ان کے بغیر ہم جو گلستاں میں آ گئے

Verses

ان کے بغیر ہم جو گلستاں میں آ گئے
محسوس یہ ہوا کہ بیاباں میں آ گئے

تشہیر دل گرفتگی حُسن ہو گئی
آنسو چھلک کے چشمِ پشیماں میں آ گئے

ہم ترکِ ربط و ضبطِ محبت کے باوجود
سو بار کھنچ کے کوچۂ جاناں میں آ گئے

پھولوں کو راس آیا نہ جب عرصۂ بہار
گلشن سے ہٹ کے گوشۂ داماں میں آ گئے

ہر چند اہلِ ہوش تھے اربابِ زندگی
لکین فریبِِ گردش دوراں میں آ گئے

آیا مری زباں پر یکایک جو اُن کا نام
کس کس کے ہاتھ میرے گریباں میں آ گئے

چھپ کر نگاہِ شوق سے دل میں پناہ لی
دل میں نہ چُھپ سکے تو رگِ جاں میں آ گئے

تھے منتشر ازل میں جو ذرات کوئے دوست
انسان بن کے عالمِ امکاں میں آ گئے

جن کی ادا ادا میں ہیں رعنائیاں شکیل
اشعار بن کر وہ مرے دیواں میں آ گئے

مسافر کے راستے بدلتے رہے

Verses

مسافر کے راستے بدلتے رہے
مقدر میں چلنا تھا چلتے رہے

کوئی پھول سا ہاتھ کاندھے پہ تھا
میرے پاؤں شعلوں پہ چلتے رہے

میرے راستے میں اجالا رہا
دیے اُس کی آنکھوں میں جلتے رہے

وہ کیا تھا جسے ہم نے ٹھکرا دیا
مگر عمر بھر ہاتھ ملتے رہے

محبت ،عداوت ،وفا، بےرُخی
کرائے کے گھر تھے بدلتے رہے

سنا ہے اُنہیں بھی ہوا لگ گئی
ہواؤں کے جو رُخ بدلتے رہے

لپٹ کے چراغوں سے وہ سو گئے
جو پھولوں پہ کروٹ بدلتے رہے

Shaam Dekho Dhal Rahi Hai

shaam dekho dhal rahi hai
panchhi dekho ja rahe hai
tu bhi chal mere sang o jivan saathi

shaam dekho dhal rahi hai
panchhi dekho ja rahe hai
tu bhi chal mere sang o jivan saathi
shaam dekho dhal rahi hai

hai shaam ke anchal main, masti hai bheegi bheegi
aur de rahi hai dhadakan, aavaaz dheemi dheemi
aavaaz dheemi dheemi
tu bhi chal mere sang o jivan saathi
shaam dekho dhal

Dil Paagal Deewana Hai

dil paagal deewaana hain ye pyar karega - 3
ye kab dara hain duniya se jo ab darega
ye pyar mein dhadaka hain ye pyar se dhadakega - 2
ye kab dara hain duniya se jo ab darega
dil paagal deewaana hain ye pyar karega
ye kab dara hain duniya se jo ab darega

(dil takht-o-taaj ki parvaah nahi karta
rasm-o-riwaaz ki parvaah nahi karta) - 2
daulat se kharidoge to inkaar karega - 2
ye kab dara hain duniya se jo ab darega
dil paagal deewaana hain ye pyar karega
ye kab dara hain duniya se jo ab darega

Dheere Dheere Hua

Dheere Dheere Hua
Chupke Chupke Hua
Chori Chori Hua Yeh Dil
Tera Hua Tera Hua A Ha Ha Tera Hua
Hey Hey Hey O Ho Ho Ho
O O O O Aa Aa Aa Aaa
Dheere Dheere Hua
Chupke Chupke Hua
Chori Chori Hua Yeh Dil
Tera Hua Tera Hua A Ha A Tera Hua
Hey Hey Hey O Ho Ho Ho
O O O O Aa Aa Aa Aaa

Lagne Laga Hai Mujhe Aaj Kal

Bala:
lagne lagaa hai mujhe aaj kal
ke tum saaz chhedo main gaaoon ghazal
(mahsoos yun hotaa hai kyun
ke har pal main tere saath rahoon) -2

Anu:
lagne lagaa hai mujhe aaj kal
ke tum saaz chhedo main gaaoon ghazal
(mahsoos yun hotaa hai kyun
ke har pal main tere saath rahoon) -2

Bala:
lagne lagaa hai mujhe aaj kal

Anu:
kya.. kahti hai suno tanhaaiyaan
ye lene lagi rut angdaiyaan
udti huyee vaqt ki dhool se
chun le chalon rang har phool se

کعبے کی سمت جا کے مرا دھیان پھر گیا

Verses

کعبے کی سمت جا کے مرا دھیان پھر گیا
اُس بت کو دیکھتے ہی بس ایمان پھر گیا

تو وعدہ کرکے مجھ سے مری جان پھر گیا
حق سے پھرا جو قول سے انسان پھر گیا

الٹا ہوا نے پھیر دیا تیرِ یار کو
افسوس ہے کہ راہ سے مہمان پھر گیا

محشر میں داد خواہ جو اے دل نہ تُو ہوا
تو جان لے یہ ہاتھ سے میدان پھر گیا

چھپ کر کہاں گئے تھے وہ شب کو تیرے گھر
سو بار آ کے ان کا نگہبان پھر گیا

تھی گردشِ مژہ بھی ترے تیر کی شریک
برمے کی طرح سینے میں پیکان پھر گیا

رونق کچھ آ گئی جو پسینے سے موت کے
پانی ترے مریض پر اک آن پھر گیا

دیکھا اسے جو دور سے، اڑ کر مرا غبار
اُس شوخ شہسوار کے چوگان پھر گیا

گریہ نے ایک دم میں بنا دی وہ گھر کی شکل
میری نظر میں صاف بیابان پھر گیا

قاتل نے وقتِ ذبح لیا جب خدا کا نام
خنجر ہمارے حلق پر آسان پھر گیا

لائے تھے کوئے یار سے ہم داغ کو ابھی
لو موت اس کی آئی، یہ نادان پھر گیا

Zamane Ke Andaz

Zamane ke aandaz badley gaye
Naya raag hey saaz badley gaye

khudi ko gulami se aazaad kar
Jawano ko piro ka ustaad kar

Jigar se wahi teer phir paar kar
Tamana ko sino mey bedaar kar

Jawano ko sozey jigar baksh de
Mera husn meri nazaar baksh de

Pila de mujhe woh mey ke pyaale
Ki aati nahi fasle gul roz roz

woh mey jissey roshan zameer-e-hayat
woh mey jissey hey masti-e-qayanat

Zamane key aandaz .......

جستجو جس کی تھی اس کو تو نہ پایا ہم نے

Verses

جستجو جس کی تھی اس کو تو نہ پایا ہم نے
اس بہانے سے مگر دیکھ لی دنیا ہم نے

سب کا احوال وہی ہے جو ہمارا ہے آج
یہ الگ بات کہ شکوہ کیا تنہا ہم نے

خود پشیماں ہوئے اسے شرمندہ نہ کیا
عشق کی وضع کو کیا خوب نبھایا ہم نے

عمر بھر سچ ہی کہا سچ کے سوا کچھ نہ کہا
اجر کیا اس کا ملے گا یہ نہ سوچا ہم نے

کون سا قہر یہ آنکھوں پہ ہوا ہے نازل
ایک مدت سے کوئی خواب نہ دیکھا ہم نے