Ajeeb Saaneha Mujh Par

ajeeb saaneha mujh par guzar gaya yaaro
main apne saaye se kal raat dar gaya yaaro

har ek naqsh tamanna ka ho gaya dhundhala
har ek zakm mere dil ka bhar gaya yaaro

bhatak rahi thi jo kashti vo gaqr-e-aab hui
chadha hua tha jo dariya utar gaya yaaro

vo kaun tha vo kaha ka tha kya hua tha use
suna hai aaj koi shaks mar gaya yaaro

Aja Saare Ralke

Khil gayi re khil gayi oy meri jaan yeh duniya khil gayi re
Mil gayi re mil gayi teri muskaan tujhe to mil gayi re

Le jaayien ge ladki karo tiyaar abhi hum le jayien ge
Na ji na humko nahi aitbaar yu kaise le jayien ge

Shodo sab takrar ke jason manaliye
Aajo saare ralke ho bhangra, aajo saare ralke ho bhangra paaliye
Ajo saare ralke ho bhangra paaliye

Le jaayien ge ladki karo tiyaar abhi hum le jayien ge
Na ji na humko nahi aitbaar yu kaise le jayien ge

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

Verses

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
وہی یعنی وعدہ نباہ کا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہ جو لطف مجھ پہ تھے پیش تر، وہ کرم کہ تھا میرے حال پر
مجھے سب یاد ہے ذرا ذرا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کبھی بیٹھے جو سب میں روبرو ، تو اشاروں ہی میں گفتگو
وہ بیان شوق کا برملا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

ہوئے اتفاق سے گر بہم ، تو وفا جتانے کو دم بہ دم
گلہ ملامتِ اقرباء ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کوئی ایسی بات ہوئی اگر کہ تمہارے جی کو بری لگی
تو بیاں سے پہلے ہی بھولنا ،تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کبھی ہم میں تم میں بھی چاہ تھی ، کبھی ہم میں تم میں بھی راہ تھی
کبھی ہم بھی تم بھی تھے آشنا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

جسے آپ گنتے تھے آشنا ، جسے آپ کہتے تھے باوفا
میں وہی ہوں مومنِ مبتلا ، تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

مر گیا میں ملا نہ یار افسوس

Verses

مر گیا میں ملا نہ یار افسوس
آہ افسوس صد ہزار افسوس

یوں گنواتا ہے دل کوئی مجھ کو
یہی آتا ہے بار بار افسوس

قتل گر تُو ہمیں کرے گا خوشی
یہ توقع ہےتجھ سے یار افسوس

رخصتِ سیرِ باغ تک نہ ہوئی
یوں ہی جاتی رہی بہار افسوس

خوب بد عہد تُو نہ مل لیکن
میرے تیرے تھا یہ قرار افسوس

پتھر بنا دیا مجھے رونے نہیں دیا

Verses

پتھر بنا دیا مجھے رونے نہیں دیا

دامن بھی تیرے غم میں بھگونے نہیں دیا

تنہائیاں تمہارا پتہ پوچھتی رہیں

شب بھر تمہاری یاد نے سونے نہیں دیا

آنکھوں میں آکے بیٹھ گئی اشکوں کی لہر

پلکوں پہ کوئی خواب پرونے نہیں دیا

دل کو تمہارے نام کے آنسو عزیز تھے

دنیا کا کوئی درد سمونے نہیں دیا

ناصر یوں اُسکی یاد چلی ہاتھ تھام کے

میلے میں اِس جہان کے کھونے نہیں دیا

پتھر بنا دیا مجھے رونے نہیں دیا

دامن بھی تیرے غم میں بھگونے نہیں دیا

دیکھ لئے ہیں، اپنے کیا بیگانے کیا

Verses

دیکھ لئے ہیں، اپنے کیا بیگانے کیا
سینت کے رکھیں، اور اب خواب سہانے کیا

دیکھو آنکھ جما کر، مکر کے مکڑے نے
ہر سُو پھیلائے ہیں تانے بانے کیا

بادل کی یلغار سے، نام پہ رحمت کے
تنکا تنکا، ٹوٹ گرے کاشانے کیا

سوچو بھی، جلتی بگھیا کی آنچ لئے
جھونکے ہم کو آئے ہیں، بہلانے کیا

چڑیاں نگلیں گے، چوزوں پر جھپٹیں گے
شہ زوروں کے ماجد اور نشانے کیا

Paayal Kare Ye Chham Chham

paayal kare ye chham chham chuudi kare ye chhan chhan
ye chham chham kya bole ye chhan chhan kya bole
paas mere aa ja tarase man jaanam
paayal kare ye chham

kuchh dekhuun to sanam main dekhuun bas tujhe
kuchh sochuun to sanam main sochuun bas tujhe
paayin maine khushiyaan tujhako jo pa liya
duur nahin jaana mujhase tuu kabhi mere piya
saath na chhoduunga tera haath na chhoduunga tera
sang mein rahuunga tere haradam jaanam
paayal kare ye chham

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer