Dil Churane Lagi

Dil Churane Lagi Jab Tumhari Nazar
Jaan Jaane Lagi Hum Huve Bekhabar
Aahen Bharne Laga Jab Yeh Dil Saathiya
Kuch Kaha To Sanam Kya Kiya Kya Kiya
Maine Dil Tujhko De Diya
Maine Dil Tujhko De Diya
Dil Churane Lagi Jab Tumhari Nazar
Jaan Jaane Lagi Hum Huve Bekhabar
Aahen Bharne Laga Jab Yeh Dil Saathiya
Kuch Kaha To Sanam Kya Kiya Kya Kiya
Maine Dil Tujhko De Diya
Maine Dil Tujhko De Diya

Tu nahin to jindagi main

too naheen to jindagee mein aaur kyaa rah jaayegaa
door tak tanahaeeyon kaa silasilaa rah jaayegaa

dard kee saaree tahe aaur saare gujare haadase
sab dhuwaan ho jaayenge, yek waakiyaa rah jaayegaa

yoo bhee hogaa wo muze dil se bhoolaa degaa magar
ye bhee hogaa khud usee mein yek khalaa rah jaayegaa

daayare inkaar ke ikaraar kee saragoshiyaan
ye agar toote kabhee to faasalaa rah jaayegaa

Ja Ri Behna

Female:

Baap ka ghar kya
Bhai ka ghar kya
aaj samjh ko sabko aajaan
ladki jis ghar mein palti hai
us ghar hoti hai mehmaan

Male:

(ja ri behnaa ja tu aapne ghar ja) - 2

Ladki ka jab bachpan jaaye
meka saath hi jaaye
usske jeevan saathi ka ghar
usska ghar keh laaye
(ja ri behnaa ja tu aapne ghar ja) - 2

Female:

ladki ke jeevan mein jis din yeh shub abkar aaye
saans baane woh maa usski aur sasur pita keh laaye

Male:

(ja ri behnaa ja tu aapne ghar ja) - 2

Paisa Paisa

take shopping gangers - half tankers
i know the lines to my beloved extreme marks man to the man

alright,

play, play the music dj
he' s got the skill the way
i love to do it show me
show me the money

waka boom shaka pop ketchup in the prop not what i want
on my papa prop pop boom shaka pop ketchup in the prop
not what i want on my papa prop pop

پھر بھیانک تیرگی میں آ گئے

Verses

پھر بھیانک تیرگی میں آ گئے
ہم گجر بجنے سے دھوکا کھا گئے

ہائے خوابوں کی خیاباں سازیاں
آنکھ کیا کھولی، چمن مُرجھا گئے

کِس تجلّی کا دیا ہم کو فریب
کِس دھندلکے میں ہمیں پہنچا گئے

اُنکا آنا حشر سے کچھ کم نہ تھا
اور جب پلٹے قیامت ڈھا گئے

اِک پہیلی کا ہمیں دے کر جواب
اِک پہیلی بن کے ہر سوُ چھا گئے

پھر وہی اختر شماری کا نظام
ہم تو اس تکرار سے اُکتا گئے

رہنماؤ! رات ابھی باقی سہی
آج سیاّرے اگر ٹکرا گئے؟

جن کو ہم سمجھا کیے ابرِ بہار
وہ بگولے کِتنے گُلشن کھا گئے

کیا رسا نِکلی دُعائے اجتہاد
لیجیے! اگلے زمانے آ گئے

آدمی کے ارتقا کا مدّعا
وہ چھُپاتے ہی رہے، ہم پا گئے

اب کوئی طوفاں ہی لائے گا سحر
آفتاب اُبھرا تو بادل چھا گئے

ساقی نظر سے پنہاں شیشے تہی تہی سے

Verses

ساقی نظر سے پنہاں شیشے تہی تہی سے
باز آئے ہم تو ایسی بے کیف زندگی سے

کس شوق کس تمنا کس درجہ سادگی سے
ہم آپ کی شکایت کرتے ہیں آپ ہی سے

حسن شگفتہ رو کی اللہ ری ادائیں
نظریں بھی ہیں مجھی پر پردہ ہے مجھی سے

اے میرے ماہ کامل پھر آشکار ہو جا
اکتا گئی طبیعت تاروں کی روشنی سے

نالہ کشو اٹھا دو آہ و فغاں کی رسمیں
دو دن کی زندگی ہے کاٹو ہنسی خوشی سے

دامن ہے ٹکرے ٹکرے ہونٹوں پہ ہے تبسم
اک درس لے رہا ہوں پھولوں کی زندگی سے

آگے خدا ہی جانے انجام عشق کیا ہو
جب اے شکیل اپنا یہ حال ہے ابھی سے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer