Khwabo Ko Sach Na Kar Du

khwabon ko sach na kar du ek raat aaisi de do - 2
jo umra bhar na bhule saugaat aaisi de do - 2

(mujhe dhak lo kesuon mein, tum banke pyaar barso)-2
tum banke pyaar barso
(do dil rahe na pyaase barsaat aaisi de do) - 2

(ye husn ka khazana ye mera khali daaman) - 2
ye mera khali daaman
shaahu ko maat kar de khairaat aaisi de do
khwabon ko sach na karadu ek raat aaisi de do -
jo umra bhar na bhule saugaat aaisi de do -2

وصال کا بھی کوئی اہتمام کر ڈالو

Verses

وصال کا بھی کوئی اہتمام کر ڈالو
محبتوں میں اب اتنا تو کام کر ڈالو

اب اپنے پاس کوئی شے نہیں لُٹانے کو
یہ چند سانسیں ہیں ، اِن کو تمام کر ڈالو

چلے تو جاؤ مگر وقت پر پلٹ آنا
کہیں نہ ایسا ہو، رستے میں شام کر ڈالو

بکھرنے لگتی ہیں سانسیں تمہارے لہجے سے
سمیٹنے کا اِنہیں انتظام کر ڈالو

متاعِ دل ہے تمہاری اگر یہ جاہ و حشم
تو تم وفا کو فقط میرے نام کر ڈالو

بھلا فضا میں کہاں تک اڑیں گی تعبیریں
اب ان پرندوں کو تم زیرِ دام کر ڈالو

Woh Subah Kabhi To Aayegi

wo subah kabhee to aayegee, wo subah kabhee to aayegee
in kaalee sadiyon ke sar se, jab raat kaa aanchal dhalakegaa
jab dukh ke baadal pighalenge, jab sukh kaa saagar chhalakegaa
jab anbar zoom ke naachegaa, jab dharatee nagmei gaayegee
wo subah kabhee to aayegee

jis subah kee khaatir jug jug se, hum sab mar mar kar jite hain
jis subah ke amariat kee boond mein, hum jahar ke pyaale pite hain
in bhookhee pyaasee ruhon par, yek din to karam faramaayegee
wo subah kabhee to aayegee

اُس دشت کو جانا ہے تو گھر بھول ہی جانا

Verses

اُس دشت کو جانا ہے تو گھر بھول ہی جانا
آنگن کا وہ تنہا سا شجر بھول ہی جانا

رکھو گے اسے یاد تو پھر جی نہ سکو گے
گو کام یہ مشکل ہے مگر بھول ہی جانا

دن کاٹیں گے کس طرح سے ، کیونکر یہ کٹے رات
جنگل میں ٹھکانہ ہے تو ڈر بھول ہی جانا

اک بار کا یہ کام نہیں، کام ہے دشوار
بہتر ہے اسے بارِدگر بھول ہی جانا

اب معجزے ہوتے ہی نہیں اپنے جہاں میں
چاہت کا فسوں ،اس کا اثر بھول ہی جانا

تم لاکھ کرو جتن، کٹے گا یہ بہرطور
اس شہر کو جانا ہے تو سَر بھول ہی جانا

کل شب کو اتر آیا تھا اس دھرتی پہ چندا
اک خواب تھا بس، خواب نگر بھول ہی جانا

ڈھونڈنے جس میں زندگی نکلی

Verses

ڈھونڈنے جس میں زندگی نکلی
وہ اس شخص کی گلی نکلی

تیرے لہجے میں کیا نہیں تھا
صرف سچ کی ذرا سی کمی نکلی

وہ جو لگتی تھی کانچ کی گڑیا
ضرب پڑنے پہ آہنی نکلی

اس حویلی میں شام ڈھلنے پر
ہر دریچے سےروشنی نکلی

وہ ہوا تو نہیں تھی لڑکی تھی
کس لیے اتنی سر پھری نکلی

وہ تیرے آسمان کا کیا کرتی
جس کی مٹی سے دوستی نکلی

Ai Chaandani Teri Chahaten

ai chaandani teri chaahaten dil se nahi chhoot raheen
saanson mein hai teri aarazu saansen nahi toot raheen
tu hai meri jaan-e-jahaan itana na bhool jaana
tere bina jaan-e-vafa jaaoon to jaaoon kahaan

chaahati ho tum kise ik baar bol do tum
kis ne hai tera dil liya itana to bata do tum
jaan-e-vafa jaan-e-vafa jeena kahaan ye to bata
hamdam meri qismat meri kis baat se rooth gayi

جی میں ہے یادِ رخ و زلفِ سیہ فام بہت

Verses

جی میں ہے یادِ رخ و زلفِ سیہ فام بہت
رونا آتا ہے مجھے ہرسحَر و شام بہت

دستِ صیّاد تلک بھی نہ میں پہنچا جیتا
بے قراری نے لیا مجھ کو تہِ دام بہت

ایک دو چشمک ادھر گردشِ ساغر کہ مدام
سر چڑھی رہتی ہے یہ گردشِ ایام بہت

دل خراشی و جگر چاکی و خون افشانی
ہوں تو ناکام پہ رہتے ہیں مجھے کام بہت

پھر نہ آئے جو ہوئے خاک میں جا آسودہ
غالباً زیرِ زمیں میر ہے آرام بہت

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer