Gazab Kiya Tere Vaade Pe

gazab kiya tere waade pe aitabaar kiya
tamaam raat qayaamat ka intazaar kiya

sautan ghar na ja o more saiyaan -2
sautan ghar na ja bairan ghar na ja o more saiyaan
sautan ghar na ja o more saiyaan

kabar na thi ke hamein ashqabaar kar doge
hamaari kushiyaan kisi par nisaar kar doge
tod ke mera pyaar ka sapana -2
na ja padu main tore paiyaan o more saiyaan -2
sautan ghar na ja bairan ghar na ja o more saiyaan

یہ سیلِ گریہ غبارِ عصیاں کو دھو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

Verses

یہ سیلِ گریہ غبارِ عصیاں کو دھو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی
کوئی کہیں چھُپ کے رونا چاہے تو رو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

یہاں بکھرنے کا غم، سمٹنے کی لذتیں منکشف ہیں جس پر
وہ ایک دھاگے میں سارے موتی پِرو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

جسے ہواؤں کی سرکشی نے بچا لیا دھوپ کی نظر سے
وہ ابرِ آوارہ، دامنِ دل بھگو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

یہ میں ہوں، تم ہو، وہ ایلچی ہے، غلام ہیں اور وہ راستہ ہے
اب اس کہانی کا کوئی انجام ہو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

ترے لیے عشق جاگتا ہے، ترے لیے حُسن جاگتا ہے
سو اب تو چاہے تو اپنی مرضی سے سو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

یہاں ارادے کو جبر پر اختیار حاصل رہا تو اتنا
کوئی کسی کا، جو ہونا چاہے تو ہو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

نئی مسافت کے رتجگوں کا خمار کیسا چڑھا ہوا ہے
سلیم کوثر! یہ نشہ تم کو ڈبو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی

Mere Dil Se Ye Nain

shai:
mere dil se ye nain mile rahane do jaan-e-man
ke do ghadi bahal jaata hai dil deewaana

aa: ke do ghadi bahal jaata hai dil deewaana

shai:
inake bina yahaan vahaan aise phiroon uljhan ka maara
pairon tale jaise koi rakhata chale jalta angaara
ho dukh mera ye jaane ya jaane mera haal ye veeraana

aa: ho, mere dil se ye nain ...

tum bhi mujhe dekho yoon hi hoti rahe dil ki do baaten
tum hi se mile mujhe jeevan ke din jeevan ki raaten
ho ye raat din ruk jaayen phir bhi na ruk paaye ye afasaana

دیا اس نے محبت کا جواب، آہستہ آہستہ

Verses

دیا اس نے محبت کا جواب، آہستہ آہستہ
کھلے ہونٹوں کی ٹہنی پر گلاب، آہستہ آہستہ

بڑھا مہتاب کی جانب سحاب، آہستہ آہستہ
عدیم اس نے بھی ڈھلکایا نقاب، آہستہ آہستہ

سبق پڑھنا نہیں صاحب سبق محسوس کرنا ہے
سمجھ میں ائے گی دل کی کتاب، آہستہ آہستہ

کہیں تیری طرف عجلت میں کچھ شامیں نہ رہ جائیں
چُکا دینا محبت کا حساب ، آہستہ آہستہ

وہ سارے لمس چاہت کے، ضرورت میں جو مانگے تھے
وہ واپس بھی تو کرنے ہیں جناب، آہستہ آہستہ

ابھی کچھ دن لگیں گے دید کی تکمیل ہونے میں
بنے گا چاند پورا ماہتاب، آہستہ آہستہ

وہی پھولوں کی لڑیاں، نیلگوں سی نیم تاریکی
سنایا مجھ کو پھر اس نے وہ خواب، آہستہ آہستہ

وہ چہرہ صحن کی دیوار کے پیچھے سے یوں ابھرا
سحر کے وقت جیسے آفتاب، آہستہ آہستہ

عدیم آہستہ آہستہ جوانی سب پر آتی ہے
مگر جاتا نہیں عہدِ شباب، آہستہ آہستہ

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer