Kabhi hoti nahin hai jiski

Kabhi hoti nahin hai jiski haar woh hai pyaar
Woh to hai pyaar
Kabhi hoti nahin hai jiski haar woh hai pyaar
Woh to hai pyaar
Koi kabhi chu na paaye
Maut aake laut jaaye
Yeh woh dua hai pyaar
Woh hai yeh pyaar
Kabhi hoti nahin hai jiski haar woh hai pyaar
Woh to hai pyaar
Woh to hai pyaar

Jeevan naya humko tumne diya
Taqdeer se ab nahi hai gila
Nahi hai gila

Bulabulo Mat Ro Yahaan

bulabulo mat ro yahaan aansu bahaana hai mana
in qafas ke qaidiyon ko gul machaana hai mana

chhod kar tuufaan mein ye mallaah kah kar chal diya
duub ja majhadhaar mein saahil pe aana hai mana

main huun vo fariyaad jis ka sunane vaala chal basa
main huun vo aansu jise daaman pe aana hai mana

حادثہ یہ ہے کہ اک حادثہ ہونا ہے ابھی

Verses

حادثہ یہ ہے کہ اک حادثہ ہونا ہے ابھی
آنکھ اسے ڈھونڈ رہی ہے جسے کھونا ہے ابھی

عکس تعبیر کوئی اے مرے آئینۂ خواب!
آخری نیند مجھے جاگ کے سونا ہے ابھی

گر رہے ہیں رگ احساس میں قطرہ قطرہ
مجھ کو پلکوں پہ ستاروں کو پرونا ہے ابھی

میری آواز کی تہ میں وہ اترتا کیسے
میں جنوں سوزِ محبت، اسے ہونا ہے ابھی

اس نے جو میری محبت کے صلے میں بخشا
اپنے دل پر وہی پتھر مجھے ڈھونا ہے ابھی

فصل کو کاٹنے آ پہنچا ہے وہ زود اندیش
اور میں حیراں ہوں، اسے بیج تو بونا ہے ابھی

یہ ضروری ہے کہ خالد اسے پانے کے لیے
کچھ نہ کچھ اپنی خبر میں تجھے ہونا ہے ابھی

حیراں ہے جبیں آج کدھر سجدہ روا ہے

Verses

حیراں ہے جبیں آج کدھر سجدہ روا ہے
سر پر ہیں خداوند، سر عرش خدا ہے

کب تک اسے سینچو گے تمنائے ثمر میں
یہ صبر کا پودا تو نہ پھولا نہ پھلا ہے

ملتا ہے خراج اس کو تری نان جویں سے
ہر بادشاہ وقت ترے درکا گدا ہے

ہر ایک عقوبت سے ہے تلخی میں سواتر
وہ رنج جو ناکردہ گناہوں کی سزا ہے

احسان لیے کتنے مسیحا نفسوں کے
کیا کیجیئے دل کا، نہ جلا ہے نہ بجھا ہے

میں تنہائی کا حاصل ہو گیا ہوں

Verses

میں تنہائی کا حاصل ہو گیا ہوں
بھری دُنیا میں شامل ہوگیا ہوں

اُسے آساں سمجھ لینے کی دُھن میں
میں اپنے آپ مشکل ہوگیا ہوں

بہت پتّھر بنا ہُوں ٹوٹنے کو
مگر اِک چوٹ سے"دل" ہو گیا ہُوں

میری فطرت رہی ہے قتل ہونا
مگر مشہور "قاتل" ہو گیا ہُوں

غبارِ ہمسفر کے ساتھ رہ کر
پسِ محرابِ منزل ہو گیا ہُوں

مجھے دریا سے مِلنے کی ہوس تھی
بکھر کر ریگِ ساحل ہو گیا ہُوں

کہا کل چاند نے بنجر زمیں سے
میں آبادی کے قابل ہو گیا ہُوں

ضروری تھا میرا "محسن" سے مِلنا
میں خُود رَستے میں حائل ہو گیا ہُوں

Rajaji rajaji

raajaajii raajaajii raajaajii raajaajii
raajaajii raajaajii haay raajaajii meraa naam
aish karanaa aish karanaa aish karanaa meraa kaam
jahaan jidhar se jaataa huun main sab karate hain salaam
raajaajii raajaajii ...

padh likh ke kyaa karanaa yaaron
mujhako tum samajhaao haan
are khaao piyo mauj manaao
baap kaa maal udaao re
abhii nahiin jo loge mazaa phir kab karoge aaraam
raajaajii raajaajii ...

Deewanon se ye mat poochho

diwaanon se ye mat poochho, diwaanon pe kyaa gujaree hain
haa un ke dilon se ye poochho, aramaanon pe kyaa gujaree hain

aauron ko peelaate rahate hai, aaur khud pyaase rah jaate hain
ye peenewaale kyaa jaane, paimaanon pe kyaa gujaree hain

maalik ne banaayaa insaan ko, insaan mohabbat kar baithhaa
wo upar baithhaa kyaa jaane, insaanon pe kyaa gujaree hain

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer