کاجل تیری آنکھوں کا میری آنکھوں میں دَر آئے

Verses

کاجل تیری آنکھوں کا میری آنکھوں میں دَر آئے
میں بات کروں تجھ سے اور شام اتر آئے

کچھ روز تلک آنگن بھیگا ہوا رہتا ہے
بادل کی سی شال اوڑھے جب تو میرے گھر آئے

ہم دیکھتے ہیں تجھ کو بارش کے مہینوں میں
بھیگے ہوئے بالوں میں تو اور نکھر آئے

یہ لوگ میرے دل کو پیارے ہیں بہت لیکن
اس شہر سے کچھ پہلے تُو مجھ کو نظر آئے

جس ہاتھ پہ دھرنا تھی قندیلِ حنا ہم کو
ہم اپنی سیاہی بھی اس ہاتھ پہ دھر آئے

سر پھوڑتی پھرتی تھی رخصت کی ہوا ہر سُو
سو ہم تیرے کوچے سے چپ چاپ گزر آئے

سر سبز شجر تجھ کو گھیرے ہوئے رہتے ہیں
ہاں یاد یہ پیلا سا دل تجھ کو اگر آئے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer