وفا میری متاعِ نا خریدہ

Verses

وفا میری متاعِ نا خریدہ
دعا میری صدائے ناشنیدہ

خُدا کو دیکھ لینا چاہتا ہوُں
’’ شنیدہ کے بود مانندِ دیدہ ‘‘

مُجھے لمسِ بدن سے رکھ نہ محرُوم
نہیں مَیں اس قدر بھی برگزیدہ

ابھی آدم فلک سے گر رہا ہے
ابھی انسان ہے نا آفریدہ

ذرا آہستہ چل، اے بادِ حالات
بہت نازک ہے نسلِ نو دمیدہ

یہ ہے تہذیب یا آشوبِ تہذیب
بدن ہیں پُرسکوں، رُوحیں دریدہ

شعوُر اُن کا ذرا بیدار ہولے
اُڑیں گے طائرانِ پر بریدہ

گھروں میں تھے وہی سردر گریباں
سرِ بازار تھے جو سرکشیدہ

وہ جس کی آدم آزاری ہے مشہور
وہی ابلیس ہے آدم گزیدہ

زوالِ شب کا نوحہ لکھ رہا ہوُں
سحر کا بنتا جاتا ہے قصیدہ

Mujhase Bhala Ye Kaajal

ra : mujhase bhala ye kaajal tera nain base din-rain
ni soniye -2
la : ho chhod bedardi aanchal mera ho gai main bechain
re soneya -2

ra : naam ki tu hai meri sajaniya naam ka hoon main tera piya o
reshami lat se khele ye gajara door se tarase mera jiya
na na
la : haan haan
ra : tauba
la : tauba kaisi
naam hai premi paagal tera to sang laage nain
re soneya -2

اپنے گھر کو جَلتا چھوڑ آیا ہوُں میَں

Verses

اپنے گھر کو جَلتا چھوڑ آیا ہوُں میَں
اُس پر شام کو ڈھلتا چھوڑ آیا ہوُں

توڑ آیا ہوُں دُھوپ کی شاخ سے دوپہریں
برف سا جسم پگھلتا چھوڑ آیا ہوُں میَں

ہجر کے ہاتھ سے ڈھانپ کے اپنی آنکھوں کو
اُس کا رنگ بدلتا چھوڑ آیا ہوُں میَں

کیسے مان لوُں ٹوٹ گیا دل "محسن" کا؟
خود سو بار سنبھلتا چھوڑ آیا ہوُں میَں

ستمِ کامیاب نے مارا

Verses

ستمِ کامیاب نے مارا
کرمِ لاجواب نے مارا

خود ہوئی گم ، ہمیں بھی کھو بیٹھی
نگہِ بازیاب نے مارا

زندگی تھی حجاب کے دم تک
برہمیِ حجاب نے مارا

عشق کے ہر سکون ِ آخر کو
حسن کے اضطراب نے مارا

خود نظر بن گئی حجابِ نظر
ہائے اس بے حجاب نے مارا

میں ترا عکس ہوں کہ تُو میرا
اِس سوال و جواب نے مارا

کوئی پوچھے کہ رہ کے پہلو میں
تیر کیا اضطراب نے مارا

بچ رہا جو تری تجلی سے
اس کو تیرے حجاب نے مارا

اب نظر کو کہیں قرار نہیں
کاوشِ انتخاب نے مارا

سب کو مارا جگر کے شعروں نے
اور جگر کو شراب نے مارا

Jiyara Dhak Dhak Dhak Bole

jiyara dhak dhak dhak bole
man mora khaaye hichakole
o baba what to do? o baba what to do?
kuchh kuchh ho raha hai man mein
ho na jaaye kuchh divaanepan mein
o baba what to do?

jaane hai kaisa nasha jaane hai kaisa asar
haay phisal rahi hai meri har nazar
aise mein tu hi bata jaaye koyi kidhar
aag jo idhar hai vahi hai udhar
laage nahin ab jiya tere bin
jiya jaaye na piya tere bin
o baba what to do?

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer