ہم تیز ہواؤں کے ارادے نہیں سمجھے

Verses

ہم تیز ہواؤں کے ارادے نہیں سمجھے
بدلے ہوئے موسم کے تقاضے نہیں سمجھے

کیوں سر کو پٹختی رہیں موجیں لبِ دریا
سلگے ہوئے ساحل کے کنارے نہیں سمجھے

خیرہ نہیں کرتے یہ جلاتے ہیں نشیمن
بدلی میں چھپے شوخ شرارے نہیں سمجھے

اے خاکِ بدن! شعلۂ جاں بجھنے لگا ہے
کیوں دیدہء حیراں کے اشارے نہیں سمجھے

ہے کتنا کٹھن درد کے صحرا سے گزرنا
یہ بات مقدر کے ستارے نہیں سمجھے

Shehzaadi Hain Koi

shehzadi hai koi, hai pholon si koi
Koi hai ab zara, pari si, pari si hai koi
Shehzadi hai koi, hai pholon si koi
Koi hai ab zara, pari si hai koi
(Mehfil mein ho gayi hai shamil haan dekho yeh haseen
Is ki khushi ke liye aaye deewane hum sabhi) - 2

Bhajo Re Man Raam Govind Hari

(bhajo re man raam govind hari) - 5

(jap tap saadhan kachhu nahin laagat) - 2
kharchat nahin gathari
(bhajo re man raam govind hari) - 4

(santat sanpat sukh ke kaaran) - 2
jaase bhuul pari
(bhajo re man raam govind hari) - 2

(raam naam ko sumiran kar le) - 2
sir pe maut khari
(bhajo re man raam govind hari) - 3

(kahat kabir) - 2 suno bhayi saadho
(kahat kabir) - 2 raam ja mukh nahin
kahat kabir raam ja mukh nahin
wo mukh dhuul pari
(bhajo re man raam govind hari) - 8

عشق مجھ کو نہیں وحشت ہی سہی

Verses

عشق مجھ کو نہیں وحشت ہی سہی
میری وحشت تری شہرت ہی سہی

قطع کیجے نہ تعلّق ہم سے
کچھ نہیں ہے تو عداوت ہی سہی

میرے ہونے میں ہے کیا رسوائی
اے وہ مجلس نہیں خلوت ہی سہی

ہم بھی دشمن تو نہیں ہیں اپنے
غیر کو تجھ سے محبّت ہی سہی

اپنی ہستی ہی سے ہو جو کچھ ہو
آگہی گر نہیں غفلت ہی سہی

عمر ہر چند کہ ہے برق خرام
دل کے خوں کرنے کی فرصت ہی سہی

ہم کوئی ترکِ وفا کرتے ہیں
نہ سہی عشق مصیبت ہی سہی

کچھ تو دے اے فلکِ نا انصاف
آہ و فریاد کی رخصت ہی سہی

ہم بھی تسلیم کی خو ڈالیں گے
بے نیازی تری عادت ہی سہی

یار سے چھیڑ چلی جائے اسد
گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی

Har taraf ab yahi afsaane hain

Har taraf ab yahi afsaane hain
Ham teri aankho ke diwaane hain
Har taraf ab yahi afsaane hain…

Itni sachchaai hai in aankho mein
Khote sikke bhi khare ho jaaye
Tu kabhi pyaar se dekhe jo udhar
Sukhe jangal bhi hare ho jaaye
Baag ban jaaye, baag ban jaaye jo viraane hain
Ham teri aankho ke diwaane hain
Har taraf ab yahi afsaane hain…

تا گور کے اوپر وہ گل اندام نہ آیا

Verses

تا گور کے اوپر وہ گل اندام نہ آیا
ہم خاک کے آسودوں کو آرام نہ آیا

بے ہوشِ مئے عشق ہوں کیا میرا بھروسا
آیا جو بخود صبح تو میں‌شام نہ آیا

کس دل سے ترا تیرِ نگہ پار نہ گزرا
کس جان کو یہ مرگ کا پیغام نہ آیا

دیکھا نہ اُسے دور سے بھی منتظروں نے
وہ رشکِ‌ مہِ عید لبِ بام نہ آیا

سو بار بیاباں میں‌گیا محملِ لیلیٰ
مجنوں کی طرف ناقہ کوئی گام نہ آیا

اب کے جو ترے کوچے سے جاؤں گا توسنیو!
پھر جیتے جی اس راہ وہ بدنام نہ آیا

نَے خون ہو آنکھوں سے بہا ٹک نہ ہوا داغ
اپنا تو یہ دل میر کِسو کام نہ آیا

Kangana Kanvaare Kangana

kangana kanvaare kangana sajana pukaarein tera naam
bindiya ye teri bindiya dekhuun main subah-o-shaam
tere bin mere din na katein na katein meri raina
ab to kahin bhi ek pal aaye na chaina
kangana kanvaare

me.nhadi lagaayuungi main to tere pyaar ki
khushbuu lutaayuungi tujhape bahaar ki
ban jaayuun main tera kajara ban jaayuun main tera gajara
dekhe tujhako hanse kajara
mera man ye kahe tere man ka banuun main gahana
tere bin mere din na katein

Theme by Danetsoft and Danang Probo Sayekti inspired by Maksimer