فریب کھا کے بھی اک منزلِ قرار میں ہیں

Verses

فریب کھا کے بھی اک منزلِ قرار میں ہیں
وہ اہل ہجر کے آسیب اعتبار میں ہیں

زمین جن کے لئے بوجھ تھی وہ عرش مزاج
نہ جانے کون سے محور پہ کس مدار میں ہیں

پرانے درد، پرانی محبتوں کے گلاب
جہاں بھی ہیں خس و خاشاک کے حصار میں ہیں

نہ جانے کون سی آنکھیں وہ خواب دیکھیں گی
وہ ایک خواب کہ ہم جس کے انتظار میں ہیں

چراغ کون سے بجھنے ہیں کن کو رہنا ہے
یہ فیصلے ابھی اوروں کے اختیار میں ہیں

La La La Hi Re

La la la hi re, la la la hi re

La la la hi re, la la la hi re
La la la hi re, la la la hi re
Dil dhak dhak dhadka de doon tujhko
La la la hi re

La la la hi re, la la la hi re
Yeh cham cham karta tapta sona
La la la hi re

Aahista se lena kar doon ke manzoori
Na kuch bhi sincere hai na kuch bhi danger hai
Aaja le jaa re

Honth dekho lolly pop, gaalon pe khilte gulaab
Shape dekho madonna, roop dekho wah re wah

یہ گردبادِ تمنا میں گھومتے ہوئے دن

Verses

یہ گردبادِ تمنا میں گھومتے ہوئے دن
کہاں پہ جا کے رُکیں گے یہ بھاگتے ہوئے دن

غروب ہوتے گئے رات کے اندھیروں میں
نویدِ امن کے سورج کو ڈھونڈتے ہوئے دن

نجانے کون خلا کے یہ استعارے ہیں
تمہارے ہجر کی گلیوں میں گونجتے ہوئے دن

نہ آپ چلتے ، نہ دیتے ہیں راستہ ہم کو
تھکی تھکی سی یہ شامیں یہ اونگھتے ہوئے دن

پھر آج کیسے کٹے گی پہاڑ جیسی رات
گزر گیا ہے یہی بات سوچتے ہوئے دن

تمام عمر مرے ساتھ ساتھ چلتے رہے
تمہی کو ڈھونڈتے تم کو پکارتے ہوئے دن

ہر ایک رات جو تعمیر پھر سے ہوتی ہے
کٹے گا پھر وہی دیوار چاٹتے ہوئے دن

مرے قریب سے گزرے ہیں بار ہا امجد
کسی کے وصل کے وعدے کو دیکھتے ہوئے دن

Agar Mein Puchun Jawab Doge

Agar main poochhoon jawaab doge
dil kyon mera tadap rahaa hai
tere hi dil mein hai pyaar kuchh kuchh
mere bhi dil mein zaraa zaraa hai

Buraa na maano, to apane haathon
ye bikhari zulfein, sanvaar doon main
hasIn palakon ki chhaanv mein ab
ye saaraa jeevan guzaar doon main
ye dil ki baatein koi na sun le
sanam zamaanaa badaa buraa hai
Aagar main..

اعجاز ہے یہ تیری پریشاں نظری کا

Verses

اعجاز ہے یہ تیری پریشاں نظری کا
الزام نہ دھر عشق پہ شوریدہ سری کا

اس وقت میرے کلبۂ غم میں تیرا آنا
بھٹکا ہوُا جھونکا ہے نسیمِ سحری کا

تُجھ سے تیرے کوُچے کہ پتہ پوُچھ رہا ہوُں
اس وقت یہ عالم ہے میری بے خبری کا

یہ فرش، تیرے رقص سے جو گوُنج رہا ہے
ہے عرشِ معلّٰی میری عالی نظری کا

کُہرے میں تڑپتے ہوُئے اے صُبح کے تارے
احسان ہے شاعر پہ تیری چارہ گری کا

Paa Liya Hain Pyar Tera

Paa Liya Hain Pyar Tera Ab Nahin Khona
Ho Paa Liya Hain Pyar Tera Ab Nahin Khona
Oh Mere Sona Tum Mere Hona
Oh Mere Sona Tum Mere Hona
Paa Liya Hain Pyar Tera Ab Nahin Khona
Paa Liya Hain Pyar Tera Ab Nahin Khona
Oh Meri Sona Tum Meri Hona
Oh Meri Sona Tum Meri Hona

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer