Akhtar Sheerani/Shirani (Mohd.Dawood Khan) (1905–1948)

قرار چھين ليا بے قرار چھوڑ گئے

Verses

قرار چھين ليا بے قرار چھوڑ گئے
بہار لے گئے يادِ بہار چھوڑ گئے
ہماري چشم حزيں کا خيال کچھ نہ کيا
وھ عمر بھر کے لئے اشکبار چھوڑ گئے
جسے سمجھتے تھے اپنا وہ اتني مدت سے
اسي کو آج وہ بيگانہ وار چھوڑ گئے
رگوں میں اک طبش درد کار جاگ اٹھي
دلوں ميں اک خلشِ انتظار چھوڑ گئے
ہوائے شام سے آنے لگي صدائے فغاں
فضائے شوق کو ماتم گسار چھوڑ گئے
نشاطِ محفل ليل و نہار لوٹ ليا
نصيب ميں غمِ ليل و نہار چھوڑ گئے
گھٹائيں چھائي ہيں ساون ہے مينہ برستا ہے
وہ کس سمے ميں ہميں اشکبار چھوڑ گئے
دل حزيں ہے اب اور عہد رفتہ کا ماتم
چمن کے سينے پہ داغِ بہار چھوڑ گئے
چھڑا کے دامن اميدِ دل کے ہاتھوں سے
سواد ياس ميں ماتم گسار چھوڑ گئے
نہ آيا رحم ميرے آنسوؤں کي مِنت پر
کيا قبول نہ پھولوں کا ہار چھوڑ گئے
اميد و شوق سے آباد تھا ہمارا دل
اميد و شوق کہاں اک مزار چھوڑ گئے
تمام عمر ہے اب اور فراق کي راتيں
يہ نقش گيسوئے مشکيں بہار چھوڑ گئے
ترس رہے ہيں مسرت کو عشق کے ارماں
ہميں ستم زدہ و سوگوار چھوڑ گئے
اميد خستہ، سکوں مضطرب ، خوشي بسمل
جہانِ شوق کو آشفتہ کار چھوڑ گئے
نگاہ درد کي غرض حزيں قبول نہ کي
ہميں وہ غمزدہ و دلفگار چھوڑ گئے
کسے خبر ہے کہ اب پھر کبھي مليں نہ مليں
نظر ميں ايک ابدي انتظار چھوڑ گئے
ہماري ياد بھُلا کر وہ چل ديے اختر
اور اپني ياد ، فقط يادگار چھوڑ گئے

اختر شیرانی

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer