فن سے مرے کہ ہے جو فرازِ کمال پر

Verses

فن سے مرے کہ ہے جو فرازِ کمال پر
پہنچا ہے اُس کا ذکر ہر اک بُک سٹال پر

ہونٹوں پہ رقص میں وُہی رنگینی نگاہ

محفل جمی ہوئی کسی ٹیبل کی تال پر

شیشے کے اِک فریم میں کچھ نقش قید تھے
میری نظر لگی تھی کسی کے جمال پر

ساڑھی کی سبز ڈال میں لپٹی ہوئی بہار
کیا کچھ شباب تھا نہ سکوٹر کی چال پر

ہنستی تھی وہ تو شوخیِ خوں تھی کچھِاس طرح
جگنو سا جیسے بلب دمکتا ہو گال پر

رکھا بٹن پہ ہاتھ تو گھنٹی بجی اُدھر
در کھُل کے بھنچ گیا ہے مگر کس سوال پر

میک اَپ اُتر گیا تو کھنڈر سی وہ رہ گئی
جیسے سحر کا چاند ہو ماجد زوال پر

Dil Jab Se Toot Gaya

dil jab se toot gaya kaise kahen kaise jeete hain
kabhi jyaada kabhi kam peete hain

jaan-e-vafa jaane na tu zakhmon ko ham kaise seete hain
kaise tere bina ham jeete hain

jaam ka hai sahaara varna kya hai hamaara
ye dava jo na peete ham bhala kaise jeete
dekhen mudake jahaan hai vahaan bebasi
bekhudi ban gai ab meri zindagi
saath tera chhoot gaya kaise kahen kaise jeete hain
kabhi jyaada kabhi kam ...

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں

Verses

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں
کیوں نہ اے دوست ہم جدا ہو جائیں

تو بھی ہیرے سے بن گیا تھا پتھر
ہم بھی کل جانے کیا سے کیا ہو جائیں

تو کہ یکتا تھا بے شمار ہوا
ہم بھی ٹوٹیں تو جا بجا ہو جائیں

ہم بھی مجبوریوں کا عذر کریں
پھر کہیں اور مبتلا ہو جائیں

ہم اگر منزلیں نہ بن پائے
منزلوں تک کا راستہ ہو جائیں

دیر سے سوچ میں ہیں پروانے
راکھ ہو جائیں یا ہوا ہو جائیں

اب کے گر تو ملے تو ہم تجھ سے
ایسے لپٹیں تری قبا ہو جائیں

بندگی ہم نے چھوڑ دی ہے فراز
کیا کریں لوگ جب خدا ہو جائیں

مسلسل بے کلی دل کو رہی ہے

Verses

مسلسل بے کلی دل کو رہی ہے
مگر جینے کی صورت تو رہی ہے

میں کیوں پھرتا ہوں تنہا مارا مارا
یہ بستی چین سے کیوں سور رہی ہے

چلے دل سے امیدوں کے مسافر
یہ نگری آج خالی ہو رہی ہے

نہ سمجھو تم اسے شور ِبہاراں
خزاں پتوں میں چھپ کے رو رہی ہے

ہمارے گھر کی دیواروں پر ناصر
اداسی بال کھولے سور رہی ہے

Ai Jaan Idhar Dekh

ai jaan idhar dekh
milane ka tere rakhate hain ham dhyaan idhar dekh
aati hai bahut hamako teri aan idhar dekh
ham chaahane waale hain tere jaan idhar dekh
holi hai sanam hans ke tu ik aan idhar dekh
ai rang bhare nau-gul-e-khandaan idhar dekh
milane ka tere rakhate hain

نہ دوائیں پر اثر ہیں نہ دعائیں کیا بتائیں

Verses

نہ دوائیں پر اثر ہیں نہ دعائیں کیا بتائیں
تجھے اپنے دل کی حالت جو بتائیں کیا بتا ئیں

جو چراغ آرزو تھا وہ تو بجھ چکا کبھی کا
کسے ڈھونڈتی ہیں اب تک یہ ہوائیں کیا بتائیں

کبھی دور کے نگر سے ‘کبھی پاس کی گلی سے
ہمیں کون دے رہا ہے یہ صدائیں کیا بتائیں

وہ بہار کس چمن میں مری راہ تک رہی ہے
یہ درخت گونگے بہرے‘ یہ خزائیں کیا بتائیں

کہ گھڑی کی سوئیوں سے تری ساعتیں بندھی ہیں
تجھے پاس منتوں سے جو بٹھائیں کیا بتائیں

تجھے اعتبار ساجد کے ان آنسوؤں کا کیا غم
کہ برس رہی ہیں کیو نکر یہ گھٹائیں کیا بتائیں

Duniya Waalon Se Door

Duniya Waalon Se Door Jalnewaalon Se Door
Aaja Aaja Chalen Kahin Door ...Kahin Door...Kahin Door

Jo Pyar Ka Jahan Hai, Har Dil Pe Meharban Hai
Kuchh Aur Yeh Zameen Hai, Kuchh Aur Aasmaan Hai
Na Zulm Ka Nishan Hai , Na Gam Ki Dastaan Hai
Har Koi Jisko Samjhe Woh Pyar Ki Zubaan Hai
Duniya Waalon Se...

Ulfat Ki Raagini Mein Mastani Bekhudi Mein
So Jayange Do Dil Ulfat Ki Chandni Mein
Phir Kya Karegi Duniya, Jal Jal Maregi Duniya
Taaron Mein Do Sitare Dekha Karegi Duniya
Duniya Waalon Se...

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer