زندگی کس ڈگر پہ چلتی ہے

Verses

زندگی کس ڈگر پہ چلتی ہے
نت نئے راستے بدلتی ہے

تشنگی بجھ رہی ہے کھیتوں کی
برف کہسار پر پگھلتی ہے

میرا چہرہ جھلس گیا کیسے!
آگ تو میرے دل میں جلتی ہے

دھیرے دھیرے اُبھر رہا ہے چاند
روشنی پاوں پاوں چلتی ہے

عرصۂ زیست جاودانی ہے

Verses

عرصۂ زیست جاودانی ہے
یہ فقط میری خوش گمانی ہے

دوست! اپنا وجود کیا معنی
میں بھی فانی ہوں، تو بھی فانی ہے

اک محبت فنا نہیں ہوتی
ورنہ ہر چیز آنی جانی ہے

ہر کوئی مست ہے نمائش میں
پیار کی کس نے قدر جانی ہے

دیکھ تو بھی پلٹ کے آ جانا
میں نے بھی تیری بات مانی ہے

شبِ غم ہی سے دوستی کر لیں
شامِ خوش رنگ بیت جانی ہے

یہ حقیقت ہے مان لو آصفؔ
ہر طرف دل کی حکمرانی ہے

Gangaa Aaye Kahaan Se

gangaa aaye kahaan se, gangaa jaaye kahaan re
aaye kahaan se, jaaye kahaan re
laharaaye paani men jaise dhuup - 2 chhaanv re

gangaa aaye kahaan se, gangaa jaaye kahaan re
laharaaye paani men jaise dhuup - 2 chhaanv re

raat kaari din ujiyaaraa mil gaye donon saaye
saanjh ne dekho rang rupp ke kaise bhed mitaaye
laharaaye paani men jaise dhuup - 2 chhanv re

kaanch koi maati koi rang - 2birange pyaale
pyaas lage to ek baraabar jis men paani daale
laharaaye paani men jaise dhuup - 2 chhanv re

نظر محو رخ پیر مغاں معلوم ہوتی ہے

Verses

نظر محو رخ پیر مغاں معلوم ہوتی ہے
زمین میکدہ بھی آسماں معلوم ہوتی ہے

فضائیں جانب گرد کارواں معلوم ہوتی ہے
زمیں پامال ہو کر آسماں معلوم ہوتی ہے

کمال بدگمانی کا یہ عالم ہے معاذ اللہ
ذرا سی بات بھی اک داستاں معلوم ہوتی ہے

بہشت آرزو سے لاکھ حسن و عشق کی منزل
مگر جنت یہ دو راز کارواں معلوم ہوتی ہے

میرے دل نے مجھے غربت میں تسکیں دی یہ کہہ کہہ کر
وہ منزل ہے وہ گرد کارواں معلوم ہوتی ہے

فسانہ بن چکی ہوتیں میری بربادیاں اب تک
طبیعت خو گر ضبط فغاں معلوم ہوتی ہے

شکیل افسانہ ہائے عشق کے عنوان تو دیکھو
یہ میری داستاں میری زباں معلوم ہوتی ہے

Jhilmil Sitaron Ka

Jhilmil Sitaron Ka Aangan Hoga
Rimjhim Barasta Sawan Hoga
Aisa Sunder Sapna Apna Jeevan Hoga
Prem Ki Gali Mein Ek Chota Sa Ghar Banayenge
Kaliyan Na Mile Na Sahi Kaaton Se Sajayenge
Bagiya Se Sunder Woh Ban Hoga
Rimjhim Barasta Sawan Hoga

Teri Aankhon Se Saara Sansar Mein Dekhoongi
Dekhoongi Is Paar Ya Us Paar Mein Dekhoongi
Nainon Ko Tera Hi Darshan Hoga
Rimjhim Barasta Sawan Hoga

کبھی جو فرصت ملے تو دل کے تمام بے ربط خواب لکھوں

Verses

کبھی جو فرصت ملے تو دل کے تمام بے ربط خواب لکھوں
تیری ادا سے غزل تراشوں،تیرے بدن پہ کتاب لکھوں

بجھے چراغوں کی لو پگھلتے دلوں کے احساس میں بھگو کر
میں آنے والی اداس نسلوں کی زندگی کا نصاب لکھوں

میرے شب و روز رائیگاں خواہشوں کی مٹی سے اٹ گئے ھیں
میں کس ورق پر گئے دنوں کی مشقتوں کا حساب لکھوں

بچھڑ کر تجھ سے وہ کون ھے جس کے نام کر دوں ہنر اثاثہ
میں کیوں کوئی نظم کہہ کے سوچوں،میں کس لیے انتساب لکھوں

دل چُرا کر نظر چُرائی ہے

Verses

دل چُرا کر نظر چُرائی ہے
لُٹ گئے لُٹ گئے دہائی ہے

ایک دن مل کے پھر نہیں ملتے
کس قیامت کی یہ جدائی ہے

میں یہاں ہوں وہاں ہے دل میرا
نارسائی عجب رسائی ہے

پانی پی پی کے توبہ کرتا ہوں
پارسائی سی پارسائی ہے

وعدہ کرنے کا اختیار رہا
بات کرنے میں کیا بُرائی ہے

کب نکلتا ہے اب جگر سے تیر
یہ بھی کیا تیری آشنائی ہے

داغ ان سے دماغ کرتے ہیں
نہیں معلوم کیا سمائی ہے

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer