وہی پرند کہ کل گوشہ گیر ایسا تھا

Verses

وہی پرند کہ کل گوشہ گیر ایسا تھا
پلک جھپکتے ، ہَوا میں لکیر ایسا تھا

اسے تو دوست ہاتھوں کی سُوجھ بوجھ بھی تھے
خطا نہ ہوتا کسی طور ، تیر ایسا تھا

پیام دینے کا موسم نہ ہم نوا پاکر
پلٹ گیا دبے پاؤں ، سفیر ایسا تھا

کسی بھی شاخ کے پیچھے پناہ لیتی میں
مجھے وہ توڑ ہی لیتا، شریر ایسا تھا

ہنسی کے رنگ بہت مہربان تھے لیکن
اُداسیوں سے ہی نبھتی ، خمیر ایسا تھا

ترا کمال کہ پاؤں میں بیڑیاں ڈالیں
غزالِ شوق کہاں کا اسیر ایسا تھا

دل میں لرزاں ہے ترا شعلۂ رخسار اب تک

Verses

دل میں لرزاں ہے ترا شعلۂ رخسار اب تک
میری منزل میں نہیں رات کے آثار اب تک

پھول مُرجھا گئے، گُلدان بھی گِر کر ٹوٹا
کیسی خوشبو میں بسے ہیں در و دیوار اب تک

حسرتِ دادِ نہاں ہے مرے دل میں شاید
یاد آتی ہے مجھے قامتِ دلدار اب تک

وہ اُجالے کا کوئی سیلِ رواں تھا، کیا تھا؟
میری آنکھوں میں ہے اک ساعتِ دیدار اب تک

تیشۂ غم سے ہوئی روح تو ٹکڑے ٹکڑے
کیوں سلامت ہے مرے جسم کی دیوار اب تک

Yeh Pal - Jodi No 1.

Jab jiya jab socha tab jaana
Yaaron bahot mushkil hain in lamho ko bhool paana

(Yeh pal hame yaad aayenge
Voh kal yaad aayenge) – 2
Hamne kiya yahaan jo bhi kiya
Roke kabhi has ke jiya
Khushiyaan kabhi gamm bhi liya
Roke kabhi has ke jiya
Yeh pal

(Barso jo khaab bune sach voh aaj hue) – 2
Mil hi gaya manzil ka nishaa
Apne sapno ka jahaan
Chootna ye karwaa
Apne sapno ka jahaan
Yeh pal

Mohe Laage Saara Jag Phika Phika

mohe laage saara jag phika phika
laage jag phika phika
maara tir ye kaisa tikha tikha
balam tikha tikha laage, jag phika phika

teri aankhon ne kiye hain jo ishaare
mere dil ke bane hain vo sahaare
tere nainon mein balam ye kya dikha re
tere nainon mein balam, tikha tikha laage
jag phika phika

mohe laage saara

tuune naina jo mujhase milaaye
mere honthon se nikali haaye haaye
huwa haal bura mere ji ka re
huwa haal bura mere ji ka
laage jag phika phika

mohe laage saara

Jhoothi Jhoothi

Jhoothi, jhoothi, jhoothi jhoothi jhoothi jhoothi
(Jhooth bol na, sach baat bol de
Aaj na chhupa, har bhed khol de) - 2
Kya mila tujhe ek jhooth bolke
Sochke zara mujhe bata, mujhe bata
Jhooth bol na, sach baat bol de
Aaj na chhupa, har bhed khol de
Baaghbaan dosti ka kya sila diya
Phool khila raha tha khaak mein mila diya
Intezaar ab nahin kisi bahaar ka
Aashiyaan ujad gaya kisi ke pyaar ka
Ruswa hue hum bewaja, ki tune kaisi khata
Mujhe bata, mujhe bata
Jhooth bol na, sach baat bol de

Gungunata Hai Geet Gaata Hai

gunagunaata hai geet gaata hai ye samaan
khil rahe hain gul mahak jaata hai ye samaan
khushbuon mein jaise nahaata hai ye samaan
ham hain jo is pal yahaan
baadal bhi parabat bhi nadiyaan bhi dhaare bhi
saare nazaare the gumasum
jaagi havaayen hain jaagi fizaayen hain
aaye yahaan hain jo ham tum
gunagunaata hai ...

کبھی جو فرصت ملے تو دل کے تمام بے ربط خواب لکھوں

Verses

کبھی جو فرصت ملے تو دل کے تمام بے ربط خواب لکھوں
تیری ادا سے غزل تراشوں،تیرے بدن پہ کتاب لکھوں

بجھے چراغوں کی لو پگھلتے دلوں کے احساس میں بھگو کر
میں آنے والی اداس نسلوں کی زندگی کا نصاب لکھوں

میرے شب و روز رائیگاں خواہشوں کی مٹی سے اٹ گئے ھیں
میں کس ورق پر گئے دنوں کی مشقتوں کا حساب لکھوں

بچھڑ کر تجھ سے وہ کون ھے جس کے نام کر دوں ہنر اثاثہ
میں کیوں کوئی نظم کہہ کے سوچوں،میں کس لیے انتساب لکھوں

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer