Ek To Kam Zindagaani ... Pyaar Mein Saara Jivan Guzaar Do

ek to kam zindagaani usase bhi kam naujavaani
usase bhi kam vaqt ki meharabaani
pal pal pyaar mein baant do
pyaar mein saara jivan guzaar do
ek to kam zindagaani

pyaar tera rab mera mil gayi mujhe to kudaayi
moti badan hire nayan nazarein kiran saansein chaman
aayi bahaar liye aasha
are o ek to kam zindagaani

honth mere naam tere har saans tere liye hai
pyaar kabhi kam na hoga dil ye iraada kiye hai
manzil teri meri gali - 2 bhanvara hai tu main kali huun
sangat teri chaahiye
ek to kam zindagaani

پھر نئی فصل کے عنواں چمکے

Verses

پھر نئی فصل کے عنواں چمکے
ابر گر جا گلِ باراں چمکے

آنکھ جھپکوں تو شرارے برسیں
سانس کھینچوں تو رگِ جاں چمکے

کیا بگڑ جائے گا اے صبحِ جمال
آج اگر شامِ غریباں چمکے

اے فلک بھیج کوئی برقِ خیال
کچھ تو شامِ شب ہجراں چمکے

پھر کوئی دل کو دکھائے ناصر
کاش یہ گھر کسی عنواں چمکے

اگرچہ تیری نظر کا ہی ترجماں ہوں میں

Verses

اگرچہ تیری نظر کا ہی ترجماں ہوں میں
تری نگاہ سے لیکن ابھی نہاں ہوں میں

ابھی فسانے کی گہرائی تک نہیں پہنچا
ہنوز کشتۂ عنوان داستاں ہوں میں

ابھی میں اپنے ڈگر پر دھروں قدم کیسے
مجھے یہ علم ہے، ہمراہ کارواں ہوں میں

میں ہوں ضرور کہیں تیری بزم میں لیکن
تلاش کرکے تو خود ہی بتا کہاں ہوں میں

بٹھا لیا مجھے آنکھوں پہ اس کی رحمت نے
مجھے گماں تھا کہ اک جنس رائگاں ہوں میں

یہ کیا مقام ہے پندار خود شناسی کا
ہر ایک قطرہ یہ کہتا ہے بیکراں ہوں میں

Maalik Main Puuchhata Huun ... Bata Mujhe O Jahaan Ke Maalik

maalik main puuchhata huun mujhe tu javaab de
bahate hain kyuun garib ke aansu javaab de

bata mujhe o jahaan ke maalik ye kya nazaare dikha raha hai
tere samundar mein kya kami thi ke aadami ko rula raha hai
bata mujhe o

kabhi hansaaye kabhi rulaaye ye khel kaisa hai tu bata de
jise banaaya tha apane haathon usi ko ab kyuun mita raha hai
bata mujhe o

jo khud hi gam se bujhaa-bujha hai tera phir isamein kamaal kya hai
ki ek dipak ki raah mein tu hazaaron tuufaan utha raha hai
bata mujhe o

ارادہ کب تھا اُس کا خُود کو دریا میں ڈبونے کا

Verses

ارادہ کب تھا اُس کا خُود کو دریا میں ڈبونے کا
اُسے بس شوق تھا بہتی ندی میں ہاتھ دھونے کا

سروں کی فصل کٹتے دیکھنا اُس کی سیاست ہے
ہے اُس کا مشغلہ، صحنِ فضا میں زہر بونے کا

یہ تیرا ہی کرم ہے ورنہ کب یارا ہی تھا یا رب !
مری نازک مزاجی کو غموں کے بار ڈھونے کا

ہوا کیا گر نگاہِ خامۂ تنقید ہے بے حس
مُجھے خُود بھی نہیں احساس اب کچھ اپنے ہونے کا

مجھے کب تلخئ حالات نے موقع دیا جانم
سنہرے نرم رو الفاظ میں تجھ کو پرُونے کا

جنابِ میر بھی میری طرح مغموم تھے لیکن
مجھے موقع ہی کب ملتا ہے آذر رونے دھونے کا

Uttar Dakshin Poorab Pashchim

Uttar dakshin poorab pashchim anjaani raahon mein ghoomoon
Din jhoome raatein jhoome do dil bhi jhoome main bhi jhoomoon
Tum jo kaho kehte raho ye hai deewangi

Ulti seedhi dayein bayein aage peechhe tu kyon ghoome
Arre din jhoome na jhoome raatein deewani bas tu hi jhoome
Yoon naachti yoon jhoomti kyon hai tu ghoomti

Uttar dakshin poorab pashchim anjaani raahon mein ghoomoon
Din jhoome raatein jhoome do dil bhi jhoome main bhi jhoomoon
Haan bhai haan

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer