Kitna Aasaan Hai Kehna

kitna aasaan hai kehna bhul jaao bhul jaao
kitna mushkil hai par bhul jaana
kitna aasaan hai kehna bhul jaao
kitna mushkil hai par bhul jaana
ho na jaana na jaana
kitna aasaan hai kehna bhul jaao
kitna mushkil hai par bhul jaana

bin soche bin samjhe log
maajhi toh ban jaate hain
unko yeh maloom nahi
ke toofan bhi aate hain
kitna aasan hai maajhi ban jaana
kitna mushkil hai paar lagana
kitna aasaan hai kehna bhul jaao
kitna mushkil hai par bhul jaana

خود اپنے گرد ہی پھرتے ہیں ہم آہستہ آہستہ

Verses

خود اپنے گرد ہی پھرتے ہیں ہم آہستہ آہستہ
کہ زائر کرتے ہیں طوف حر م آہستہ آہستہ

بہت آسان ہے کاغذ پہ کوئی لفظ لکھ دینا
دلوں پہ نام ہوتے ہیں رقم آہستہ آہستہ

کہیں پاؤں نہ تیرے کاٹ لے یہ برق رفتاری
مسافت میں اٹھا اپنے قدم آہستہ آہستہ

کہانی تو سنا کر داستاں گو ہو گیا رخصت
ہوئی ہے شہر بھر کی آنکھ نم آہستہ آہستہ

ابھی تو ہجر کے پہلے دکھوں نے دستکیں دی ہیں
سرایت خوں میں کرتا ہے یہ سم آہستہ آہستہ

موسموں کو نئے عنوان دیا کرتے ہیں

Verses

موسموں کو نئے عنوان دیا کرتے ہیں
نذرِ صرصر بھی ہمیں برگ ہُوا کرتے ہیں

اپنے احساس نے اِک رُوپ بدل رکھا ہے
بُت کی صورت جِسے ہم پُوج لیا کرتے ہیں

اُن سے شکوہ؟ مری توبہ! وہ دلوں کے مالک
جو بھی دیتے ہیں بصد ناز دیا کرتے ہیں

ہم کہ شیرینیِ لب جن سے ہے ماجد منسُوب
کون جانے کہِ ہمیں زہر پِیا کرتے ہیں

Yeh daulat bhi le lo

ye daulat bhii le lo, ye shoharat bhii le lo
bhale chhiin lo mujhase merii javaanii
magar mujhako lautaa do bachapan kaa saavan
vo kaagaz kii kashtii, vo baarish kaa paanii

--Jagjit--
muhalle kii sabase nishaanii puraanii
vo budhiyaa jise bachche kahate the naanii
vo naanii kii baaton mein pariyon kaa deraa
vo chahare kii jhuriryon mein sadiyon kaa pheraa
bhulaae nahiin bhuul sakataa hai koi
vo chhotii sii raaten vo lambii kahaanii

تہمت اتار پھینکی، لبادہ بدل لیا

Verses

تہمت اتار پھینکی، لبادہ بدل لیا
خود کو ضرورتوں سے زیادہ بدل لیا

جی چاہتا تھا روؤں اسے جاں سے مار کے
آنکھیں چھلک پڑیں تو ارادہ بدل لیا

جب دیکھا رہزنوں کی توجہ نہیں ادھر
شہزادگی سے خرقۂ سادہ بدل لیا

کیسے قبول کرتے مجسم غبار کو
منزل قریب آئی تو جادہ بدل لیا

یہ سوچ بھی کیسا دائرہ ہے

Verses

یہ سوچ بھی کیسا دائرہ ہے
جو اپنے ہی راستے کاٹتا ہے

پہلے تو جنوں میں چل رہا تھا
ہوش آیا تو الٹا راستہ ہے

میں نرم اگرچہ ہوں بہت ہی
بھٹکوں تو بلا کا شائبہ ہے

خاموش رہا ہوں گو ہمیشہ
بولوں تو یہ تازہ سانحہ ہے

تبلیغ میں کرتا ہوں محبت
یہ عشق، بقا کا ضابطہ ہے

محفوظ گزرنا ہے یہاں سے
مہبوت ہوا کا قافلہ ہے

کیسے یہ کٹے گی سعد منزل
ٹوٹا خود سے رابطہ ہے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer