Har taraf ab yahi afsaane hain

Har taraf ab yahi afsaane hain
Ham teri aankho ke diwaane hain
Har taraf ab yahi afsaane hain…

Itni sachchaai hai in aankho mein
Khote sikke bhi khare ho jaaye
Tu kabhi pyaar se dekhe jo udhar
Sukhe jangal bhi hare ho jaaye
Baag ban jaaye, baag ban jaaye jo viraane hain
Ham teri aankho ke diwaane hain
Har taraf ab yahi afsaane hain…

Balamva Tum Kya Jaano Preet

balamva... aa aa aa... o tum kya jaano preet - 2
ho o o tum kya jaano preet - 2
main gayi haar tumhari jeet - 2
balamva tum kya jaano preet - 2
ho o o tum kya jaano preet

baat na puchhi neha lagaake - 2
neha lagaake dil mein samaake - 2
phir bhi huye na meet
balamva tum kya jaano preet - 2
aa aa aa.... tum kya jaano preet - 2

ہر زخم دل ميں تيرا سنوارے چلے گئے

Verses

ہر زخم دل ميں تيرا سنوارے چلے گئے
ہم زندگی کا قرض اتارے چلے گئے

اب پَر ہيں نہ قفس، نہ صياد، نہ چمن
جتنے تھے زندگی کے سہارے، چلے گئے

جن پہ تھا ناز مجھ کو يہ ميرے دوست ہيں
دامن جھٹک کے ميرا وہ پيارے چلے گئے

ہر شب کو آنسوؤں کے جلاتے رہے چراغ
ہم تيری بزمِ ياد نکھارے چلے گئے

لتھڑی ہوئی تھی خون ميں ہر زلفِ آرزو
جوشِ جنوں ميں ہم مگر سنوارے چلے گئے

سو بار موت کو بھی بنايا ہے ہمسفر
ہم زندگی کے نقش ابھارے چلے گئے

چرواہا بستی والوں سے کہتا ہے

Verses

چرواہا بستی والوں سے کہتا ہے
پربت کے اُس پار بھی کوئی رہتا ہے

جس دریا کے رستے میں دیوار نہ ہو
وہ دریا کس خاموشی سے بہتا ہے

مولا جیسی فطرت ہے اُس بندے کی
دیکھتا ہے سب کچھ لیکن چپ رہتا ہے

غم کی موجیں گھٹتی بڑھتی رہتی ہیں
دل کا سال دھیرے دھیرے ڈھتا ہے

میری بھیگی آنکھوں میں اس کا پیکر
جھیلوں میں مہتاب کی صورت رہتا ہے

چاند نے کل شب دریا سے سرگوشی کی
ساحل میرے بارے میں کیا کہتا ہے

Agar Dilbar Ki Ruswaee

agar dilabar kee rusawaaee humei manjoor ho jaaye
sanam too bewafaa ke naam se mashahoor ho jaaye

humei furasat naheen milatee, kabhee aansoo bahaane se
kaee gam paas aa baithhe, tere yek door jaane se
agar too paas aa jaaye, to har gam door ho jaaye

wafaa kaa waasataa de kar, mohabbat aaj rotee hai
naa ayese khel is dil se, ye naajook cheej hotee hai
jaraa see thhens lag jaaye to sheeshaa, choor ho jaaye

Tum hi se

Raat chaandni chaai hui hai chamak raha hai tara
Thandi thandi yeh purvaayi socho kisne banaaya, ho
Tum hi ho pehle, tum hi ho aakhir, tum hi se saara jahaan
Tum hi se maa baap, tum hi se bachpan, tum hi se samaa

Paed parinde paani ka jharna, tum se chaman ka mehekna
Neele neele phoolon mein bhavron, ka hai yahi gungunaana, ho
Tum hi se shabnam, tum hi se khushboo, tum hi se hai yeh bahaar
Tum hi se jhonke mast hawaa ke, tum hi se fiza
Hoo hoo hoo hoo hoo hoo hoo
Hmm hmm hmm hmm hmm hmm

اشکِ الفت کا یہ انجام؟ خُدا خیر کرے!

Verses

اشکِ الفت کا یہ انجام؟ خُدا خیر کرے!
اور وہ بھی یوں سرِ عام؟ خُدا خیر کرے!

لب پہ آیا ہے ترا نام، خُدا خیر کرے!
ہو نہ جائیں کہیں بدنام، خُدا خیر کرے!

جب بھی ہاتھوں کی لکیروں پہ نظر ڈالی ہے
میں نے دیکھا ہے ترا نام، خُدا خیر کرے!

آہ اربابِ خرد کی یہ سبک سامانی!
خود شناسی ہوئی الزام، خُدا خیر کرے!

آزمائش ہے یہ آدابِ جنوں کی شاید
کوئی آیا ہے لبِ بام، خُدا خیر کرے!

جب کبھی زیست میں ہم حدِ یقیں سے گزرے
بن گئے بندۂ اوہام، خُدا خیر کرے!

سر جھکائے ہوئے چلتا ہوں مگر اہلِ خرد
اس کو کہتے نہیں اسلام، خُدا خیر کرے!

یاد ہے کون ہے یہ سرورِ آوارہ خصال
آپ کا بندۂ بے دام! خُدا خیر کرے!

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer