ہے چھوڑ کے جانا تو مجھے چھوڑ مکمل

Verses

***غزل***
(عتیق الرّحمٰن صفی)

ہے چھوڑ کے جانا تو مجھے چھوڑ مکمل
دے ساتھ کسی کا مرا دل توڑ مکمل

ہے ساتھ نبھانا تو مرا ساتھ دے ایسے
دل اپنامرے قلب سے دے جوڑمکمل

افسانے کے کردار تو سب ہی ہیں پرانے
دے اپنی کہانی کو نیا موڑمکمل

کافی نہیں چلنا ہی فقط جانبِ منزل
کچھ پانا اگر ہے تو یہاں "دوڑ" مکمل

آؤ سبھی ہم مل کے کریں امن کی خاطر
اک آخری کوشش جو ہو سر توڑمکمل

اُس طرز ِ تخاطب نے ترے آخری خط میں
تا روح دیا ہے مجھے جھنجھوڑ مکمل

آپھر سے کریں ملنے کی ایسی کوئی کاوش
جو ٹوٹتے بندھن کو بھی دے جوڑ مکمل

اِس بار نہ آئے گا صفیؔ دام میں تیرے
تو خود کو جلا ڈال کہ سر پھوڑ مکمل

***************************

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer