kisi ki chahat k, kisi k sat k, magar har khab chakna chor howa, zakhmin ankhin howin aur dard se dil dobh gaya, khowahishon ki khabon ki andheri galiyon se dar lagta hai, shayed isi liye ab mujhe khabon se dar lagta hai......